Monday , December 11 2017
Home / شہر کی خبریں / جگن موہن ریڈی کو پسماندہ طبقات کی بہبود پر بات کرنے کا حق نہیں

جگن موہن ریڈی کو پسماندہ طبقات کی بہبود پر بات کرنے کا حق نہیں

فلاح و بہبود پر مباحث کا چیالنج ، کے اچن نائیڈو وزیر اے پی کی پریس کانفرنس
حیدرآباد ۔ 25 ۔ اکٹوبر : ( سیاست نیوز ) : وزیر محنت و روزگار آندھرا پردیش مسٹر کے اچن نائیڈو نے صدر وائی ایس آر کانگریس پارٹی و قائد اپوزیشن آندھرا پردیش قانون ساز اسمبلی مسٹر وائی ایس جگن موہن ریڈی کو ہدف ملامت بنایا اور کہا کہ پسماندہ طبقات کی بہبود کے تعلق سے بات کرنے کا مسٹر جگن موہن کو کوئی اخلاقی حق ہی حاصل نہیں ہے اور انہیں مشورہ دیا کہ وہ پسماندہ طبقات کے تعلق سے صرف زبانی ہمدردی کے ذریعہ اپنے سیاسی مفادات حاصل کرنے کی کوشش کرنے سے گریز کرنے کا مشورہ دیا ۔ مسٹر اچن نائیڈو اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے وائی ایس آر کانگریس پارٹی صدر و قائد اپوزیشن آندھرا پردیش کو پسماندہ طبقات کی فلاح و بہبود کے مسئلہ پر مباحث کے لیے چیلنج کیا اور کہا کہ ریاست کے بیاک ورڈ کلاسیس ( پسماندہ طبقات ) کی فلاح و بہبود کے مسئلہ پر مباحث کے لیے از خود ( اچن نائیڈو ) وائی ایس آر کانگریس پارٹی آفس آئیں گے ۔ آیا مسٹر جگن موہن ریڈی مباحث کے لیے تیار ہیں ؟ وزیر موصوف نے کہا کہ حقیقت تو یہ ہے کہ پسماندہ طبقات کی ہر لحاظ سے فلاح و بہبودی اقدامات کرنے کا اعزاز صرف اور صرف تلگو دیشم پارٹی کو ہی حاصل ہے اور ریاست میں تلگو دیشم پارٹی کے سال 1983 میں اقتدار حاصل کرنے سے پہلے آندھرا پردیش میں پسماندہ طبقات کی حالت انتہائی ابتر تھی ۔ لیکن تلگو دیشم پارٹی کے آندھرا پردیش میںبرسر اقتدار آنے کے بعد ہر شعبہ میں پسماندہ طبقات کو اولین ترجیح دی گئی اور فلاح و بہبودی اقدامات کیے گئے ۔ یہاں تک کہ ادارہ جات مقامی میں پسماندہ طبقات کو زیادہ سے زیادہ تحفظات فراہم کئے گئے بلکہ کئی عہدوں پر پسماندہ طبقات کے قائدین کو نمائندگی دی گئی ۔ اس طرح جگن موہن ریڈی پسماندہ طبقہ کی فلاح و بہبود کے تعلق سے بات کرنے کے اہل بھی نہیں ہیں اور مسٹر جگن موہن ریڈی پسماندہ طبقات کے تعلق سے صرف مگرمچھ کے آنسو بہانے اور سیاسی مفادات کے حصول کے لیے کوشاں ہیں ۔ علاوہ ازیں آندھرا پردیش میں پسماندہ طبقات مسٹر وائی ایس جگن موہن ریڈی کی زبانی ہمدردیوں پر ہرگز کوئی بھروسہ و یقین کرنے والے نہیں ہیں ۔۔

TOPPOPULARRECENT