Sunday , November 19 2017
Home / Top Stories / جیویلرس کی ہڑتال سے روزانہ 150 ملین ڈالر نقصان

جیویلرس کی ہڑتال سے روزانہ 150 ملین ڈالر نقصان

ایک فیصد ڈیوٹی واپس لینے کا مطالبہ ، عالمی سطح پر سونے کی طلب میں اضافہ
نئی دہلی ۔ 10 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) مرکزی بجٹ میں ایک فیصد ڈیوٹی کا اعلان کرنے کے خلاف ہندوستان بھر کے جیویلرس نے احتجاج شروع کیا ہے۔ اس ایک فیصد ڈیوٹی کو واپس لینے کا مطالبہ کرتے ہوئے بعض شہروں میں غیرمعینہ مدت کی بھوک ہڑتال شروع کی جارہی ہے۔ جیویلرس کی ہڑتال سے روزانہ تقریباً 150 ملین ڈالر کا نقصان ہورہا ہے۔ جیویلرس نے اپنے احتجاج میں شدت لانے کا فیصلہ کیا اور یہ احتجاج دوسرے ہفتہ میں داخل ہوگیا ہے۔ آل انڈیا جیمس اینڈ جیویلری ٹریڈ فیڈریشن کے مطابق تمام دکانات بند رہیں گے اور یہ احتجاج اس وقت تک جاری رہے گا تاوقتیکہ حکومت ایک فیصد ڈیوٹی واپس لا لیں۔ فیڈریشن کے ڈائرکٹر نے بتایا کہ احتجاج میں مزید شدت پیدا کی جائے گی۔ وزیرفینانس ارون جیٹلی نے زیورات پر لیوی کا اعلان کیا ہے اور ملک کے اندر فبروری 29 سے جو سونا فروخت کیا جائے گا اس پر بھی لیوی ایڈ کی جائے گی۔ حکومت اپنے مالیہ کو مستحکم کرنے کیلئے جیویلرس پر بوجھ ڈال رہا ہے۔ جیویلرس کی یہ ہڑتال اس وقت شروع کی گئی ہے جبکہ ملک بھر میں سونے کی قیمتوں میں زبردست اضافہ ہورہا ہے۔

 

ہڑتال کے باعث سونے کی قیمت میں اضافہ کا بیوپاریوں کو کوئی فائدہ نہیں ہوا بلکہ مالیاتی مارکٹ میں سست روی چل رہی ہے۔ فیڈریشن کے ڈائرکٹر نے کہاکہ ہماری دکانیں بند ہیں لیکن ہم چپ نہیں بیٹھیں گے۔ روزانہ ہم جمع ہوکر ٹیکس کے خلاف احتجاج کریں گے۔ ہم اپنا نقصان برداشت کرنے کیلئے تیار ہیں لیکن حکومت کی زیادتیوں کو برداشت نہیں کریں گے۔ ہمیں اندیشہ ہیکہ اس طرح کا ٹیکس صنعت کو نقصان پہنچائے گا اور اس صنعت سے وابستہ افراد روزگار سے محروم ہوجائیں گے۔ فیڈریشن اور انڈیا بلین اینڈ جیویلرس اسوسی ایشن نے مل کر حکومت کے خلاف مورچہ ڈال لیا ہے اور یہ مورچہ سونے پر ایک فیصد امپورٹ ڈیوٹی کے ساتھ ٹیکس عائد کرنے کے خلاف احتجاج کررہا ہے۔ بتایا جاتا ہیکہ ہندوستان میں سونے کے بیوپاریوں کی جانب سے بند منانے کی وجہ سے اسے بھاری نقصان ہورہا ہے جبکہ سونے کی قدرت میں اضافہ دیکھا گیا۔ 1974ء کے بعد سے پہلی مرتبہ اس سال سونے کی قیمت میں زبردست اچھال آئی گئی۔ 7 سال عالمی مالیاتی بحران کے بعد سے سونے کی قدر میں گراوٹ آ گئی تھی۔ ہندوستان میں سونے کی خریداری کا رجحان بڑھ رہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT