Monday , December 11 2017
Home / اضلاع کی خبریں / جگتیال کو ماڈل ضلع بنانے کیلئے 150 کروڑ روپئے کی منظوری

جگتیال کو ماڈل ضلع بنانے کیلئے 150 کروڑ روپئے کی منظوری

رکن پارلیمان کے کویتا کا مصروف دورہ اور پریس کانفرنس سے خطاب
جگتیال /7 اپریل ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز ) جگتیال ضلع کو ایک خوبصورت اور ماڈل ضلع بنانے کیلئے کے ٹی آر کی جانب سے 150 کروڑ کی منظوری 17 اپریل کو جگتیال منی اسٹیڈیم میں بڑے پیمانے پر عوامی جلسہ جناہیتا پراگنی کا انعقاد جلسہ کو کامیاب بنانے کی اپیل ۔ فنڈس کی منظوری پر ریاستی وزیر انفارمیشن ٹیکنالوجی کے ٹی آر سے اظہار تشکر کیا ۔ ان خیالات کا ا ظہار رکن پارلیمنٹ نظام آباد شریمتی کے کویتا آج جگتیال میں مختلف ترقیاتی کاموں کی افتتاحی تقریب شرکت کے موقع پر ایس آر ایس پی گیسٹ ہاوز جگتیال میں صحافیوں کی منعقدہ پریس کانفرنس میں مخاطب کرتے ہوئے کیا ۔ اس موقع پر ان کے ہمراہ ریاستی حکومت چیف وہپ کوپلہ ایشور اور کورٹلہ حلقہ رکن اسمبلی ودیا ساگر راؤ اور حلقہ جگتیال ٹی آر ایس انچارج ڈاکٹر ایم سنجے کمار نے بھی میڈیا کو مخاطب کرتے ہوئے کے ٹی آر کا ضلعی عوام کی جانب سے اظہار تشکر پیش کیا ۔ اس موقع پر کے کویتا نے مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ جگتیال ضلع کے قیام کے بعد عوام میں جو سونچ تھی کے ضلع ترقی کرے گا اسی کو مدنظر رکھتے ہوئے کے ٹی آر نے بغیر کسی مطالبہ اور نمائندگی کے اس کی ترقی اور خوبصورت بنانے جگتیال ضلع کے تین بلدیہ جات جگتیال کورٹلہ ، مٹ پلی بلدیہ کو فی کس 50 کروڑ روپئے کے فنڈس منظور کئے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ ٹی آر ایس کی رکنیت سازی میں عوام بڑھ چڑھ کر ممبر شپ حاصل کر رہے ہیں ۔ ریاست میں سابق میں 50 لاکھ رکنیت سازی عمل میں آئی تھی ۔ اس بار 75 لاکھ کے نشانے کو بھی عبور کرلیا گیا ہے ۔ جگتیال مینگو مارکٹ میں بنیادی سہولتیں نہ ہونے اور مارکٹ میں ہی خریداری اور پیاکنگ کے ضلع کلکٹر احکامات سے تاجرین کو درپیش مشکلات کے سوال پر انہوں نے کہا کہ تلنگانہ کے قیام کے بعد مینگو مارکٹ کی ترقی کیلئے اقدامات کئے جارہے ہیں اور یہاں کی عمدہ کوالٹی آم کو دوسری ریاستوں اور ممالک میں مختلف نام لگاکر فروخت کیا جارہا ہے ۔ لہذا اب ایسا نہیں ہوگا جگتیال زرعی مارکٹ سے نکلنے والا آم پر جگتیال مینگو کا لیبل اسٹکر لگا ہوا اور دوسرے ریاستوں اور ممالک میں اسی نام سے فروخت ہوگا ۔ مینگو مارکٹ کی ترقی کیلئے اقدامات کئے جارہے ہیں ۔ اس کو سیاسی رنگ نہ دینے اور زرعی مارکٹ فیس کو ادا کرتے ہوئے اس کی آمدنی میں اضافہ کرنے کی خواہش کی ۔ اس موقع پر کوپلہ ایشور نے مخاطب کرتے ہوئے ریاستی حکومت فلاحی و ترقیاتی اقدامات کر رہی ہے ۔ کے ٹی آر نے بغیر کسی مطالبے فنڈس کی منظوری پر اظہار تشکر پیش کیا ۔ کویتا نے کہا کہ کورٹلہ شہر میں زرعی مارکٹ نہیں ہے لہذا وہاں پر مارکٹ فیس ادا کرتے ہوئے باہر ڈالنے گئے منڈیوں میں اس سال خریداری کو جاری رکھنے کی بات کہی ۔ آئندہ سال مارکٹ کے قیام کا تیقن دیا ۔ قبل ازیں کے کویتا نے میڈپلی میں ایک فنکشن ہال کے افتتاحی تقریب میں شرکت کی ۔ بعد ازاں تاٹپلی موضع میں سب اسٹیشن کا افتتاح انجام دیا ۔ اس کے بعد انہوں نے جگتیال ویروپکٹی گارڈن میں حکومت کی جانب سے 50 فیصد سبسیڈی پر 38 کسانوں میں ٹریکٹرس کو تقسیم کیا اور اس موقع پر انہوں نے جگتیال زرعی مینگو مارکٹ کی جانب سے تیار کردہ جگتیال مینگو لیبل اسٹیکر کا رسم اجراء انجام دیا ۔ پریس کانفرنس کے بعد وہ رائیکل منڈل میں گرام پنچایت کے 9 عمارتوں کا منڈل پریشد عمارت میں افتتاح کیلئے روانہ ہوئی اور اس کے بعد زرعی مارکٹ کمیٹی کے حلف برداری پروگرام میں شرکت بعد ازاں سارانگاپور منڈل پریشد آفس میں سات گرام پنچایت عمارتوں کا سنگ بنیاد انجام دیں گی ۔ اس موقع پر ان کے ہمراہ مارکفیڈ چیرمین باپوریڈی اور جگتیال کے مختلف قائدین عبدالقادر مجاہد ، ٹاون پریسیڈنٹ ، محمد جنید ، اور زرعی مارکٹ چیرمین شیلم پرینکہ اور زیڈ پی ٹی سی پنڈم لکشمی اور دیگر موجود تھے ۔

TOPPOPULARRECENT