Sunday , June 24 2018
Home / ہندوستان / جامع مسجد دہلی کے پاس منی اسکرٹ پہننے والے

جامع مسجد دہلی کے پاس منی اسکرٹ پہننے والے

نئی دہلی 23 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) منی اسکرٹ پہنی ہوئی غیر ملکی سیاحوں پر جو جامع مسجد دہلی میں داخل ہورہی تھیں، انڈین مجاہدین کے معاون بانی یٰسین بھٹکل اور اُن کے قریبی ساتھیوں نے سپٹمبر 2010 ء میں تاریخی جامع مسجد دہلی کے تیسرے پھاٹک پر فائرنگ کی تھی، بھٹکل اور اُس کے قریبی ساتھی اسداللہ اختر کے خلاف دہلی پولیس کے خصوصی شعبہ نے فرد جرم

نئی دہلی 23 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) منی اسکرٹ پہنی ہوئی غیر ملکی سیاحوں پر جو جامع مسجد دہلی میں داخل ہورہی تھیں، انڈین مجاہدین کے معاون بانی یٰسین بھٹکل اور اُن کے قریبی ساتھیوں نے سپٹمبر 2010 ء میں تاریخی جامع مسجد دہلی کے تیسرے پھاٹک پر فائرنگ کی تھی، بھٹکل اور اُس کے قریبی ساتھی اسداللہ اختر کے خلاف دہلی پولیس کے خصوصی شعبہ نے فرد جرم عائد کرتے ہوئے کہاکہ ملزم منی اسکرٹ یا کم لباس کو جو غیر ملکی سیاح پہنتے ہیں، غیر اسلامی سمجھتے تھے جس کی وجہ سے اُنھوں نے جامع مسجد دہلی کے تیسرے پھاٹک پر جہاں غیر ملکی سیاح اکثر آیا کرتے ہیں، فائرنگ کرنے کا فیصلہ کیا۔ 2 موٹر سیکل سوار حملہ آوروں نے جامع مسجد کی تیسری پھاٹک پر پرانی دہلی میں فائرنگ کی جس سے 2 تائیوانی سیاح زخمی ہوگئیں۔ ایک سرقہ کی ہوئی کار اِس علاقہ میں کھڑی کی گئی تھی جس میں بم نصب تھا جس سے ایک ہلکا دھماکہ ہوا۔ پولیس نے فرد جرم میں کہاکہ 5 ماہ بعد13 فروری 2010 ء کو پونے میں بم دھماکہ کیا گیا۔ انڈین مجاہدین کے ہندوستانی سربراہ بھٹکل نے جرمن بیکری پہاڑ گنج پر یکم اگسٹ 2010 ء کو دہشت گرد حملہ کرنے کی سازش بھی کی لیکن یہ منصوبہ ناکام ہوگیا کیونکہ حملہ آوروں میں سے ایک کاربائن حادثاتی طور پر چل پڑی جس سے حملہ آور زخمی ہوگئے تھے۔ پولیس نے اپنا فرد جرم بھٹکل اور اختر کے خلاف قانون تعزیرات ہند کی مختلف دفعات بشمول دفعہ307 (ارادہ قتل) 120B (مجرمانہ سازش) اور غیرقانونی سرگرمیاں (انسدادی) قانون کی اور قانون اسلحہ کی مختلف دفعات کے تحت فرد جرم داخل کیا گیا، پولیس نے دعویٰ کیاکہ یٰسین بھٹکل کو پاکستان میں مقیم اُس کے آقاؤں نے ہدایت دی تھی کہ 2010 ء کے کامن ویلتھ گیمز دہلی میںشروع ہونے سے عین قبل دہشت گرد حملے کئے جائیں۔

TOPPOPULARRECENT