Tuesday , December 18 2018

جوہری مذاکرات میں پیشرفت ہوئی : ایرانی وزیر خارجہ

ویانا ، 10 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) ایرانی وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ تہران اور عالمی طاقتوں کے مابین مجوزہ جوہری معاہدہ کی جزئیات کو حتمی شکل دینے پر پچاس سے ساٹھ فیصد تک اتفاق رائے ہو گیا ہے۔ امریکی خبر رساں ادارہ ’اے پی‘ نے ایرانی وزیر خارجہ محمد جواد ظریف کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے مستقل پانچ رکن ممالک ا

ویانا ، 10 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) ایرانی وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ تہران اور عالمی طاقتوں کے مابین مجوزہ جوہری معاہدہ کی جزئیات کو حتمی شکل دینے پر پچاس سے ساٹھ فیصد تک اتفاق رائے ہو گیا ہے۔ امریکی خبر رساں ادارہ ’اے پی‘ نے ایرانی وزیر خارجہ محمد جواد ظریف کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے مستقل پانچ رکن ممالک اور جرمنی کے ساتھ منعقدہ مذاکرات کے تازہ دور میں انتہائی اہم پیشرفت ہوئی ہے۔ دو روزہ مذاکرات کے بعد یہاں بروز چہارشنبہ ظریف نے صحافیوں کو بتایا کہ فریقوں کے مابین اختلافات دور ہوئے ہیں اور معاملت کو حتمی شکل دینے کے سلسلے میں پچاس تا ساٹھ فیصد نکات پر اتفاق رائے پیدا ہو چکا ہے۔

یہ امر اہم ہے کہ عالمی طاقتوں اور ایران کے مابین چھ ماہ کی ابتدائی معاملت جولائی میں ختم ہورہی ہے، اس لئے فریقوں کی کوشش ہے کہ جلد از جلد طویل المدتی معاملت کے ابتدائی مسودے پر اتفاق کر لیا جائے۔ مغربی ممالک کی طرف سے ان مذاکرات کی سربراہ کیتھرین ایشٹن نے کہا ہے کہ ایران کے ساتھ ابتدائی مذاکراتی عمل کے بعد اب فریقین حتمی سمجھوتے کی راہ میں حائل باقی ماندہ اختلافات کو دور کرنے کے موقف میں آ چکے ہیں۔ مذاکرات کے اس تازہ دور کے بعد یورپی یونین کے خارجہ امور کی سربراہ ایشٹن نے مزید کہا کہ ایرانی وفد کے ساتھ گفتگو ’تفصیلی اور بامعنی‘ رہی۔ تاہم انھوں نے خبردار کیا
کہ اختلافات کو دور کرنے کیلئے ابھی مزید کام کرنے کی ضرورت ہے۔ ان مذاکرات کا مقصد ایران کو نیوکلیر اسلحہ حاصل کرنے سے روکنا ہے، جس کے جواب میں اس پرعائد پابندیوں میں نرمی کی جائے گی۔ ادھر امریکی صدر براک اوباما کے نظم و نسق کی ایک اعلیٰ عہدہ دار نے کہا ہے کہ عالمی طاقتوں اور ایران کے مابین سو فیصد اتفاق رائے کے بعد ہی حتمی معاملت ممکن ہو سکے گی۔ انھوں نے اپنا نام مخفی رکھنے کی شرط پر اے پی کو بتایا کہ ابھی اس معاملت کو قطعیت دینے میں کچھ وقت لگے گا۔

ایران نیوکلیر پروگرام ترک نہیں کریگا : خامنہ ای
دریں اثناء ایران کے سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای نے چہارشنبہ کو ہی کہا کہ ایران اپنا نیوکلیر پروگرام ترک نہیں کرے گا۔ تہران میں ملکی جوہری سائنسدانوں کے ایک اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے خامنہ ای نے مزید کہا کہ ایران نے عالمی طاقتوں سے اپنے جوہری پروگرام پر اس لئے مذاکرات شروع کئے ہیں تاکہ واضح کیا جا سکے کہ وہ جوہری ہتھیاروں کی تیاری نہیں چاہتا۔ اسرائیل اور مغربی ممالک کو اندیشہ ہے کہ ایران اپنے جوہری پروگرام سے ایٹمی ہتھیار تیار کرنا چاہتا ہے ۔ تاہم تہران حکومت ایسے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہتی ہے کہ اس کا نیوکلیر پروگرام پر امن مقاصد کیلئے ہے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT