Wednesday , December 19 2018

تین سادھویوں کی نواڈا آشرم میں اجتماعی عصمت ریزی

آشرم کے صدر اور دیگر 12 افر اد کے خلاف ایف آئی آر درج
نواڈا ۔ /12 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) تین سادھویوں کی مبینہ طور پر بہار کے ضلع نواڈا کے ایک آشرم میں اجتماعی عصمت ریزی کی گئی اور آشرم کے سنچالک (صدر) بھی ملزمین میں شامل تھے ۔ پولیس نے کہا کہ سنچالک اور دیگر ملزم جن کی سادھویوں نے نشاندہی کی ہے فرار ہے اور پولیس انہیں تلاش کررہی ہے ۔ ضلع سپرنٹنڈنٹ پولیس وکاس برمن کے بموجب ایک ایف آئی آر تین سادھویوں کی جانب سے درج کروائی گئی ہے جس میں سنت کٹیر آشرم کے سنچالک اور دیگر 12 آدمیوں کو ملزم قرار دیا گیا ہے ۔ جنہوں نے /4 ڈسمبر 2017 ء کو ان کی اجتماعی عصمت ریزی کی تھی ۔ آشرم کے صدر تبسیانند اور دیگر ملزمین /10 جنوری 2018 ء سے فرار ہیں ۔ بستی پولیس اسٹیشن نے آشرم پر /9 جنوری کو دھاوا کیا تھا لیکن یہاں کا سنچالک انہیں دھوکہ دے کر فرار ہونے میں کامیاب ہوگیا ۔ یہ واقعہ کل منظر عام پر آیا جبکہ تین سادھویوں کو طبی معائنے کیلئے صدر ہاسپٹل منتقل کیا گیا ۔ اس معاملے کی تحقیقات جاری ہیں ۔ ایس پی نے کہا کہ پولیس خاطیوں کی گرفتاری کیلئے دھاوے کررہی ہے ۔ آشرم کو مہربند کردیا گیا ہے اور کسی بھی شخص کو اس کے احاطہ میں داخلہ کی اجازت نہیں دی جارہی ہے ۔ یہ آشرم گزشتہ 7 تا 8 سال سے قائم اور کارکرد تھا ۔ بستی پولیس نے اس کے سنچالک کی تلاش شروع کردی ہے ۔ کیونکہ اس کے خلاف آشرم میں مقیم سادھویوں نے اجتماعی عصمت ریزی کے الزام میں ایف آئی آر درج کروایا ہے ۔ اس آشرم کو سنت کبیر آشرم بھی کہا جاتا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT