Thursday , January 18 2018
Home / Top Stories / جنگ بندی کی مصری تجویز اسرائیل کو قبول ، حماس غیرمتفق

جنگ بندی کی مصری تجویز اسرائیل کو قبول ، حماس غیرمتفق

یروشلم ؍ غزہ۔ 15 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) اِسرائیل نے آج مصر کی مجوزہ جنگ بندی کو منظور کرلیا، لیکن حماس نے اسے مسترد کرتے ہوئے کہا کہ ’’9 روزہ طویل تصادم میں ہلاکتوں کی تعداد 192 ہوچکی ہے، اب جنگ بندی کو منظور کرنا ’’ہتھیار ڈالنے‘‘ کے مترادف ہوگا۔ حماس کی جانب سے جنگ بندی کی تجویز مسترد کرنے کے باوجود جو مقامی وقت کے مطابق 9 بجے صبح سے

یروشلم ؍ غزہ۔ 15 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) اِسرائیل نے آج مصر کی مجوزہ جنگ بندی کو منظور کرلیا، لیکن حماس نے اسے مسترد کرتے ہوئے کہا کہ ’’9 روزہ طویل تصادم میں ہلاکتوں کی تعداد 192 ہوچکی ہے، اب جنگ بندی کو منظور کرنا ’’ہتھیار ڈالنے‘‘ کے مترادف ہوگا۔ حماس کی جانب سے جنگ بندی کی تجویز مسترد کرنے کے باوجود جو مقامی وقت کے مطابق 9 بجے صبح سے نافذالعمل ہوچکی ہے، صلح وسیع پیمانے پر صبح سے تشدد میں کئی گھنٹے تک کمی سے نظر آرہی تھی۔ اسرائیل کی صیانتی کابینہ اور مخلوط حکومت کے وزیراعظم بنجامن نتن یاہو کی حکومت نے تاہم اس سلسلے میں منقسم فیصلہ کیا۔ مجوزہ جنگ بندی کے خلاف برہم اپوزیشن نے اور اس کے چند کلیدی قائدین نے پرزور احتجاج کیا۔ وزیر خارجہ اَوگ ڈور لبرمیان نے جنگ بندی کے منصوبہ کی مخالفت میں ووٹ دیا۔ بائت یہودی قائد نرتالی بینٹ نے بھی اس تجویز کی مخالفت میں ووٹ دیا۔ نتن یاہو،

وزیر دفاع موشے یالون، وزیر فینانس، یائرلاپڈ، وزیر انصاف زیپی لیونی اور وزراء گیلارڈ اردان اور اتھزاد ابارونووچ نے مجوزہ جنگ بندی کی تائید میں ووٹ دیا۔ مصری ذرائع ابلاغ کی خبروں کے بموجب اسرائیل اپنے فضائی اور بحری حملے جو غزہ پر جاری ہیں، روک دے گا۔ واضح طور پر غزہ پٹی میں کوئی زمینی جارحیت نہیں ہوگی۔ تجویز کے مطابق حماس ، فلسطینی گروپس کو پابند کرے گا اور اسرائیل پر ہر قسم کے حملے بشمول راکٹ حملے، سمندر سے حملے اور زیرزمین سرنگوں کے ذریعہ حملے بند کردے گا۔ اگر یہ تجویز قبول کرلی جائے تو اس کا مطلب ہتھیار ڈال دینے ہوگا۔ حماس دشمن کے خلاف جنگ میں شدت پیدا کرنی چاہتی ہے۔

حماس کے جنگی شعبہ القاسَم بریگیڈ نے اور حماس کے ترجمان فوذی برتوم نے کہا کہ مصری جنگ بندی کی پیشکش ناقابل قبول ہے۔ انہوں نے کہا کہ کسی معاہدہ کے بغیر جنگ بندی کا دوران جنگ سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔ آپ فائرنگ کرسکتے ہیں اور اس کے بعد بھی مذاکرات کا آغاز ہوسکتا ہے۔ حماس کے سیاسی شعبہ کے رکن عزت رشو نے مقامی اخبارات کے نمائندوں سے کہا کہ مصری پہل پر حماس، اسلامی جہاد یا کسی دیگر تنظیم سے تبادلہ خیال نہیں کیا گیا۔ 1,000 سے زیادہ فلسطینی بشمول خواتین و بچے جنگ کے آغاز سے اب تک زخمی ہوچکے ہیں۔ فلسطین کی وزارت ِ صحت نے کہا کہ تاحال جنگ میں کسی فلسطینی کے ہلاک ہونے کی اطلاع نہیں ہے ۔

TOPPOPULARRECENT