Thursday , May 24 2018
Home / اضلاع کی خبریں / جنسی ہراسانی کی روک تھام کیلئے شعور بیداری ناگزیر

جنسی ہراسانی کی روک تھام کیلئے شعور بیداری ناگزیر

نظام آباد میں منعقدہ تقریب سے ضلع کلکٹر رویندر ریڈی کا خطاب

نظام آباد :22؍ نومبر (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز)نظام آباد میں پولیس کی جانب سے لڑکیوں پر ہونے والے جنسی ہراساں کیخلاف شعور بیداری پروگرام کو انجام دیا گیا اور بڑے پیمانے پر مطالبات کے ہمراہ ریالی کا انعقاد عمل میں لایا گیا۔ اس موقع پر امبیڈ کر بھون میں ایک تقریب کا انعقاد عمل میں لایا گیا۔ اس تقریب میں ضلع انچارج کلکٹر رویندرریڈی ، پولیس کمشنر کارتیکیا نے شرکت کی ۔ کمشنریٹ کے علاقہ میں طلباء و طالبات کے ہمراہ انسانی زنجیر بنائی گئی ۔ اس موقع پر مخاطب کرتے ہوئے ضلع کلکٹر رویندرریڈی نے کہا کہ بچپن اہمیت کا حامل ہے آج کے ہونہار آنے والے مستقبل کا فیصلہ کریں گے ۔ ہونہاروں کی بہترین شہری بتانے کیلئے اقدامات کریں آئے دن طلباء پر جنسی ہراسانی میں اضافہ ہوتا جارہا ہے جس کی وجہ حالات کی تبدیلی ، ٹکنالوجی اور اخلاق کی کمی کی وجہ سے اس طرح کے واقعات پیش آرہے ہیں ۔ بین الاقوامی رپورٹ کے مطابق 19.7 فیصد لڑکیوں پر اور 7.9 فیصد جنسی ہراسانی ہورہی ہے ۔ جنسی ہراساں ہونے کے باوجود بھی بیشتر مقدمات میں رشتہ دار ملوث ہورہے ہیں 18 سال سے کم والے اطفال اور بغیر مرضی جنسی حملہ کیا گیا تو جرم کے مرتکب ہوں گے۔چند مقدمات سے ماں باپ اپنے وقار متاثر ہونے کے امکانات کو ظاہر کرتے ہوئے مسئلہ کو راز میں رکھ رہے ہیں اگر اس طرح کیا گیا تو غلط ہوگا۔ اس خصوص میں شعور بیداری ناگزیر ہے اور جنسی ہراساں کے روک تھام کیلئے اقدامات کریں اور عوام میں شعور بیدار کریں اور انہیں اس بات کی ضمانت دیں کہ حکومت ان کے تحفظ کیلئے ہر طرح کیلئے تعاون پیش کررہی ہے۔پولیس کمشنر مسٹر کارتیکیا نے اپنی تقریر میں کہا کہ اولیائے طلباء اپنے اطفال کو سماج میں بہترین شہری بنانے کیلئے ترغیب دیں کیونکہ ناخواندگی کی وجہ سے غلط اقدامات کرتے ہیں اور انہیں اچھے برے کی تمیز نہیں ہے، لہذا اس بات سے واقف کرانے کے علاوہ اپنے بچوں کے ساتھ بہتر ین سلوک کریں اگر بچوں پر جنسی ہراسانی کے واقعات پیش آئے تو اس بارے میں واقفیت حاصل کریں اور فوری اقدام کریں اور اساتذہ بھی اپنے طلباء پر نظر رکھیں ۔ ضلع میں 50 سے زائد جنسی ہراسا نی کے واقعات پیش آئے تو 5 واقعات میں مقدمات درج کئے گئے ۔ اس موقع پر ضلع لیگل سیل سکریٹری و ضلع سیول جج سوریہ چندرا کلاء نے اپنی تقریر میں کہا کہ اطفال کے حقوق کے تحفظ کیلئے عالمی سطح پر شعور بیداری ناگزیر ہے، ملک گیر سطح پر اطفال جنسی ہراساں میں مبتلا ہے اور اطفال کے قواعد کی عدم واقفیت کے بارے میں ذکر کرتے ہوئے شعور بیداری ناگزیر قرار دیا ۔ 4سال سے بھی کم اور 7 سال سے زائد عمر کے افراد پر جنسی ہراسانی کے واقعات انتہائی افسوسناک ہے ا س خصوص میں شعور بیداری ناگزیر قرار دیا اور اس طرح کے شعور بیداری پروگرام سے استفادہ حاصل کرنے کی خواہش کی ۔ اس پروگرام میں اطفال پر ہونے والے واقعات کو پائور پریزنٹیشن کے ذریعہ پیش کیا گیا۔ اس پروگرام میں اڈیشنل ڈی سی پی لاء اینڈ آرڈر این سریدھر ریڈی ، ڈی ای او رنامپلی راجیش ، ٹی ڈی پراجیکٹ ڈائریکٹر آئی سی ڈی ایس سراونتی کے علاوہ پبلک پراسیکوٹر ششی کرن ریڈی ، ڈاکٹر کویتا ریڈی ، ڈی ایم اینڈ ایچ او ڈاکٹر وینکٹ کے علاوہ دیگر نے بھی شرکت کی ۔

TOPPOPULARRECENT