Friday , September 21 2018
Home / Top Stories / جنوبی ایشیاء میں دہشت گردی پر قابو پانے ٹرمپ ۔ ژی کا اتفاق

جنوبی ایشیاء میں دہشت گردی پر قابو پانے ٹرمپ ۔ ژی کا اتفاق

پاکستان پر دہشت گرد ٹھکانوں کو تباہ کرنے کے لئے امریکہ کا شدید دباؤ

بیجنگ ۔ /9 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) چین نے آج کہا کہ صدر ژی ژپنگ اور ان کے امریکی ہم منصب ڈونالڈ ٹرمپ نے جنوبی ایشیاء میں دہشت گردی کا مقابلہ کرنے اور امن و استحکام کو برقرار رکھنے کے لئے کام کرنے سے اتفاق کیا ۔ پاکستان پر دہشت گرد ٹھکانوں کو تباہ کرنے کیلئے امریکہ کے دباؤ میں اضافہ ہوا ہے ۔ صدر امریکہ اور صدر چین نے اپنی بات چیت میں افغانستان کے بارے میں بھی غور و خوص کیا اور دہشت گرد ٹھکانوں کے مقامات پر پرامن مستقبل بنانے کی سمت کام کرنے کا عہد کیا ۔آج صبح دونوں صدور نے بات چیت کی اور مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کیا ۔ چین کی وزارت خارجہ کے ترجمان ہوچوننگ نے کہا کہ اگرچیکہ مجھے اس بات چیت کی تفصیلات کا علم نہیں ہے ۔ لیکن مجھے جو معلوم ہے اس کے مطابق دونوں قائدین نے انسداد دہشت گردی مسائل پر تبادلہ خیال کیا اور جنوبی ایشیاء میں امن و استحکام برقرار رکھنے کیلئے مشترکہ کوششوں کا عہد کیا ۔ دونوں قائدین نے اپنے اپنے طور پر اتفاق کرتے ہوئے جنوبی ایشیاء میں امن کی جانب توجہ دی ۔ ترجمان نے اس سلسلہ میں مزید کوئی وضاحت نہیں کی کہ آیا پاکستان کی جانب سے دہشت گردی بھڑکانے پر ہندوستان کی تشویش کو بھی زیر مذاکرات لایا گیا تھا ۔ انہوں نے کہا کہ دہشت گردی کا مقابلہ کرنے کے لئے چین اور امریکہ کے علاوہ دیگر ممالک نے مشترکہ مفادات کا ذکر کیا ہے اور دونوں ملکوں نے ایک مضبوط انسداد دہشت گردی گروپ بنانے کے لئے دیگر فریقین کے ساتھ مل کر کام کرنے پر رضامندی ظاہر کی ہے ۔ اس بات چیت میں جنوبی ایشیاء اور افغانستان پر خصوصی طور پر توجہ دی گئی ۔

بات چیت کے بعد ٹرمپ نے کہا کہ دہشت گردی انسانیت کے دشمن اور خطرہ ہیں اور یہ کہ وہ اور ژی مل کر اس ریاڈیکل اسلامک دہشت گردی کو روک دیں گے ۔ تمام کے لئے ایک محفوظ مستقبل بنانے کے لئے اور ہمارے شہریوں کو انتہاپسندی و دہشت گردی سے محفوظ رکھنے کے لئے صدر چین ژی اور میں نے افغانستان کے لئے ایک پرامن مستقبل لانے کے لئے مل کر کام کرنے کاعہد کیا ہے ۔ یہ دہشت گرد پوری انسانیت کے لئے خطرہ ہیں اور ہم ریاڈیکل اسلامک دہشت گردی کو روک دیں گے ۔ ڈونالڈ ٹرمپ کے یہ ریمارکس اس تناظر میں غیرمعمولی اہمیت رکھتے ہیں کہ انہوں نے نئے جنوبی ایشیاء پالیسی کو جاری کرتے ہوئے پاکستان کو خبردار کیا کہ اگر اس نے دہشت گرد تنظیموں کو محفوظ ٹھکانے فراہم کئے تو اس کے عواقب و نتائج ٹھیک نہیں ہوں گے ۔ ٹرمپ کی جنوبی ایشیاء پالیسی میں ہندوستان کو اہمیت دی جارہی ہے اور نئی دہلی کو مدعو کیا جارہا ہے کہ وہ افغانستان کی تعمیر نو میں بڑا رول ادا کرے اس پر بیجنگ اور اسلام آباد میں ناپسندیدگی کا اظہار کیا گیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT