Monday , November 20 2017
Home / ہندوستان / جواہر لال نہرو یونیورسٹی عہدیداروں کا اجلاس

جواہر لال نہرو یونیورسٹی عہدیداروں کا اجلاس

طلبہ کے بارے میں قطعی موقف اختیار کرنے وائس چانسلر سے طلبہ اور اساتذہ کی اپیل

نئی دہلی۔ 22 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) جواہر لال نہرو یونیورسٹی کے انتظامیہ نے اعلیٰ سطحی ملازمین کا ایک اجلاس طلب کیا ہے جس میں یونیورسٹی کے احاطہ میں پانچ طلبہ کی خودسپردگی پر غور کیا جائے گا جن کی پولیس کو غداری کے الزام میں تلاش ہے۔ پولیس عہدیداروں نے جو یونیورسٹی کے احاطہ کے باہر کل رات سے ہی تعینات ہیں، کیونکہ انہیں اطلاع ملی تھی کہ طلبہ احاطہ کے اندر ہی موجود ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ وائس چانسلر سے اجلاس کے بعد اس سلسلہ میں بات چیت کریں گے اور ان سے خواہش کریں گے کہ طلبہ کو خودسپردگی کی ہدایت دی جائے۔ جواہر لال نہرو یونیورسٹی کے رجسٹرار بھوپیندر زتشی نے کہا کہ انہیں طلبہ کی احاطہ میں موجودگی کی اطلاع اخبارات سے ہی ملی ہے۔ انہیں اس کے بارے میں کوئی علم نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا ایک اجلاس طلب کیا گیا ہے جس میں مستقبل کے لائحہ عمل کا فیصلہ کیا جائے گا۔ پولیس عہدیداروں نے کہا کہ وہ چاہتے ہیں کہ وائس چانسلر طلبہ کو پولیس کے سامنے خودسپردگی کی ہدایت دیں۔ دریں اثناء یونیورسٹی طلبہ اور اساتذہ نے آج وائس چانسلر سے اپیل کی کہ وہ پانچ طلبہ کی تائید کا موقف اختیار کریں جن کی غداری کے مقدمہ کے سلسلہ میں پولیس کو تلاش ہے اور جو 10 دن تک مفرور رہنے کے بعد یونیورسٹی کے احاطہ میں دیکھے گئے ہیں۔ شہلا رشید شعراء نائب صدر یونیورسٹی طلبہ یونین نے ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ یہ طلبہ صرف اسی لئے روپوش تھے کیونکہ انہیں خوف تھا کہ ہجوم زدوکوب کرکے انہیں ہلاک کردے گا۔ انہیں یقین ہیکہ یونیورسٹی کے احاطہ میں معمول کے حالات بحال ہوچکے ہیں اس لئے وہ یونیورسٹی میں نمودار ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یونین چاہتی ہے کہ وائس چانسلر اسی طرح کا موقف اختیار کریں جیسا کہ جادھو پور یونیورسٹی اور علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کی جانب سے اختیار کیا گیا ہے۔ ان دونوں یونیورسٹیوں کے وائس چانسلرس نے پولیس کو یونیورسٹی کے احاطہ میں داخلہ کی اجازت نہیں دی تھی۔ یونین نے کہا کہ انتظامیہ نے اجلاس کے انعقاد کیلئے ان سے کوئی ربط پیدا نہیں کیا ہے۔ شہلا نے کہا کہ اگر وہ چاہتے ہیں کہ ہم بھی ان طلبہ کو پولیس کے حوالے کرنے کی ذمہ داری میں شرکت کریں تو ہم ان کی ہدایت کی تعمیل نہیں کریں گے۔ اساتذہ اسوسی ایشن کے ایک ہنگامی اجلاس میں جو آج منعقد کیا گیا تھا، قرارداد منظور کرتے ہوئے مطالبہ کیا ہیکہ یونیورسٹی کے داخلی انتظامیہ کو تحقیقاتی کمیٹی کی تنظیم جدید کے بعد لائحہ عمل طئے کرنے کی اجازت دی جانی چاہئے۔ قرارداد میں اپیل کی گئی ہیکہ انتظامیہ کمیٹی کے اجلاس پر سازگار ماحول پیدا کرے تاکہ طلبہ کی مدد ہوسکے۔ صدر یونیورسٹی طلبہ یونین اجئے پٹنائک نے اخباری نمائندوں سے کہا کہ اگر عدلیہ کی اہم شخصیات بھی کہیں کہ غداری کا المام منوانے نہیں لگایا جانا چاہئے اور وہ بھی نعرہ بازی کرنے والے طلبہ پر تو ہم چاہتے ہیں کہ یونیورسٹی خود اپنا موقف طئے کریں اور ان الزامات کیح تنسیخ کروائے۔

TOPPOPULARRECENT