Tuesday , December 12 2017
Home / شہر کی خبریں / جھلسادینے والی دھوپ سے خطرناک شعاعوں کا اخراج

جھلسادینے والی دھوپ سے خطرناک شعاعوں کا اخراج

الٹرا وائیلٹ ریزسے انسانی جلد متاثر ، عوام کو حکومت کا انتباہ
حیدرآباد۔23مئی (سیاست نیوز) گرما کے آخری حصہ میں مزید شدید گرمی کا شہریوں کو سامنا رہے گا۔ گرمی کی شدید شعاعیں شہریوں کو متاثر کرے گی ان شعاعوں سے بچنا انتہائی ضروری ہے۔ حیدرآباد میں گرمی کی شدت میں مزید اضافہ شہریوں کیلئے وبال جان بن سکتا ہے اسی لئے گرما کے ان آخری ایام میں بہت زیادہ احتیاط کی ضرورت ہے۔ تلنگانہ کے تمام اضلاع میں ایک مرتبہ پھر گرمی کی لہر میں شدت پیدا ہوتی جا رہی ہے۔ گرم ہواؤں سے بچنے کیلئے ریاست گیر سطح پر حکومت کی جانب سے انتباہ جاری کیا جا چکا تھا اور اب مزید گرمی میں اضافہ کے ساتھ حالات اور زیادہ ابتر ہونے کا خدشہ ہے۔ شہرمیں ایک مرتبہ پھر سے درجہ حرارت 42تک پہنچ چکا ہے۔ ماہرین موسمیات کا کہنا ہے کہ ریاست میں اس مرتبہ گرمی کے ساتھ گرم ہواؤں کے سبب الٹرا وائلیٹ شعاعیں بڑھ چکی ہیں جو کہ انسانی جسم کے لئے انتہائی خطرناک ثابت ہو سکتی ہیں اسی لئے ان شعاعوں سے بچنا بے حد ضروری ہے۔ موسم میں آرہی اچانک تبدیلیوں کے متعلق ماہرین موسمیات کا کہنا ہے کہ یہ غیر معمولی تبدیلیاں ان شعاعوں پر اثر انداز نہیں ہو پائیں گی۔ بتایا جاتا ہے کہ آئندہ دنوں میں دن کے وقت درجہ حرارت میں ہونے والے اضافے سے یو ۔وی شعاعیں مزید خطرناک صورت اختیار کر جائیں گی اور یہ شعاعیں انسانی جلد کو متاثر کر سکتی ہیں اسی لئے ان شعاعوں سے بچنے کی احتیاطی تدابیر اختیار کیا جانا ضروری ہے۔ گزشتہ ہفتہ شہر میں سورج سے نکلنے والی یہ شعاعیں 13سے تجاوز کر گئی تھیں جو کہ معمول سے کافی حد تک زیادہ ہیں۔ سورج سے راست زمین پر پہنچنے والی یہ شعاعیں انسانی جلد کو جھلسانے والی ثابت ہوتی ہیں اور ان شعاعوں کے مضر اثرات رونما ہوتے ہیں۔ ماہرین موسمیات اور ڈاکٹرس نے عوام کو مشورہ دیا ہے کہ وہ دھوپ کے چشمے اور فل آستین کے کپڑے زیب تن کریں تاکہ ان خطرناک شعاعوں سے بچا جا سکے۔ یہ شعاعیں جلد کو جھلسانے کے ساتھ جلد کے سرطان جیسے موذی مرض کا بھی سبب بن سکتی ہیں آئندہ چندیوم کے دوران شدت اختیار کرنے والی گرمی کے متعلق کہا جا رہا ہے کہ یہ گرما کے آخری ایام موسم گرما کے آغاز سے زیادہ گرم ہوسکتے ہیں یا درجہ حرارت میں کمی کے باوجود دھوپ کی تپش میں اضافہ ریکارڈ کیا جا سکتا ہے۔ محکمہ موسمیات کی جانب سے ان خدشات کے متعلق حکومت کو واقف کروایا جا چکا ہے اور ساتھ میں عوام سے بھی خواہش کی جا رہی ہے کہ وہ سخت دھوپ کے وقت بلا ضرورت باہر نہ نکلیں تاکہ ان شعاعوں کے مضر اثرات سے خود کو محفوظ رکھ سکیں۔

TOPPOPULARRECENT