Wednesday , January 17 2018
Home / Top Stories / جنگ بندی کی خلاف ورزیاں‘ پاکستان کے ساتھ مذاکرات ممکن نہیں

جنگ بندی کی خلاف ورزیاں‘ پاکستان کے ساتھ مذاکرات ممکن نہیں

نئی دہلی۔ 9؍نومبر (سیاست ڈاٹ کام)۔ پاکستان کو سخت ترین وارننگ دیتے ہوئے ہندوستان نے آج کہا کہ اگر جنگ بندی کی خلاف ورزیاں متواتر جاری رہیں گی تو مذاکرات نہیں ہوسکتے۔ وزیر دفاع ارون جیٹلی نے جو وزیر فینانس کا قلمدان بھی رکھتے ہیں، انڈیا گلوبل فورم کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اگر بار بار جنگ بندی کی خلاف ورزیاں ہوئیں تو مذاکرات

نئی دہلی۔ 9؍نومبر (سیاست ڈاٹ کام)۔ پاکستان کو سخت ترین وارننگ دیتے ہوئے ہندوستان نے آج کہا کہ اگر جنگ بندی کی خلاف ورزیاں متواتر جاری رہیں گی تو مذاکرات نہیں ہوسکتے۔ وزیر دفاع ارون جیٹلی نے جو وزیر فینانس کا قلمدان بھی رکھتے ہیں، انڈیا گلوبل فورم کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اگر بار بار جنگ بندی کی خلاف ورزیاں ہوئیں تو مذاکرات کے لئے موجودہ فضاء بھی مکدر ہوجائے گی۔ جیٹلی نے کہا کہ دونوں ملکوں کے درمیان بات چیت ہونی چاہئے۔ ہم اس طرح کی بات چیت کا خیرمقدم کرتے ہیں، لیکن جب فضاء ہی مذاکرات کے قابل نہ ہو تو یہ ممکن نہیں ہے۔ دونوں ملکوں کو ایسی فضاء پیدا کرنا ضروری ہے جس میں بات چیت ہوسکتی ہو۔ ان دونوں ملکوں میں سے کوئی ایک ملک ماحول کو بگاڑ نہیں سکتا۔ اگر پُرامن فضاء ہی نہ ہو تو بھی ایسی بات چیت کیوں کر ہوسکتی ہے؟ گزشتہ اگسٹ میں معتمدین خارجہ کی سطح کی بات چیت کو درہم برہم کردیا گیا تھا، کیونکہ پاکستان کے سفیر برائے ہند نے معتمدین خارجہ سطح کی بات چیت سے ایک دن قبل ہی کشمیری علیحدگی پسندوں سے ملاقات کی تھی۔ ارون جیٹلی نے کہا کہ ہم نے حلف لینے کی تقریب میں پاکستانی قیادت کو مدعو کرنے کے بعد مزید بات چیت کی پہل کی تھی اور معتمدین خارجہ سطح کی بات چیت کے لئے تیاری کرلی گئی تھی، لیکن پاکستان کے سفیر نے جموں و کشمیر میں انتخابات کو ذہن میں رکھ کر فوری طور پر علیحدگی پسند تنظیموں کے قائدین سے ملاقات کی تھی۔ ان کی اس حرکت کو یکسر ناقابل قبول متصور کیا گیا۔

اب مذاکرات کے لئے ایسی پُرامن فضاء قائم نہیں ہے۔ اس بات کی نشاندہی کرتے ہوئے کہ کشمیر میں مسائل موجود ہیں، ارون جیٹلی نے کہا کہ وادیٔ کشمیر میں صورتِ حال مجموعی طور پر پُرامن ہے اور ہم کو توقع ہے کہ وہاں پر پُرامن اسمبلی انتخابات منعقد ہوں گے۔ وادی میں فضاء کو ابتر بنانے کی کوششوں کے باوجود انتخابات کروانے کے لئے ہم پُرامن ماحول قائم رکھنے کوشاں ہیں۔ حالیہ سیلاب کی تباہ کاریوں کے بعد مسلح افواج نے بچاؤ کاری اور راحت اقدامات کئے ہیں۔ جہاں تک چین کا تعلق ہے، اس ملک کے ساتھ ہمارے معاشی تعلقات بتدریج مضبوط ہیں، دونوں ملکوں میں باہمی بے شمار سرمایہ کاری ہورہی ہے، دونوں ملکوں میں بڑے پیمانے پر تجارت ہورہی ہے، لیکن سرحدی مسئلہ کی یکسوئی کا معاملہ زیر التواء ہے۔ وزیر فینانس نے کہا کہ حکومت اراضی حصول قانون میں ترمیم لانا چاہتی ہے۔ اگر اپوزیشن نے اس سخت ترین اراضی حصول قانون کی حمایت نہیں کرتی تو اس میں ترمیم کی جائے گی۔ ہم معیشت میں اعتماد بحال کرنا چاہتے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT