Friday , January 19 2018
Home / دنیا / جان کیری کا دورۂ ہند ، مستحکم تعلقات کیلئے انتہائی اہم

جان کیری کا دورۂ ہند ، مستحکم تعلقات کیلئے انتہائی اہم

واشنگٹن۔ 5 اگست (سیاست ڈاٹ کام) وزیر خارجہ امریکہ جان کیری کا دورۂ ہند نئی حکومت ہند کے ساتھ اہم تعلقات کے ایک نئے دور کا آغاز ہے۔ امریکہ کیلئے ہندوستان کی ’’دفاعی اہمیت‘‘ قابل قدر ہے۔ اوباما انتظامیہ نے کہا کہ وزیر خارجہ امریکہ جان کیری نے گزشتہ ہفتہ پانچویں سالانہ ہند۔ امریکہ دفاعی مذاکرات کی وزیر خارجہ ہندوستان سشما سوراج کے

واشنگٹن۔ 5 اگست (سیاست ڈاٹ کام) وزیر خارجہ امریکہ جان کیری کا دورۂ ہند نئی حکومت ہند کے ساتھ اہم تعلقات کے ایک نئے دور کا آغاز ہے۔ امریکہ کیلئے ہندوستان کی ’’دفاعی اہمیت‘‘ قابل قدر ہے۔ اوباما انتظامیہ نے کہا کہ وزیر خارجہ امریکہ جان کیری نے گزشتہ ہفتہ پانچویں سالانہ ہند۔ امریکہ دفاعی مذاکرات کی وزیر خارجہ ہندوستان سشما سوراج کے ساتھ مشترکہ صدارت کے لئے ہندوستان کا دورہ کیا۔ وہ اوباما انتظامیہ کے پہلے کابینی وزیر تھے جنہوں نے وزیراعظم نریندر مودی سے ملاقات کی۔

وزارت ِ خارجہ کے ہمراہ وزیر تجارت پینی پرٹزیکر بھی تھیں۔ وزارت خارجہ کی ترجمان جین ساکی نے کہا کہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ انہیں اس دورہ کو اختتامی یا فیصلہ کن دورہ قرار دینے کی کوئی وجہ نظر نہیں آتی۔ انہوں نے کہا کہ جان کیری کا یہ دورہ ہندوستان کی نئی حکومت کے ساتھ اہم تعلقات کے ایک نئے دور کا آغاز ہے اور امریکہ کیلئے اس کی عظیم دفاعی اہمیت ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ یقینی طور پر ایک گرم جوش دورہ تھا اور وزیراعظم نریندر مودی سے گرم جوش ملاقات تھی، اس لئے ہمیں اُمید ہے کہ سرد مہری ختم ہوجائے گی۔ وزیر دفاع امریکہ چک ہیگل جاریہ ہفتہ کے اواخر میں ہندوستان کا دورہ کرنے والے ہیں۔ اس طرح وہ مودی حکومت کے عہدیداروں سے اندرون ایک ہفتہ ملاقات کرنے والے تیسرے امریکی کابینی وزیر ہوں گے۔

جین ساکی نے کہا کہ اوباما انتظامیہ کے ایک اعلیٰ سطحی رکن کی وزیراعظم نریندر مودی سے ملاقات دفاعی تعلقات کا آغاز ہے، اس کے علاوہ دفاعی مذاکرات پر بھی وزیراعظم کے ساتھ ملاقات کے دوران وزیر خارجہ امریکہ نے بات چیت کی۔ وسیع تر موضوعات پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ مودی کا معاشی نظریہ امریکہ کے ترقی یافتہ نظریہ میں کس حد تک مددگار ثابت ہوسکتا ہے، اس کا بھی جائزہ لیا گیا۔ برقی توانائی کے شعبہ اور صاف ستھری توانائی کے شعبہ میں باہمی تعاون کے مفید نتائج برآمد ہوسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ عالمی تنظیم تجارت کے تبادلہ خیال میں بھی وزیر خارجہ امریکہ نے امریکہ کا موقف واضح کردیا۔ بالی معاہدہ ہندوستان کے مفاد میں نہیں تھا اور مودی کے معاشی نظریہ کے ساتھ بھی ہم آہنگ نہیں ہے۔ جین ساکی نے کہا کہ دونوں فریقین نے افغانستان اور پاکستان کے علاوہ ہندوستان کی ’’مشرق کی جانب دیکھو‘‘ پالیسی پر بھی تبادلہ خیال کیا۔

TOPPOPULARRECENT