Tuesday , November 21 2017
Home / شہر کی خبریں / تلگودیشم کے ٹی آر ایس میں انضمام کا مطالبہ ‘ اسپیکر پر نظریں

تلگودیشم کے ٹی آر ایس میں انضمام کا مطالبہ ‘ اسپیکر پر نظریں

دونوں جماعتوں کے قائدین میں امکانات پر اختلاف رائے ۔ صورتحال اسپیکر اسمبلی کیلئے امتحان
حیدرآباد ۔ 13 فبروری (سیاست نیوز) تلگودیشم پارٹی کے ٹی آر ایس میں انضمام کے مسئلہ پر سیاسی حلقوں کی نظریں اسپیکر اسمبلی پر ٹکی ہوئی ہیں۔ تلگودیشم قائدین اس کو ناممکن قرار دے رہے ہیں جبکہ ٹی آر ایس قائدین اس کو ممکن قرار دے رہے ہیں۔ گذشتہ دیڑھ سال کے دوران پارٹیوں کو ضم کرنے کے معاملہ میں اسپیکر اسمبلی تلنگانہ مسٹر مدھوسدن چاری کو دوسری مرتبہ آزمائش سے گذرنا پڑا ہے۔ 2014ء کے عام انتخابات میں بی ایس پی کے ٹکٹ پر دو ارکان اسمبلی اندرا کرن ریڈی اور کونیر کونپا منتخب ہوئے تھے۔ کامیابی کے بعد دونوں ارکان اسمبلی ایک مکتوب اسپیکر کو پیش کرتے ہوئے بی ایس پی کو حکمران ٹی آر ایس میں ضم کرنے سے انہیں واقف کرایا تھا اور اسپیکر اسمبلی نے ایک بلیٹن جاری کرتے ہوئے بی ایس پی کو ٹی آر ایس میں ضم کرنے کا اعلان کیا تھا۔ ریاست میں بی ایس پی کا کوئی وجود نہیں ہے جس کی وجہ سے اس وقت اس پر کوئی تنازعہ کھڑا نہیں ہوا تھا۔ حال ہی میں تلگودیشم سے منتخب 9 کے منجملہ 7 ارکان قانون ساز کونسل نے صدرنشین کونسل کو ایک مکتوب روانہ کرتے ہوئے تلنگانہ تلگودیشم قانون ساز کونسل کو ٹی آر ایس میں ضم کرنے کا مطالبہ کیا اور صدرنشین کونسل سوامی گوڑ نے اس کو قبول کرتے ہوئے تلنگانہ تلگودیشم قانون ساز کونسل کو ٹی آر ایس میں ضم کرنے کا بلیٹن جاری کردیا۔ پھر ایک بار تلگودیشم کے 10 ارکان اسمبلی نے تلنگانہ تلگودیشم مقننہ کو ٹی آر ایس میں ضم کرنے کا اسپیکر اسمبلی کو مکتوب روانہ کیا ہے جس پر ابھی تک اسپیکر اسمبلی مدھوسدن چاری نے کوئی فیصلہ نہیں کیا ہے۔ تاہم تمام سیاسی حلقوں کی نظریں اسپیکر اسمبلی پر جمی ہوئی ہیں اور عوام میں تجسس پایا جاتا ہے۔ تلگودیشم قائدین کا کہنا ہیکہ یہ ممکن نہیں ہے سیاسی جماعتوں کا ایک دوسرے میں انضمام کا اختیار اسپیکر اسمبلی کو نہیں ہے۔ یہ اختیار صرف سنٹرل الیکشن کمیشن کو ہی حاصل ہے جبکہ ٹی آر ایس کے قائدین کا احساس ہیکہ تلگودیشم سے منتخب 15 کے منجملہ 10 ارکان اسمبلی تلگودیشم سے مستعفی ہوچکے ہیں ان کی تعداد 2/3 ہے اور انہیں اپنا فیصلہ کرنے کا اختیار ہے۔ ان کی خواہش پر اسپیکر اسمبلی کو بھی فیصلہ کرنے کے مکمل اختیارات ہیں۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT