Monday , June 25 2018
Home / شہر کی خبریں / جنگلات کی ٹیم اور چالاک جانور کے درمیان طویل آنکھ مچولی کا بالآخر اختتام

جنگلات کی ٹیم اور چالاک جانور کے درمیان طویل آنکھ مچولی کا بالآخر اختتام

اکریساٹ کیمپس میں پانچ ماہ بعد چیتہ پکڑ لیا گیا

اکریساٹ کیمپس میں پانچ ماہ بعد چیتہ پکڑ لیا گیا

حیدرآباد 24 اگست (پی ٹی آئی) حیدرآباد کے مضافات پٹن چیرو میں واقع فصلوں کی تحقیق کے بین الاقوامی ادارہ اکریساٹ کامپلکس گذشتہ پانچ ماہ قبل بھٹک کر گھس جانے کے بعد گھومنے والے چیتہ کو بالآخر آج پکڑ لیا گیا ۔ واضح رہے کہ 1,390 ہیکٹر پر محیط اکریساٹ کیمپس میں 65 تا 70 کیلو وزنی یہ چیتہ پانچ ماہ سے گھوم رہا تھا،اس کو پکڑنے کی کوششوں میں محکمہ جنگلات کے عہدیداروں کو سخت دشواریوں کا سامنا تھا کیونکہ وسیع و عریض جنگلاتی علاقہ میں روپوش چیتہ اور جنگلات کے شکاریوں کے درمیان آنکھ مچولی کا کھیل جاری تھا۔ چیف وائیلڈ لائف وارڈن (تلنگانہ) پی کے شرما نے کہا کہ ’’یہ چیتہ گذشتہ چند ماہ سے اکریساٹ کمپلکس میں گھوم رہا تھا جسے بالآخر آج صبح پکڑ لیاگیا ۔ اس جانور کو نہرو زوالوجیکل پارک منتقل کیا گیا ہے۔‘‘زو پارک کے عہدیداروں کے مطابق یہ چیتہ تقریبا 150 دن قبل اکریساٹ میں دیکھا گیا تھا۔ ویٹرنری سرجن ڈاکٹر سرینواس نے پی ٹی آئی سے کہا کہ ’’کیمپس کی بہت طویل حصار کے سبب وہ باہر نہیں نکل سکا۔ چیتہ کی نقل و حرکت پر نظر رکھنے کیلئے 16 نائیٹ کیمروں سے آراستہ پنجرے رکھے گئے تھے اس کے علاوہ 9 دیگر پنجرے مختلف مقامات پر رکھے گئے تھے لیکن ایک بڑے پنجرے کے ذریعہ چیتے کو پکڑنے کی کوششیں مرکوز رہی۔‘‘چیتہ کو محفوظ انداز میں پکڑنے کیلئے ایک ویٹرنری ڈاکٹر اور محکمہ جنگلات کے ایک عہدیدار کو مسلسل ڈیوٹی پر تعینات رکھا گیا تھا۔ علاقہ ازیں پکڑنے سے قبل کئی دن تک چیتہ کو کسی بھی ضرر سے بچانے کے علاوہ اطراف و اکناف کے علاقوں میں کسی ناگہانی واقعہ کو روکنے کے لئے بھی اقدامات کئے گئے تھے کیونکہ اطراف علاقوں میں آبادیاں ہیں۔ڈاکٹر نے کہا کہ چیتہ کو پکڑنے کے بعد زوپارک میں طبی معائنہ کیا گیا اور محکمہ جنگلات کے اعلی حکام کی ہدایت پر اس کو سری سیلم کے مارکا پورم میں واقع شیروں کی محفوظ پناہ گاہ میں چھوڑ دیا گیا ۔ اکریساٹ کے ایک عہدیدار نے کہا کہ کیمپس کے ایک سکیوریٹی گارڈ نے آج صبح یہ دیکھا تھا کہ چیتہ ایک پنجرے میں پکڑا جاچکا ہے اور فی الفور محکمہ جنگلات کے عہدیداروں کو چوکس کردیا گیا ۔ بہت اچھا ہوا کہ چیتہ بحفاظت پکڑ لیا گیا اور اس نے گذشتہ پانچ ماہ کے دوران کسی کو ضرر بھی نہیں پہنچایا‘‘ ۔

TOPPOPULARRECENT