Thursday , September 20 2018
Home / اضلاع کی خبریں / جشن تلنگانہ : مسلم طبقہ اور اردو یکسر نظرانداز

جشن تلنگانہ : مسلم طبقہ اور اردو یکسر نظرانداز

نارائن پیٹ 5 جون (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) نارائن پیٹ ڈیویژن میں منعقدہ جشن تلنگانہ سرکاری تقاریب میں اردو اور مسلمانوں کو یکسر نظرانداز کیا گیا۔ تلنگانہ تحریک میں اہلِ اردو اور مسلمانوں نے بھرپور کردار ادا کیا۔ لیکن ایوارڈس کی تقسیم، تہنیت کی پیشکشی کے معاملہ میں مسلم طبقہ اور اردو والوں کو فراموش کرنے کی روایت کو دہرایا گیا۔ جشن تلنگا

نارائن پیٹ 5 جون (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) نارائن پیٹ ڈیویژن میں منعقدہ جشن تلنگانہ سرکاری تقاریب میں اردو اور مسلمانوں کو یکسر نظرانداز کیا گیا۔ تلنگانہ تحریک میں اہلِ اردو اور مسلمانوں نے بھرپور کردار ادا کیا۔ لیکن ایوارڈس کی تقسیم، تہنیت کی پیشکشی کے معاملہ میں مسلم طبقہ اور اردو والوں کو فراموش کرنے کی روایت کو دہرایا گیا۔ جشن تلنگانہ تقاریب کے ضمن میں مختلف زمروں سے تعلق رکھنے والی اہم شخصیات جن میں صحافی، ادیب، شاعر، سماجی کارکن، مذہبی شخصیات، اساتذہ،کھلاڑیوں، کسان کو ایوارڈ اور توصیفی اسناد سے منڈل واری ڈیویژن سطح اور ضلعی سطح پر تہنیت پیش کی جارہی ہے۔ نارائن پیٹ ڈیویژن کے کئی منڈلوں میں مسلم طبقہ کی نمائندگی صفر رہی اور اردو کو نظرانداز کردیا گیا۔ ایوارڈ کی تقسیم کے لئے جس کمیٹی کو قائم کیا گیا تھا اُس کمیٹی میں ایک اردو داں کی شمولیت ضروری تھی۔ متعصب ذہن نوکر شاہی طبقہ نے مسلمانوں کے خلاف نفرت کا اظہار کرتے ہوئے مسلم نمائندگی کو بُری طرح نظرانداز کردیا۔ چیف منسٹر تلنگانہ، ریاست تلنگانہ میں گنگا جمنی تہذیب کو فروغ دینے کے لئے کوشاں ہے۔ مگر متعصب نوکر شاہی طبقہ جو فرقہ پرست طاقتوں کے زیراثر ہے مسلمانوں کو نظرانداز کرنے کی پالیسی پر عمل پیرا ہے۔ جشن تلنگانہ تقاریب میں ایوارڈ اور تہنیت کے موقع پر مسلم شخصیتوں کو نظرانداز کرکے نوکر شاہی طبقہ اور متعصب افراد نے درپردہ اس بات کو مسلمانوں پر ظاہر کرنے کی کوشش کی ہے کہ تحریک تلنگانہ میں مسلمانوں کا کوئی کردار نہیں ہے۔ نارائن پیٹ ڈیویژن کے سیکولر ذہنیت رکھنے والے افراد کا مطالبہ ہے کہ جشن تلنگانہ کے ضمن میں دیئے جانے والے ایوارڈس کی فہرست میں مسلمانوں کے ناموں کی شمولیت کے ذریعہ مسلم طبقہ میں اعتماد کو بڑھائے۔

TOPPOPULARRECENT