Tuesday , November 21 2017
Home / Top Stories / جموں و کشمیر اسمبلی میں بی جے پی ارکان کا احتجاج

جموں و کشمیر اسمبلی میں بی جے پی ارکان کا احتجاج

حکومت پر ناقابل عمل یقین دہانیوں کا الزام
سری نگر۔ 9 جون (سیاست ڈاٹ کام) جموں وکشمیر کی قانون ساز اسمبلی میں جمعرات کو پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی (پی ڈی پی) اور بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے تحاد پر مبنی مخلوط حکومت کو اُس وقت ہزیمت کا سامنا کرنا پڑا جب بی جے پی کے کچھ ممبران احتجاج کرتے ہوئے ایوان میں داخل ہوگئے ۔اِن احتجاجی ممبران کا الزام تھا کہ حکومت کی جانب سے کرائی گئی یقین دہانیوں کو پورا نہیں کیا جاتا اور اُن کی جانب سے پیش کئے گئے سوالات کے غلط جوابات فراہم کئے گئے ۔اس احتجاج کے دوران بی جے پی ممبر اسمبلی کٹھوعہ راجیو جسروتیہ نے کٹھوعہ میں اسپورٹس اسٹیڈیم تعمیر نہ کئے جانے کے خلاف ایوان سے احتجاجاً واک آؤٹ کیا۔بی جے پی ممبران کے احتجاج کا فائدہ اٹھاتے ہوئے اپوزیشن نیشنل کانفرنس ، کانگریس اور ادھم پور سے آزاد ممبر اسمبلی نے بھی حکومت کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا۔جب ایوان میں وقفہ سوالات جاری تھا تو چار سے پانچ بی جے پی ممبران نے نعرے بازی شروع کردی اور الزام عائد کیا کہ حکومت کی جانب سے کرائی گئی یقین دہانیوں کو پورا نہیں کیا گیا۔اِن احتجاجی ممبران نے الزام عائد کیا کہ ایوان کی ہدایات پر عمل ہوتا ہے نہ حکومت کی جانب سے کرائی گئی یقین دہانیاں پوری ہوتی ہیں۔انہوں نے مزید الزام عائد کیا کہ ایوان میں سوالوں کے غلط جوابات پیش کئے جاتے ہیں۔ احتجاجی ممبران بعدازاں احتجاج کرتے ہوئے چاہِ ایوان میں داخل ہوگئے ۔اِن ممبران کو یہ کہتے ہوئے سنا گیا ‘جب ہدایات پر عمل نہیں ہوتا، یقین دہانیاں پوری نہیں کی جاتیں تو فائدہ کیا ہے ایوان میں شرکت کا’۔نیشنل کانفرنس، کانگریس کے ممبران اور ادھم پور حلقہ انتخاب سے آزاد ممبر اسمبلی پون کمار گپتا بھی اپنی سیٹوں اٹھ کھڑے ہوئے اور بی جے پی کے احتجاجی ممبران کا ساتھ دینے لگے ۔نیشنل کانفرنس ایم ایل اے علی محمد ساگر کو کہتے ہوئے سنا گیا ‘آپ اپنے ممبران کو کرائی گئی یقین دہانیاں پوری نہیں کرتے ، اپوزیشن کی تو بات ہی نہیں’۔بی جے پی ممبر جسروتیہ نے الزام عائد کیا کہ اُن سے وعدہ کیا گیا تھا کہ کٹھوعہ میں اسٹیڈیم تعمیر کیا جائے گا لیکن تاحال وعدہ وفائی نہیں ہوئی۔انہوں نے کہا کہ وہ حکومت سے جواب چاہتے ہیں۔ تاہم انہوں نے بعدازاں ایوان سے احتجاجاً واک آؤٹ کیا۔

گورنر آر بی آئی پر سبرامنیم سوامی کی ایک اور تنقید
نئی دہلی ۔ 9 جون (سیاست ڈاٹ کام) بی جے پی کے ایم پی سبرامنیم سوامی نے آر بی آئی گورنر رگھو رام راجن پر ایک اور تیر چھوڑتے ہوئے انہیں تنقید کا نشانہ بنایا اور الزام عائد کیا کہ سابق بین الاقوامی مالیاتی فنڈ کے سربراہ اور ماہر معاشیات نے ہندوستانی مالیاتی نظام میں ایک ٹائم بم نصب کیا ہے جو ڈسمبر میں پھٹ پڑے گا۔ سوامی کا کہنا ہیکہ گذشتہ مہینہ میں نے وزیراعظم نریندر مودی کو دو مرتبہ مکتوب لکھ کر راجن کی برطرفی کا مطالبہ کیا تھا اور ان کی برطرفی ملک کی معیشت کے حق میں ہے۔ ان کے دور میں شرح سود میں زبردست اضافہ ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ راگھورام راجن نے 2013ء میں ہمارے معاشی نظام میں ایک ٹائم بم نصب کیا تھا اب وہ ڈسمبر 2016ء کیلئے بھی اسی طرح کا ٹائم بم نصب کرچکے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT