Thursday , September 20 2018
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ کے مواضعات کے آندھرا پردیش میں انضمام کیلئے کے سی آر ذمہ دار

تلنگانہ کے مواضعات کے آندھرا پردیش میں انضمام کیلئے کے سی آر ذمہ دار

کے ٹی آر کو کانگریس پر تنقید کے بجائے کے سی آر کو نصیحت کرنے کا مشورہ : محمد علی شبیر

کے ٹی آر کو کانگریس پر تنقید کے بجائے کے سی آر کو نصیحت کرنے کا مشورہ : محمد علی شبیر
حیدرآباد ۔ 14 ۔ جولائی : ( سیاست نیوز ) : کانگریس کے ڈپٹی فلور کونسل سابق ریاستی وزیر مسٹر محمد علی شبیر نے ضلع کھمم کے 7 منڈلوں کے آندھرا پردیش میں انضمام کے لیے چیف منسٹر تلنگانہ مسٹر کے چندر شیکھر راؤ کو ذمہ دار قرار دیا ۔ ریاستی وزیر آئی ٹی مسٹر کے ٹی آر کو کانگریس کو حکم دینے کے بجائے اپنے والد کو نصیحت کرنے کا مشورہ دیا اور مرکزی وزیر شہری ترقیات مسٹر وینکیا نائیڈو کو عوام کے کانوں میں پھول نہ لگانے کا مشورہ دیا ۔ آج سی ایل پی آفس اسمبلی میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مسٹر محمد علی شبیر نے ضلع کھمم کے 7 منڈلوں کو آندھراپردیش میں ضم کرنے کی سخت مذمت کرتے ہوئے اس کو غیر جمہوری فیصلہ قرار دیا اور کہا کہ کانگریس پارٹی پولاورم پراجکٹ کے خلاف نہیں ہے اور نہ ہی مرکزی حکومت کو پہلے آرڈیننس جاری کرنے اور عجلت میں لوک سبھا میں بل منظور کرنے کی ضرورت تھی ۔ مرکزی حکومت کو چاہئے تھا کہ وہ تلنگانہ اور آندھرا کی حکومتوں کے علاوہ قبائیلیوں سے مشاورت کرنے کے بعد کوئی فیصلہ کرتی ۔ انہوں نے وینکیا نائیڈو کو ایک سینئیر اور تجربہ کار قائد قرار دیا اور کہا کہ وہ مرکزی وزیر ہیں مگر اپنے آپ کو صرف آندھرا پردیش تک محدود کئے ہوئے ہیں ۔ ٹی آر ایس حکومت کھمم کے 7 منڈلوں کو آندھرا میں ضم ہونے سے روکنے میں ناکام ہوچکی ہے ۔ مگر فرزند چیف منسٹر اور ریاستی وزیر مسٹر کے ٹی آر راجیہ سبھا میں کانگریس کی اکثریت کا دعویٰ کرتے ہوئے کانگریس کو قبائیلیوں سے اپنی محبت کا ثبوت دینے کے لیے بل کی مخالفت کرنے کا حکم دے رہے ہیں ۔ مسٹر محمد علی شبیر نے کہا کہ کانگریس کو ٹی آر ایس سے سبق سیکھنے کی ضرورت نہیں ہے ۔ بل کی مخالفت میں کانگریس سب سے آگے ہے اگر کوئی پیچھے ہے تو وہ حکومت اور چیف منسٹر ہیں کیوں کہ سری کرشنا کمیٹی سکریٹری رکن مسٹر دگل کو بحیثیت صدر ٹی آر ایس مسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے تحریری یادداشت پیش کرتے ہوئے 1956 سے قبل تلنگانہ ریاست تشکیل دینے کا مطالبہ کیاتھا ۔ آج ضلع کھمم کے 7 منڈل جو آندھرا پردیش میں ضم ہوئے ہیں وہ 1956 سے قبل آندھرا پردیش کا حصہ رہے ہیں اسمبلی اور کونسل میں کل جماعتی اجلاس کے ساتھ دہلی پہونچ کر نمائندگی کرنے والے چیف منسٹر مسٹر کے چندر شیکھر راؤ ، دگل کو تحریر کردہ مکتوب کی وجہ سے دہلی پہونچنے سے گریز کررہے ہیں ۔ تلنگانہ بل کی منظوری کے لیے بحیثیت وزیر اعظم ڈاکٹر منموہن سنگھ نے بی جے پی کے قائدین مسز اوما بھارتی اور مسٹر ارون جیٹلی کو چیلنج کیا تھا ۔ ہائی کمان کی ہدایت پر وہ ( محمد علی شبیر ) بی جے پی کے ریاستی صدر مسٹر جی کشن ریڈی سے ملاقات کی تھی ۔ کانگریس کے ڈپٹی فلور لیڈر نے ضلع پریشد کے صدر نشین و نائب صدر نشین کے انتخابات میں کانگریس اور تلگو دیشم کے درمیان غیر اخلاقی اتحاد ہونے کا الزام عائد کیا تھا تاہم ضلع رنگاریڈی کے معاملے میں صرف ایک نائب صدر نشین عہدے کے لیے ٹی آر ایس نے تلگو دیشم سے ہاتھ ملا لیا ہے ۔ تلگو دیشم اور ٹی آر ایس کو اپنا اپنا محاسبہ کرنے کا مشورہ دیا ۔۔

TOPPOPULARRECENT