Tuesday , December 12 2017
Home / ہندوستان / جی ایس ٹی عجلت میں کیوں لاگو کیا گیا؟ خورشید کا بی جے پی سے سوال

جی ایس ٹی عجلت میں کیوں لاگو کیا گیا؟ خورشید کا بی جے پی سے سوال

شیلانگ (میگھالیہ)۔ 7 اکتوبر (سیاست ڈاٹ کام) سینئر کانگریس لیڈر سلمان خورشید نے آج مرکز کی بی جے پی حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ جی ایس ٹی عجلت میں لاگو کردیا گیا اور ہر دن قواعد بدلے جارہے ہیں۔ خورشید نے جو یہاں نجی دورہ پر ہیں، اخباری نمائندوں کو بتایا کہ آپ (بی جے پی) ہر روز تبدیلی لاتے ہوئے حکومت نہیں چلا سکتے۔ آپ کو لازماً سنجیدگی سے غوروخوض کرنا پڑے گا۔ اس حکومت کے تعلق سے میری رائے ہے کہ حکومت کی معاشیات بالکلیہ صفر ہے۔ ’’ہم تیزی سے زوال پذیر ہیں اور یہ ایسی صورتحال ہے جسے راتوں رات سنبھالا نہیں جاسکتا‘‘۔

 

جی ایس ٹی رعایت ’’اونٹ کے منہ میں زیرہ‘‘:کانگریس
نئی دہلی ۔7اکتوبر(سیاست ڈاٹ کام) کانگریس نے اشیا اور خدمات ٹیکس(جی ایس ٹی ) سے متعلق گزشتہ روز معلنہ رعایتوں کو ’اونٹ کے منہ میں زیرہ‘ قراردیتے ہوئے کہا کہ یہ اقدام گجرات اسمبلی انتخابات کو ذہن میں رکھ کرکیا گیا ہے ،لیکن اس میں زرعی اور ٹیکسٹائلز سیکٹرز کو رعایت نہ دیکر مودی حکومت نے عام لوگوں کو ایک بار پھرمایوس کیاہے ۔کانگریس کے میڈیا سیل کے سربراہ رندیپ سنگھ سرجے والا نے آج یہاں پارٹی ہیڈکوارٹرس میں منعقدہ خصوصی پریس کانفرنس میں جی ایس ٹی کے تحت شعبوں کو دی گئی عبوری راحت کا خیر مقدم کیا ،لیکن سب سے زیادہ روزگاردینے والے زرعی شعبہ اور ٹیکسٹائلز نیز عام آدمی کے استعمال کی چیزوں میں راحت نہ دینے پر حکومت پر نکتہ چینی کی ۔ سرجے والا نے کہا کہ یہ امید کی جارہی تھی کہ وزیر اعظم ،وزیر فینانس اور صدر بی جے پی امیت شاہ کے گہرائی سے غورکرنے کے بعد جی ایس ٹی سے بڑھی مہنگائی سے پریشان عام لوگوں کو کچھ راحت ملے گی ،لیکن یہ محض انتخابات کی تیاری نظر آیا۔
حکومت پر جی ایس ٹی سے متعلق ڈھانچہ جاتی معاملات کو حل کرنے میں ناکام رہنے کا الزام لگاتے ہوئے انھوں نے کہا کہ کل ٹھوس فیصلے کرنے کے بجائے ٹی ڈی ایس اور ٹی سی ایس ریورس چارج سسٹم اور ای وے بل جیسے اہم مسائل کو مارچ ؍اپریل 2018ء تک ٹال دیا گیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT