Friday , November 24 2017
Home / ہندوستان / جاسوسی کیس کے ملزمین عدالتی تحویل میں پولیس کو پختہ ثبوت دستیاب۔ مزید گرفتاریوں کا امکان

جاسوسی کیس کے ملزمین عدالتی تحویل میں پولیس کو پختہ ثبوت دستیاب۔ مزید گرفتاریوں کا امکان

نئی دہلی۔/10ڈسمبر، ( سیاست ڈاٹ کام ) دہلی پولیس نے آج عدالت کو مطلع کیا ہے کہ گرفتار 5میں سے 4ملززین نے پاکستانی انٹلی جنس ایجنسی ( آئی ایس آئی ) کو بھاری رقومات کے عوض حساس نوعیت کے دستاویزات فراہم کئے ہیں جن کے خلاف قانون سرکاری راز کے تحت الزامات عائد کئے گئے ہیں۔ دہلی پولیس کی کرائم برانچ نے عدالت کو بتایا کہ آئی ایس آئی سے اصل ملزم کفایت اللہ خان عرف ماسٹر راجہ کو 20 ہزار روپئے اور جموں کشمیر لائٹ انفنٹری یونٹ کانسٹبل فرید احمد کو 10ہزار روپئے وصول ہوئے ہیں ۔ علاوہ ازیں دیگر گرفتار ملزمین منوراحمد میر سابق فوجی کو 40ہزار روپئے اور ایک ٹیچر محمد صابر کو 10ہزار روپئے آئی ایس آئی ایجنٹ نے دستاویزات کی سربراہی کے عوض ادا کئے ہیں۔ ریمانڈ کی مدت ختم ہونے پر کرائم برانچ پولیس نے آج چار ملزمین بشمول بی ایس ایف کانسٹبل عبدالرشید کو چیف میٹرو پالیٹن مجسٹریٹ سنجے گھناگوال کے روبرو پیش کیا جنہیں تحقیقاتی عہدیدار کے یہ کہنے پر کہ ملزمین سے مزید پوچھ تاچھ کی ضرورت نہیں ہے14یوم کیلئے عدالتی تحویل میں دے دیا۔ پولیس عہدیدار نے عدالت کو بتایا کہ ملزمین اور ان کے پاکستانی آقا کے درمیان بات چیت پر مشتمل سی ڈی حاصل کرلی گئی جسے تجزیہ کیلئے فارنسک لیباریٹری روانہ کردیا گیا ہے۔انہوں نے بتایا کہ ملزمین کی تحویل سے انتہائی حساس نوعیت کی دستاویزات ضبط کرلی گئی ہیں جس کی پولیس جانچ پڑتال کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ آئی ایس آئی نے ملزمین کے بینک اکاؤنٹس میںرقومات جمع کروائی ہے وہاں سے بھی تفصیلات حاصل کرلی گئی ہیں۔ پولیس عہدیدار نے مزید بتایا کہ جاسوسی کیس میں مزید افراد نے فائدہ اٹھایا ہے انہیں بھی بہت جلد گرفتار کرلیا جائے گا۔

TOPPOPULARRECENT