Saturday , December 16 2017
Home / Top Stories / جفت طاق اسکیم ہماری توہین ،ارکان پارلیمنٹ کا اعتراض

جفت طاق اسکیم ہماری توہین ،ارکان پارلیمنٹ کا اعتراض

نئی دہلی ۔ 25 اپریل ۔ ( سیاست ڈاٹ کام ) چیف منسٹر دہلی اروند کجریوال کی اختراعی جفت طاقت اسکیم کو آج پارلیمنٹ میں تنقیدوں کا سامنا کرنا پڑا اور ارکان نے کہا کہ اس سے کرپشن کو بڑھاوا ملے گا ۔ اس کا مقصد ارکان پارلیمنٹ کی ’توہین‘ بھی ہے کیونکہ انھوں نے پارلیمنٹ میں شرکت کیلئے اسکیم سے استثنیٰ کی خواہش کی تھی ۔ لوک سبھا میں وقفہ صفر کے دوران یہ مسئلہ اُٹھاتے ہوئے راجش رنجن عرف پپو یادو نے کہا کہ اسکیم سے سی این جی کمپنیوں کو فائدہ نہیں ہوگا ۔ بسوں اور کاروں کو تیار کرنے والی کمپنیوں کو بھی فائدہ نہیں اور آلودگی میں بھی بمشکل کمی ہوگی ۔ انھوں نے کہا کہ کجریوال نے محض سستی شہرت کیلئے یہ اسکیم متعارف کی ہے ۔ انھوں نے آئی آئی ٹی کانپور کی مطالعاتی رپورٹ کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا کہ کاروں سے صرف 5فیصد آلودگی ہوتی ہے جبکہ دہلی حکومت آلودگی کا سبب بننے والے 95 فیصد عوام کو روکنے میں ناکام ہوگئی ۔ عاپ رکن بھگونت من جب اسکیم کا دفاع کررہے تھے اس وقت بی جے پی کے کئی ارکان کو پپو یادو کی تائید کرتے دیکھا گیا ۔ راجیہ سبھا میں نریش اگروال ( ایس پی ) نے ارکان پارلیمنٹ کو اسکیم سے استثنیٰ دینے کی خواہش کی ۔ اس تجویز کی دیگر کئی ارکان کے علاوہ نائب صدرنشین پی جے کورین بھی حمایت کررہے تھے ۔ کانگریس رکن راجیو شکلا نے کہاکہ ارکان پارلیمنٹ کو اسکیم سے استثنیٰ دیا جانا چاہئے ۔ کورین نے ایوان میں ارکان کے احساسات سے تعلق خاطر کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کی یہ ذمہ داری ہے کہ وہ ارکان پارلیمنٹ کو اپنی ڈیوٹی انجام دینے میں مدد کریں ۔ انھوں نے جاننا چاہا کہ وزیر پارلیمانی اُمور نے یہ مسئلہ حکومت دہلی سے رجوع کیوں نہیں کیا۔

TOPPOPULARRECENT