Monday , June 25 2018
Home / شہر کی خبریں / تلگو دیشم ارکان کی معطلی کی تنسیخ سے تلنگانہ حکومت کا انکار

تلگو دیشم ارکان کی معطلی کی تنسیخ سے تلنگانہ حکومت کا انکار

حیدرآباد ۔ 15 نومبر (سیاست نیوز) تلنگانہ اسمبلی میں آج آٹھویں دن مختلف مسائل پر ریاستی وزراء ہریش راؤ اور ایٹالہ راجندر نے تشفی بخش جواب دیا تاہم تلگودیشم ارکان اسمبلی کی معطلی کے تنازعہ پر ٹی آر ایس، بی جے پی اور کانگریس کے درمیان زبردست لفظی جھڑپ ہوگئی اور اسپیکر اسمبلی نے کارروائی کو پیر تک کیلئے ملتوی کردیا ۔ تاہم وقفہ صفر کے دور

حیدرآباد ۔ 15 نومبر (سیاست نیوز) تلنگانہ اسمبلی میں آج آٹھویں دن مختلف مسائل پر ریاستی وزراء ہریش راؤ اور ایٹالہ راجندر نے تشفی بخش جواب دیا تاہم تلگودیشم ارکان اسمبلی کی معطلی کے تنازعہ پر ٹی آر ایس، بی جے پی اور کانگریس کے درمیان زبردست لفظی جھڑپ ہوگئی اور اسپیکر اسمبلی نے کارروائی کو پیر تک کیلئے ملتوی کردیا ۔ تاہم وقفہ صفر کے دوران جیسے ہی بی جے پی کے فلور لیڈر ڈاکٹر لکشمن نے تلگودیشم ارکان اسمبلی کی معطلی کو برخاست کرنے کا مطالبہ کیا، ایوان میں گرماگرم مباحث شروع ہوگئے۔ وزیر اسمبلی امور مسٹر ہریش راؤ نے کہا کہ بی جے پی اگر ذمہ داری قبول کرتے ہوئے تلگودیشم کے رکن اسمبلی مسٹر ریونت ریڈی سے معذرت خواہی کرتی ہے تو تلگودیشم ارکان کی معطلی کو برخاست کرنے پر ٹی آر ایس کو کوئی اعتراض نہیں ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ حکمران ٹی آر ایس، تلگودیشم یا اور کسی بھی جماعت کے خلاف نہیں ہے اور نہ ہی کسی سے کوئی انتقام لیا جارہا ہے۔ حکمران ٹی آر ایس ہر مسئلہ پر ایوان میں مباحث کیلئے تیار ہے۔ گذشتہ 10 سال کے دوران کبھی بجٹ پر 15 گھنٹے مباحث نہیں ہوئے۔ تاہم ٹی آر ایس نے اس کو ممکن کرکے دکھایا ہے۔ حکومت کی سنجیدگی کا اس سے ثبوت ملتا ہے۔ ریونت ریڈی نے ٹی آر ایس کی رکن پارلیمنٹ مسز کویتا کے خلاف جھوٹا و بے بنیاد الزام عائد کیا ہے۔ ٹی آر ایس نے انہیں اس کا ثبوت پیش کرنے یا معذرت خواہی کرنے کا مشورہ دیا ہے۔ ثبوت دینے یا معذرت خواہی کرنے کے بجائے تلگودیشم پارٹی ہٹ دھرمی پر اتر آئی ہے اور ایوان کی کارروائی میں خلل اندازی پیش کررہی تھی جس کی وجہ سے انہیں معطل کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دیاکر راؤ اور ریونت ریڈی کا نام پہلے معطل کرنے والے ارکان اسمبلی کی فہرست میں نہیں تھا اگر بی جے پی کو تلگودیشم سے ہمدردی ہے تو وہ ریونت ریڈی کو معذرت خواہی کیلئے راضی کرائے۔ معذرت خواہی کرنے تک معطلی کو برخاست کرنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔

TOPPOPULARRECENT