Sunday , June 24 2018
Home / دنیا / تیونس میں ٹیکس اضافہ کیخلاف پرتشدد مظاہرہ ،800گرفتار

تیونس میں ٹیکس اضافہ کیخلاف پرتشدد مظاہرہ ،800گرفتار

تیونیسیا، 15 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) تیونس میں دو دنوں تک نسبتا امن رہنے کے بعد کل دارالحکومت اور دیگر شہروں میں ٹیکس میں اضافہ اور ضروری سامانوں کی قیمتوں میں اضافہ کے خلاف پرتشدد مظاہرہ ہوا۔تشدد کی وجہ سے تقریبا ایک ہفتے بعد پولیس کو ایٹاڈیمن ضلع میں مظاہرین کے خلاف آنسو گیس کا استعمال کرنا پڑا۔ایک عینی شاہدکے مطابق سیکورٹی فورسز کی جانب سے آنسو گیس کے گولے چھوڑنے سے پہلے مظاہرہ کرنے والے نوجوانوں نے پولیس کی گاڑیوں پر سنگباری کی اور ٹائر میں آگ لگا دی۔ مظاہرین نے کرام ضلع میں پرتشدد احتجاج و مظاہرہ کیا اور الجیریا کی سرحد کے قریب فیریانا نامی شہر میں سڑکوں کو کاٹنے کی کوشش کی جس کی وجہ سے پولیس نے مظاہرین کو بھگانے کے لئے آنسو گیس کے گولے چھوڑے ۔وزارت داخلہ کے مطابق پولیس اسٹیشنوں پر پٹرول بم پھینکے ، جان بوجھ کر سرکاری املاک کو نقصان پہنچانے اور تشدد کی کارروائیوں کے الزام میں تقریبا 800 افراد کو گرفتار کیا گیا ہے ۔حکومت نے احتجاج کو دیکھتے ہوئے گزشتہ ہفتہ غریب خاندانوں اور ضرورت مندوں کے لئے اضافی امداد کا اعلان کیا تھا لیکن لوگ اب بھی قیمتوں میں اضافہ اور نئے ٹیکس کے خلاف مظاہرہ کر رہے ہیں۔ قابل غور ہے کہ حکومت نے بین الاقوامی عطیہ دہندگان کے ساتھ ہوئے معاہدے کے مطابق بجٹ خسارے کو کم کرنے کے لئے یکم جنوری کو ٹیکس اور قیمتوں میں اضافہ کا اعلان کیا تھا جس کو لے کر ملک بھر میں احتجاج ہو رہے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT