جاٹ برادری کو تحفظات بحال کرنے مساعی

نئی دہلی 2 اپریل ( سیاست ڈاٹ کام ) مرکزی حکومت نے سپریم کورٹ میں درخواست نظر ثانی دائر کی ہے ۔ حکومت نے عدالت سے استدعا کی ہے کہ وہ سابقہ یو پی اے حکومت کے ایک اعلامیہ کو کالعدم قرار دینے اپنے فیصلے پر نظر ثانی کرے ۔ اس اعلامیہ کے ذریعہ جاٹ برادری کو او بی سی زمرہ میں شامل کیا گیا تھا تاکہ انہیں بھی تحفظات کے فوائد حاصل ہوسکیں۔ این ڈی اے

نئی دہلی 2 اپریل ( سیاست ڈاٹ کام ) مرکزی حکومت نے سپریم کورٹ میں درخواست نظر ثانی دائر کی ہے ۔ حکومت نے عدالت سے استدعا کی ہے کہ وہ سابقہ یو پی اے حکومت کے ایک اعلامیہ کو کالعدم قرار دینے اپنے فیصلے پر نظر ثانی کرے ۔ اس اعلامیہ کے ذریعہ جاٹ برادری کو او بی سی زمرہ میں شامل کیا گیا تھا تاکہ انہیں بھی تحفظات کے فوائد حاصل ہوسکیں۔ این ڈی اے حکومت نے چند دن قبل جاٹ برادری کے ایک وفد کی جانب سے وزیر اعظم نریندر مودی سے کی گئی نمائندگی کے بعد عدالت میں یہ درخواست دائر کی ہے ۔ وزیر اعظم نے جاٹ وفد کو یہ تیقن دیا تھا کہ وہ اپنی جانب سے ہر ممکن کوشش کرینگے تاکہ اس مسئلہ کا قانون کے دائرہ میں رہتے ہوئے کوئی حل دریافت کیا جاسکے ۔ مرکزی حکومت نے اپنی درخواست نظر ثانی میں کہا ہے کہ اسے یہ اختیار ہے کہ وہ کسی ایک برادری کو تحفظات فراہم کرنے کیلئے اقدامات کرے اور اس کیلئے اسے قومی کمیشن برائے پسماندہ طبقات کی رائے یا مشورہ کی ضرورت نہیں ہے ۔ اڈیشنل سالیسیٹر جنرل مہیندر سنگھ نے کہا کہ درخواست نظر ثانی عدالت میں کل پیش کی گئی ہے ۔ عدالت نے اس سلسلہ میں کچھ جاٹ طلبا کی درخواست مسترد کردی تھی جنہوں نے او بی سی زمدہ میں میڈیکل اور ڈینٹل کورسیس میں تحفظات کا مطالبہ کیا تھا ۔ عدالت نے تاہم کہا تھا کہ قومی کمیشن برائے پسماندہ طبقات کے مشورہ پر مرکزی حکومت عمل کرسکتی ہے ۔ مرکز کا کہنا تھا کہ جاٹ برادری کو او بی سی زمرہ میں شامل کرنے کا فیصلہ تفصیلی صلاح و مشورے کے بعد کیا گیا تھا ۔

TOPPOPULARRECENT