Wednesday , September 19 2018
Home / ہندوستان / جغرافیائی پڑوسیوں سے اچھے تعلقات کی اہمیت : حامد انصاری کا خطاب

جغرافیائی پڑوسیوں سے اچھے تعلقات کی اہمیت : حامد انصاری کا خطاب

جئے پور 10 ستمبر ( سیاست ڈاٹ کام ) نائب صدر جمہوریہ حامد انصاری نے کہا کہ اگر ہمار ے جغرافیائی پڑوسیوں کے ساتھ تعلقات خوشگوار رہتے ہیں تو یہ ہمارے لئے بھی اچھا اور پرسکون ہوتا ہے ۔ جناب حامد انصاری نے کہا کہ انفرادی طور پر بھی ہم اپنی مرضی سے اپنے پڑوسیوں کا انتخاب نہیں کرسکتے ۔ ہم میں سے ہر ایک کو کچھ نہ کچھ اختلافات اور ٹکراؤ سے گذرنا

جئے پور 10 ستمبر ( سیاست ڈاٹ کام ) نائب صدر جمہوریہ حامد انصاری نے کہا کہ اگر ہمار ے جغرافیائی پڑوسیوں کے ساتھ تعلقات خوشگوار رہتے ہیں تو یہ ہمارے لئے بھی اچھا اور پرسکون ہوتا ہے ۔ جناب حامد انصاری نے کہا کہ انفرادی طور پر بھی ہم اپنی مرضی سے اپنے پڑوسیوں کا انتخاب نہیں کرسکتے ۔ ہم میں سے ہر ایک کو کچھ نہ کچھ اختلافات اور ٹکراؤ سے گذرنا پڑتا ہے ۔ جناب حامد انصاری بنستھلی ودیا پیٹھ میں طلبا کے ایک گروپ کے ساتھ تبادلہ خیال کر رہے تھے ۔ وہ راجستھان کے دورہ پر ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اسی طرح کی صورتحال ملک کی سطح پر بھی ہوتی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ وہ بیگ آفس یا فرنٹ آفس کی اصطلاحات میں یقین نہیں رکھتے ۔ لیکن اگر ہم سب مل کر ایک مسابقتی طاقت بن جائیں تو یہ بہت اچھی بات ہے ۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ اگر ہمارے اپنے جغرافیائی پڑوسیوں کے ساتھ تعلقات خوشگوار رہیں تو یہ ہمارے لئے بھی اچھا اور سکون کا باعث ہوتا ہے ۔ ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے انہوں نے کسی ملک کا نام لئے بغیر کہا کہ باہمی دوروں اور تبادلوں سے خوشیاں منانے کی ضرورت نہیں ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اس طرح کے تمام بیرونی دورے ‘ بات چیت اور تبادلہ صحیح سمت میں ایک قدم ہیں لیکن اس کے باوجود وہ سمجھتے ہیں کہ ساری صورتحال کے تعلق سے ہمیں خوش فہمی میں مبتلا ہونے کی ضرورت نہیں ہے ۔ ہر قدم پوری احتیاط سے اٹھانے کی ضرورت ہے ۔ اکیسویں صدی کو ایشیا کی صدی بنانے کے تعلق سے انہوں نے کہا کہ اس کیلئے معاشی ‘ سیاسی اور سماجی سطح پر مزید بہتری اور اصلاحات کی ضرورت ہے ۔

TOPPOPULARRECENT