Wednesday , January 17 2018
Home / شہر کی خبریں / جگن موہن ریڈی،صدر وائی ایس آر کانگریس دوبارہ منتخب

جگن موہن ریڈی،صدر وائی ایس آر کانگریس دوبارہ منتخب

حیدرآباد /2 فروری (سیاست نیوز) صدر وائی ایس آر کانگریس و رکن پارلیمنٹ وائی ایس جگن موہن ریڈی نے الزام عائد کیا کہ مرکزی حکومت محض ووٹوں اور نشستوں کے حصول کے لئے ایک شاندار، تیز رفتار ترقی یافتہ سنہرے آندھرا پردیش کو تقسیم کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ ضلع کڑپہ کے ایڈوپالا پایہ میں وائی ایس آر کانگریس کے پلینری سیشن میں دوبارہ بلامقابلہ صد

حیدرآباد /2 فروری (سیاست نیوز) صدر وائی ایس آر کانگریس و رکن پارلیمنٹ وائی ایس جگن موہن ریڈی نے الزام عائد کیا کہ مرکزی حکومت محض ووٹوں اور نشستوں کے حصول کے لئے ایک شاندار، تیز رفتار ترقی یافتہ سنہرے آندھرا پردیش کو تقسیم کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ ضلع کڑپہ کے ایڈوپالا پایہ میں وائی ایس آر کانگریس کے پلینری سیشن میں دوبارہ بلامقابلہ صدر وائی ایس آر کانگریس انتخاب عمل میں آنے کے بعد اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے مسٹر وائی ایس جگن موہن ریڈی نے کہا کہ 16 ماہ تک انھیں غیر ضروری طورپر جیل میں رکھا گیا، لیکن ان کے خلاف جو الزامات عائد کئے گئے تھے،

انھیں ثابت نہیں کئے گئے، اس طرح مرکزی و ریاستی حکومتیں ان کا کچھ نہیں کرسکیں۔ انھوں نے کہا کہ انھیں خواہ کتنی ہی تکالیف و مشکلات پیش ہوں، پارٹی قائدین نہ صرف پارٹی کو بلکہ ان کو بچانے اور ان کا پورا پورا ساتھ دینے کے لئے صف آرا رہے۔ صدر وائی ایس آر کانگریس نے کانگریس اور تلگودیشم کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ صدر تلگودیشم این چندرا بابو نائیڈو نے کانگریس پارٹی کے ساتھ مل کر وائی ایس آر کانگریس کو نقصان پہنچانے کے لئے مبینہ طورپر ساز باز کرلیا ہے۔ مسٹر جگن موہن ریڈی نے چیف منسٹر این کرن کمار ریڈی پر الزام عائد کیا کہ ان کے (جگن موہن ریڈی کے) والد ڈاکٹر وائی ایس راج شیکھر ریڈی کی شروع کردہ ’’راجیو آروگیہ شری‘‘ اسکیم تقریباً ختم کردی گئی ہے، جب کہ راجیو آروگیہ شری اسکیم عوام بالخصوص غریب اور متوسط طبقات کے لئے کافی فائدہ بخش ثابت ہوئی تھی اور عوام اس اسکیم کے ذریعہ طبی سہولتیں حاصل کرکے کافی خوش تھے۔

انھوں نے چیف منسٹر کی زیر قیادت حکومت پر اپنی شدید برہمی کا اظہار کرتے ہوئے راجیو آروگیہ شری اسکیم کے ذریعہ غریب عوام کو بہتر طبی سہولتوں کی فراہمی پر زور دیا۔ برقی شرحوں میں اضافہ کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ مسٹر کرن کمار ریڈی کی زیر قیادت ریاستی حکومت نے برقی شرحوں میں اضافہ کرنے کروڑہا روپیوں کا مالی بوجھ غریب عوام پر عائد کیا ہے۔ مسٹر جگن موہن ریڈی نے اپنے اس عزم کا اظہار کیا کہ آئندہ چار ماہ میں وائی ایس آر کانگرس پارٹی ریاست میں برسر اقتدار آئے گی اور اقتدار حاصل کرنے کے ساتھ ہی معمرین کو دیئے جانے والے پنشن کی رقم کو بڑھا کر 700 روپئے کردینے کا اظہار کیا اور اس بات کا تیقن دیا کہ طلباء کی فیس ری ایمبرسمنٹ میں اضافہ کیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ بہر صورت وائی ایس آر کانگریس پارٹی برسر اقتدار آنے پر طلباء کو تعلیم کے زیادہ سے زیادہ مواقع فراہم کرے گی۔ مسٹر وائی ایس جگن موہن ریڈی نے واضح طور پر کہا کہ وائی ایس آر کانگریس پارٹی پر انحصار کرنے والی مرکزی حکومت تشکیل دی جائے گی متحدہ ریاست کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ سیما آندھرا اور تلنگانہ متحد طور پر مل کر رہنا ہی متحدہ ریاست ہے لیکن محض نائب صدر کانگریس پارٹی مسٹر راہول گاندھی کو وزارت اعظمی کے عہدے پر فائز کرنے کیلئے ہی ریاست آندھرا پردیش کو تقسیم کرنے کے کانگریس پارٹی ہائی کمان و مرکزی حکومت اقدامات کررہی ہے

جبکہ ریاست متحد رہنے پر ہی نہ صرف ہر لحاظ سے ترقی کرسکے گی بلکہ نوجوانوں کو ملازمتوں و روزگار کے مواقع حاصل ہوسکیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ غریب عوام کی بہتری و ترقی کیلئے کئی اقدامات کئے جائیں گے کہ صرف اور صرف وائی ایس آر کانگریس پارٹی کے ذریعہ ہی کئے جاسکیںگے۔ صدر وائی ایس آر کانگریس پارٹی نے مسٹر چندرا بابو نائیڈو اور مسٹر این کرن کمار ریڈی کو حدف ملامت بناتے ہوئے کہا کہ دونوں ہی قائدین متحدہ ریاست کا نقاب اوڑھ کر ڈرامہ بازی کررہے ہیں۔ انہوں نے استفسار کیا کہ ریاست کو متحد رکھنے کیلئے مسٹر چندرا بابو نائیڈو اور مسٹر کرن کمار ریڈی نے اب تک کیا اقدامات کئے لیکن اب آخری مرحلہ میں متحدہ ریاست کا دونوں ہی قائدین واویلا مچا رہے ہیں انہوں نے کہا کہ متحدہ ریاست کو برقرار رکھنے والے قائد کو ہی وزیر اعظم بنانے کی پر زور اپیل کی۔

TOPPOPULARRECENT