Monday , November 19 2018
Home / ہندوستان / جموںو کشمیر کی صیانتی صورتحال کا جائزہ

جموںو کشمیر کی صیانتی صورتحال کا جائزہ

اجلاس میں مشیر قومی سلامتی اور معتمدداخلہ شامل ،فوجی سپاہی کی بیوی سے ملاقات
نئی دہلی ۔ 13 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) مسلسل دوسرے دن مرکزی وزیرداخلہ راجناتھ سنگھ نے ریاست جموں و کشمیر کی صیانتی صورتحال کا جائزہ لیا جہاں تین دن میں دہشت گردوں کے حملہ سے 10 افراد بشمول ایک فوجی ہلاک ہوچکے ہیں۔ اجلاس میں مرکزی وزیرداخلہ مشیرقومی سلامتی اور مرکزی معتمدخارجہ موجود تھے۔ راجناتھ سنگھ نے پرزور انداز میں کہا کہ عمارتوں پر حملوں کے واقعات کا انسداد سرحدی علاقہ میں ضروری ہے۔ مشیرقومی سلامتی اجیت دوول، مرکزی معتمد داخلہ راجیوگوہا اور سربراہ محکمہ سراغ رسانی اجلاس میں شریک تھے۔ مرکزی وزیرداخلہ نے کہا کہ فوجی کیمپس اور فوجی اڈوں کی حفاظت کے انتظامات میں شدت پیدا کردی ہے۔ راجناتھ سنگھ کو اطلاع دی گئی کہ اعلیٰ ترین سطح پر صیانتی انتظامات ریاست گیر سطح پر کئے جاچکے ہیں تاکہ دہشت گردوں کو فوج پر حملوں سے روکا جاسکے۔ سرینگر میں گذشتہ 25 گھنٹوں سے جاری فائرنگ کا تبادلہ فوج کے ہاتھوں لشکرطیبہ کے دو دہشت گردوں کی ہلاکت کے ساتھ آج ختم ہوگیا۔ قبل ازیں وزیرداخلہ راج ناتھ سنگھ نے اُس فوجی جوان کی بیوی کے لئے اپنی نیک تمناؤں کا اظہار کرتے ہوئے ان کی جرت و حوصلہ کی ستائش کی جس نے جموں میو سنجوری کیمپ پر حملے کے دوران دہشت گردوں کی فائرنگ میں گولی لگنے کے باوجود بہادری کے ساتھ خود کو بچاتے ہوئے ایک صحتمند بچہ کو جنم دی ہے۔ مرکزی وزیرداخلہ راج ناتھ سنگھ کی طرف سے سی آر پی ایف کے اسپیشل ڈائرکٹر ایس این سریواستوا نے رائفل مین نذیر احمد کی بیوی شہزاد خاں کو گلدستہ پیش کیا۔ وزیرداخلہ کے دفتر نے ٹوئیٹر پر لکھا کہ ’’وزیرداخلہ شری راج ناتھ سنگھ نے مسز شہزاد خاں زوجہ رائفل مین نذیر احمد کے لئے اپنی نیک تمناؤں کا اظہار کیا ہے جو جموں میں سنجوان فوجی کیمپ پر دہشت گرد حملے میں شدید زخمی ہوگئی تھیں‘‘۔ راج ناتھ سنگھ نے اس خاتون کی طرف سے غیرمعمولی ہمت و حوصلہ کے مظاہرے کی بھرپور ستائش کی اور نومولود بچہ کے لئے بھی اپنی نیک تمناؤں کا اظہار کیا۔ وزیرداخلہ نے جموں کے فوجی ہاسپٹل کے ڈاکٹروں اور میڈیکل اسٹاف کی خدمات کی ستائش بھی کی۔ یہ حاملہ عورت شہزاد خاں ہفتہ کو سنجوان فوجی کیمپ پر دہشت گرد حملے میں شدید زخمی ہوگئے تھے۔ اس حملے میں چھ فوجی سپاہی ہلاک ہوگئے تھے۔ واشنگٹن سے موصولہ اطلاع کے بموجب امریکہ کے محکمہ سراغ رسانی کے سربراہ نے آج کہا کہ پاکستان کی تائید سے دہشت گرد گروپ کے حملے ہندوستان کی سرزمین پر جاری رہیں گے جب تک کہ دونوں ممالک کے درمیان کشیدگی کا خاتمہ نہ ہوجائے۔ ڈائرکٹر قومی محکمہ سراغ رسانی ڈانڈکوٹس کا یہ تبصرہ پاکستان کی جیش محمد دہشت گرد گروپ کے سنجوانگ فوجی اسکام واقع جموں پر ہفتہ کے دن دہشت گرد حملہ کے پس منظر میں منظرعام پر آیا جس میں 7 افراد بشمول ایک فوجی ہلاک ہوگئے تھے۔ امریکی کانگریس کی سلیکٹ کمیٹی کے اجلاس پر بیان دیتے ہوئے انہوں نے کہاکہ درحقیقت پاکستان امریکی مفادات کیلئے خطرہ بن گیا ہے۔ نیوکلیئر صلاحیت حاصل کرنے کے بعد اس نے عسکریت پسندوں سے اپنے تعلقات استوار کرلئے ہیں اور انسداد دہشت گردی کارروائی میں تعاون کے بجائے چین سے قربت اختیار کررہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT