Sunday , September 23 2018
Home / شہر کی خبریں / تلگو دیشم کو ملا ریڈی جیسے بصیرت کے حامل قائدین کی ضرورت

تلگو دیشم کو ملا ریڈی جیسے بصیرت کے حامل قائدین کی ضرورت

تعلیم و طب میں نمایاں خدمات کے بعد پارٹی میں شمولیت پر چندرا بابو نائیڈو کا تاثر

تعلیم و طب میں نمایاں خدمات کے بعد پارٹی میں شمولیت پر چندرا بابو نائیڈو کا تاثر

حیدرآباد ۔ 17 ۔ اپریل : ( پریس نوٹ) : مسٹر سی ایچ ملا ریڈی نے 19 مارچ کو این ٹی آر ٹرسٹ بھون پر تلگو دیشم پارٹی میں شمولیت اختیار کی ۔ اس موقع پر ان کے حامیوں اور بہی خواہوں کی کثیر تعداد موجود تھی ۔ ملاریڈی کی شمولیت پر صدر تلگو دیشم پارٹی این چندرا بابو نائیڈو نے کہا کہ آج ہمیں ملا ریڈی جیسے بصیرت کے حامل قائد کی ضرورت ہے ۔ ملاریڈی اور چندرا بابو نائیڈو کا ایقان ہے کہ تعلیم اور روزگار ہندوستان کی ترقی کے لیے دو پہئیے ہیں ۔ ملاریڈی 9 ستمبر 1953 کو ایک ایسے خاندان میں پیدا ہوئے جو روزی کے حصول کے لیے دودھ فروحت کیا کرتے تھے ۔ تعلیم کم ہونے سے انہیں کوئی مناسب جاب نہیں مل سکا ۔ اس طرح انہوں نے بورویل کی کھدائی کے بزنس میں قدم رکھا تاہم ان کا ارادہ اور خواب تعلیمی ادارے قائم کرنے اور تمام کو قابل گنجائش مصارف پر معیاری تعلیم فراہم کرنے کا تھا چنانچہ انہوں نے 1987 میں بالا نگر میں ایک اسکول قائم کیا ۔ ساتھ ہی وہ میسماں گوڑہ ولیج میں ان کی موروثی اراضی پر پھول اور فروٹ کی کاشت کاری اور بورویل بزنس کو بیک وقت جاری رکھا ۔ اسکول ایجوکیشن کے مینجمنٹ میں انہیں کافی تجربہ حاصل ہوا ۔ اور اعلیٰ تعلیم کے میدان میں قدم رکھتے ہوئے 2001 میں سورارم ولیج میں ایک ایم سی اے کالج قائم کیا اور سال 2002 میں تین انجینئرنگ کالجس قائم کئے ۔ آج شہر حیدرآباد کے شمال کے مضافات میں یہ چار گاؤں تعلیم کے بڑے مرکز بن گئے ہیں ۔ 2008 میں سورارم ولیج ، قطب اللہ پور ، حیدرآباد میں 750 بستروں کا ایک ہاسپٹل قائم کیا ۔ ہیلت سٹی کے قیام کی سمت ایک پہلے قدم کے طور پر ملاریڈی ہاسپٹل ( ٹیچنگ ہاسپٹل ) اور ایک نرسنگ انسٹی ٹیوشن یعنی ملا ریڈی کالج آف نرسنگ بالترتیب 2010 اور 2011 میں شروع کئے گئے ۔ ملا ریڈی انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنس (MRIMS) پہلا ادارہ تھا جو سال 2012 میں ہیلت سٹی میں قائم ہوا ۔ تعلیم ، طب ، فراہمی روزگار کے شعبوں میں خدمات انجام دینے میں سرگرم عمل مسٹر ملاریڈی نے عوام الناس کی خدمت اور ان کی فلاح و بہبود کے لیے کام کرنے کے مقصد سے جنوری 2014 میں سیاست میں داخل ہونے کا اعلان کیا تھا اور مارچ 2014 میں انہوں نے تلگو دیشم پارٹی میں شمولیت اختیار کی ۔۔

TOPPOPULARRECENT