Tuesday , December 12 2017
Home / ہندوستان / جمہوریت میں فیصلہ سازی کے عمل میں لوک سبھا کا اہم رول : جیٹلی

جمہوریت میں فیصلہ سازی کے عمل میں لوک سبھا کا اہم رول : جیٹلی

ایوان زیریں کا راست اور منشور کی بنیاد پر عوام کی تائید سے انتخاب عمل میں آتا ہے ۔ وزیر فینانس کا خطاب
نئی دہلی 4 ڈسمبر ( سیاست ڈاٹ کام ) راجیہ سبھا پر لوک سبھا کو سبقت حاصل رہنے کی بحث کا دوبارہ آغاز کرتے ہوئے وزیر فینانس ارون جیٹلی نے آج کہا کہ جمہوریت میں فیصلہ سازی کے عمل میں راست منتخبہ ایوان کا اہم رول ہوتا ہے کیونکہ اس ایوان کا کسی منشور پر انتخاب عمل میں آتا ہے برخلاف ایوان بالا کے ۔ ارون جیٹلی نے ہندوستان ٹائمز لیڈر شپ چوٹی کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے یہ بات کہی ۔ ارون جیٹلی نے سب سے پہلے چند ماہ قبل لوک سبھا کو راجیہ سبھا پر سبقت حاصل ہونے کی بحث شروع کی تھی ۔ اس وقت اپوزیشن جماعتوں نے راجیہ سبھا میں جی ایس ٹی بل کی منظوری کے عمل میں رکاوٹ پیدا کی تھی ۔ ارون جیٹلی نے کہا کہ ملک میں عوام نے لوک سبھا کو اختیار دیا ہے جس کا راست طور پر انتخاب عمل میں آتا ہے ۔ اس سوال پر کہ جب کرکٹ کے معاملہ میں سیاسی قائدین جماعتی وابستگی کو بالائے طاق رکھتے ہوئے اتفاق رائے پیدا کرسکتے ہیں تو سیاست کے معاملہ میں ایسا کیوں نہیں ہوسکتا ارون جیٹلی نے کہا کہ سیاست ‘ کرکٹ نہیںہے ۔ انہوں نے تاہم کہا کہ 1991 میں اصلاحات کے آغاز کے بعد سے راجیہ سبھا میں کسی بھی بل کو مستقل روکا نہیں گیا ہے ۔ انہں نے کہا کہ وہ ہندوستان میں حالات کو دیکھتے ہوئے یہ کہنے کے موقف میں ہیں کہ مستقبل میں بھی کسی بھی حکومت کو راجیہ سبھا میں ہمیشہ ہی قطعی اکثریت حاصل ہوگی ۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے پاس علاقے ہیں اور ان میں سیاسی جماعتیں ہیں ۔

یہ جماعتیں مستحکم ہیں۔ وہ لوگ اپنے اپنے علاقوں میں انتخاب جیت کر آتے ہیں ایسے میں جو لوگ مرکز میں بیٹھے ہوتے ہیں ان کیلئے کم از کم ایوان بالا کا تعلق ہے توازن کے مسائل کا شکار ہوتے ہیں۔ وزیر موصوف سے لوک سبھا کی بالا دستی اور سبقت کے تعلق سے سوال کیا گیا تھا ۔ لوک سبھا میں جی ایس ٹی بل کو منظور کرلیا گیا ہے تاہم اس کو راجیہ سبھا میں ہنوز منظوری حاصل نہیں ہوسکی ہے ۔ اپوزیشن جماعتوں نے گذشتہ پارلمانی اجلاس میں اس بل کو منظوری دلانے سے روک دیا تھا ۔ انہوں نے کہا کہ بین ایوانی تعلقات کو پیش نظر رکھتے ہوئے کئی باتوں کا خیال رکھنا پڑتاہ ے ۔ انہوں نے کہا آپ کو یہ حقیقت ذہن میں رکھنے کی ضرورت ہے کہ ایوان زیریں ( لوک سبھا ) کا راست انتخاب عمل میں آتا ہے اور جہاں تک عوامی تائید کا سوال ہے تو یہ تائید لوک سبھا کو حاصل ہوتی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ لوک سبھا کا راست اور ایک منشور پر انتخاب عمل میں آتا ہے ۔ یہ طریقہ کار راجیہ سبھا سے ہٹ کر ہے جس کا ریاستوں سے انتخاب عمل میں آتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ لوک سبھا کو عوام کی تائید اور منشور کی اہمیت حاصل ہوتی ہے اور ایوان کا راست انتخاب عمل میں آتا ہے ایسی صورت میں کسی بھی جمہوریت میں فیصلہ سازی کے عمل میں ایوان زیریںکا اہم رول رہتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ 1991 میں معاشی اصلاحات کے عمل کا آغاز ہونے کے بعد سے ایک بھی قانون ایسا نہیں رہا جسے ایوان بالا میں سرے سے مسترد کردیا گیا ہو ۔ انہوں نے کہا کہ بالآخر کسی بھی قانون کو کسی طرح کی ترمیم ‘ تبدیلی یا مشاورت کے بعد منظوری مل ہی جاتی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT