Thursday , December 13 2018

تلگو میٹھی و ملک میں ہندی کے بعد دوسری سب سے بڑی زبان

صدر جمہوریہ رام ناتھ کووند کا خطاب ۔ عالمی تلگو کانفرنس کا اختتام ۔ہر سال کانفرنس منعقد کرنے کے سی آر کا عزم

حیدرآباد 19 ڈسمبر (سیاست نیوز) رنگا رنگ کلچرل تقریب کے دوران آج شام عالمی تلگو کانفرنس کا اختتام ہوا ۔ صدرجمہوریہ رام ناتھ کووند نے کہاکہ ہندوستان میں سب سے زیادہ بولی جانے والی زبانوں میں ہندی کے بعد تلگو کو دوسرا مقام حاصل ہے۔ پھر بھی ملک کی دوسری زبانوں کے چلن میں تلگو کم ہی ہے۔ چیف منسٹر نے عالمی تلگو کانفرنس کی کامیابی پر مسرت کا اظہار کرتے ہوئے ہر سال ڈسمبر میں دو روز تلگو کانفرنس منعقد کرنے کا اعلان کیا۔ فتح میدان میں منعقدہ عالمی تلگو کانفرنس کی اختتامی تقریب میں صدرجمہوریہ رام ناتھ کووند مہمان خصوصی تھے ۔ گورنر تلنگانہ و آندھراپردیش نرسمہن، چیف منسٹر کے سی آر، ڈپٹی چیف منسٹرس محمد محمود علی، کڈیم سری ہری کے علاوہ دوسرے قائدین نے شرکت کی۔ صدرجمہوریہ نے کہاکہ حیدرآباد کا نام آتے ہی بریانی، بیاڈمنٹن اور باہوبلی یاد آتے ہیں۔ انھوں نے تلگو کو میٹھی اور عالمی شہرت یافتہ زبان قرار دیتے ہوئے اپنی تقریر کا آغاز اور اختتام تلگو میں کیا۔ رام ناتھ کووند نے کہاکہ صدرجمہوریہ منتخب ہونے کے بعد وہ پہلی بار تلنگانہ کے دورے پر آئے ہیں۔ عالمی تلگو کانفرنس کی اختتامی تقریب میں شرکت کرکے انھیں خوشی محسوس ہورہی ہے۔ تلگو زبان کی ترقی کیلئے چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر کے اقدامات کی ستائش کی۔ کانفرنس میں ملک و بیرون ممالک سے شریک مندوبین اور مہمانوں کو مبارکباد پیش کی اور کہاکہ ملک میں ہندی کے بعد سب سے زیادہ بولی جانے والی دوسری بڑی زبان تلگو ہے۔ صدرجمہوریہ نے تلگو کی ترقی کیلئے گروجڈا اپا راؤ کی خدمات کو ناقابل فراموش قرار دیا اور کہا کہ تین تلگو داں افراد کو جہاں صدرجمہوریہ بننے کا موقع ملا وہیں نائب صدر جمہوریہ کے عہدے پر تلگو داں وینکیا نائیڈو فائز ہیں۔ پی وی نرسمہا راؤ تلگو داں تھے جنھیں وزیراعظم بننے کا اعزاز حاصل ہوا تھا۔

جدوجہد آزادی میں تلگو داں افراد بالخصوص سیتارام راجو کی خدمات ناقابل فراموش ہیں۔ چیف منسٹر تلنگانہ نے عالمی تلگو کانفرنس کے کامیاب انعقاد پر مسرت کا اظہار کیا اور کہاکہ اس کانفرنس کے ذریعہ تلگو زبان کی اہمیت و انفرادیت میں اضافہ ہوا ہے۔ چیف منسٹر نے کہاکہ تلگو زبان کو بچانے کی جب باتیں ہوتی ہیں تو اُنھیں تکلیف ہوتی ہے۔ وہ آئندہ سے ہر سال ڈسمبر میں دو روزہ تلگو کانفرنس منعقد کریں گے۔ تلگو زبان کو ترقی دینے حکومت نے عملی اقدامات کا آغاز کیا ہے۔ اول تا انٹرمیڈیٹ تلگو کو لازمی زبان کے طور پر پڑھانے احکام جاری کئے گئے ہیں۔ چیف منسٹر نے کہاکہ تلنگانہ میں تعلیم حاصل کرنے والوں کو تلگو زبان سیکھنا ضروری قرار دیا گیا ہے۔ کے سی آر نے کہاکہ ریٹائرڈ تلگو پنڈت کے وظیفوں میں کوئی کٹوتی نہیں کی جائیگی۔ عالمی تلگو کانفرنس کے ذریعہ تلگو زبان کو ترقی دینے کئی تجاویز وصول ہوئی ہیں جن پر عمل کو حکومت یقینی بنائیگی۔ چیف منسٹر نے کہاکہ تلگو کے فروغ کیلئے وہ اسی کانفرنس کے ذریعہ کئی اعلانات کا ارادہ رکھتے تھے تاہم تکنیکی وجوہات کے باعث جنوری کے پہلے ہفتے میں ایک اجلاس طلب کرکے تلگو زبان کی ترقی اور فروغ کیلئے اقدامات کا اعلان کریں گے۔ کے سی آر نے کہاکہ تلگو زبان کا روشن مستقبل ہے۔ ضرورت یہ ہے کہ تلگو داں افراد اس کی اہمیت کو پہچانیں اور تلگو بول چال کو عام کریں۔ گورنر نرسمہن نے تلگو زبان کو بہت بڑا اثاثہ قرار دیتے ہوئے اس کا تحفظ کرنے کی تلگو عوام سے اپیل کی۔ گورنر نے تلگو زبان کی ترقی کیلئے حکومت تلنگانہ بالخصوص چیف منسٹر کے سی آر کے اقدامات کی ستائش کی۔ 5 دن تک کامیاب طریقے سے سرزمین حیدرآباد پر عالمی تلگو کانفرنس کے انعقاد پر مسرت کا اظہار کیا۔ انھوں نے کہاکہ تلگو کے چاہنے والوں کی کمی نہیں ہے۔ تقریب میں تلگو داں عوام کی شرکت سے اس کا اندازہ ہوتا ہے۔ تلگو زبان کے تہوار میں حصہ لینے والوں کو مبارکباد پیش کی۔ بچوں کی سالگرہ کے موقع پر بطور تحفہ تلگو کتابیں پیش کرنے کا والدین کو مشورہ دیا۔ تلگو زبان کی ترقی میں صحافت کو ذمہ دارانہ رول ادا کرنے پر زور دیا۔ اختتام پر رنگا رنگ تقریب کا اہتمام کیا گیا ۔ قومی ترانے سے کانفرنس اختتام کو پہونچی۔

TOPPOPULARRECENT