Thursday , November 23 2017
Home / Top Stories / جکارتہ میں دھماکے، 5 حملہ آور اور 7 ہلاک

جکارتہ میں دھماکے، 5 حملہ آور اور 7 ہلاک


جکارتہ ۔ 14 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) انڈونیشیاء کے دارالحکومت جکارتہ میں اسٹار بکس کیفے اور شاپنگ علاقہ میں دولت اسلامیہ کے حملہ آوروں نے کئی دھماکے کئے۔ اس کے بعد پولیس کے ساتھ گھمسان کی لڑائی اور فائرنگ کا تبادلہ عمل میں آیا۔ اس لڑائی میں 5 حملہ آور اور 2 شہری ہلاک ہوئے۔ بلند عمارتوں سے اس دہشت گرد کارروائی کا آفس میں کام کرنے والوں نے مشاہدہ کیا۔

قصرصدارت اور امریکی سفارتخانہ کو جانے والی سڑکوں پر پولیس اور دہشت گردوں کے درمیان جھڑپ ہوئی۔ پولیس کا کہنا ہیکہ اس کارروائی میں 5 حملہ آور اور 2 شہری ہلاک ہوئے ہیں۔ اس خطرناک حملے میں 10 افراد زخمی ہوئے۔ حالیہ ہفتوں میں انٹلی جنس نے اس طرح کے حملوں کے امکانات کی اطلاع دی تھی۔ دولت اسلامیہ کی جانب سے بڑے حملے کرنے کے منصوبوں کی بھی پولیس کو اطلاع دی تھی لیکن یہ واضح نہیں ہوا کہ حملہ آوروں کی دیگر ٹولیاں گرفتار کی گئی ہیں یا نہیں۔ قصرصدارت اور امریکی سفارتخانہ سے تھوڑی ہی دور پیش آئے اس پانچ گھنٹے کی گھمسان لڑائی کے دوران شہریوں کو بہ نظر جنگ میدان نظر آرہا تھا۔ پولیس نے سرینا شاپنگ مال کے علاقہ کو محفوژظ قرار دیا۔ جکارتہ پولیس کے ترجمان کرنل محمد اقبال نے کہا کہ ہم کو یقین ہیکہ اب سرینا علاقہ میں اب مزید کوئی حملہ آور نہیں ہے۔ ہم نے اس علاقہ کو اپنے کنٹرول میں لے لیا ہے۔ قومی پولیس کے ترجمان نے کہا کہ یہ حملے بم اور بندوقوں کے ساتھ کئے گئے۔ ان حملوں کی نوعیت حالیہ برس حملوں کی طرح تھی اور دولت اسلامیہ کی جانب سے کئے جانے کا اندیشہ ظاہر کیا جارہا ہے۔ 2009ء کے بعد سے انڈونیشیا کے دارالحکومت جکارتہ میں یہ سب سے بڑا حملہ ہے۔ 2009ء میں دو ہوٹلوں میں حملے کئے گئے تھے

جس میں 7 افراد ہلاک اور زائد از 50 زخمی ہوئے تھے۔ ان حملوں کو پیرس طرز کے حملے کہا جارہا ہے۔ انڈونیشیاء میں دولت اسلامیہ کے بڑھتے اثرات کا واضح اشارہ مل رہا ہے۔ کینیڈا کی وزارت خارجہ نے کہا کہ انڈونیشیا کے عہدیداروں نے کینیڈا کے ایک شہری کی ہلاکت کی اطلاع دی ہے۔ بیروت سے موصولہ اطلاع کے بموجب دولت اسلامیہ نے اپنے ویب سائیٹ پر شائع شدہ ایک بیان میں اس حملہ کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے کہا کہ داعش کے 4 جنگجوؤں نے بم حملے کئے تھے۔ اقوام متحدہ کے جنرل سکریٹری بانکی مون نے اس ہلاکت خیز خودکش بم حملہ کی شدید مذمت کی۔ انہوں نے مہلوکین کے ارکان خاندان سے اظہار تعزیت کیا اور زخمیوں کی عاجلانہ صحت یابی کی خواہش ظاہر کی ۔

TOPPOPULARRECENT