Saturday , November 25 2017
Home / سیاسیات / جے این یو تنازعہ پر دہلی پولیس کی تحقیقات مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ کا اظہار لاتعلقی

جے این یو تنازعہ پر دہلی پولیس کی تحقیقات مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ کا اظہار لاتعلقی

نئی دہلی۔/4مارچ، ( سیاست ڈاٹ کام ) مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ نے گزشتہ ماہ جواہر لعل نہرو یونیورسٹی میں مخالف ہند سرگرمیوں پر دہلی پولیس کی جانب سے تحقیقات سے آج اپنا ہاتھ جھٹک لیا اور کہا کہ دہلی پولیس کو جو کچھ کرنا ہے سو وہ کررہی ہے اور اس معاملہ پر مجھے کچھ نہیں کہنا ہے۔ جے این یو تنازعہ پر دہلی پولیس کی جاریہ تحقیقات کے بارے میں استفسار پر وزیر داخلہ نے یہ ردعمل ظاہر کیا۔ واضح رہے کہ جے این یو اسٹوڈنٹس یونین صدر کہنیا کمار اور دیگر لیڈران عمرخالد اور انیرین بھٹاچاریہ کو غداری کے الزام میں گرفتار کرلیا گیا تھا جن کے خلاف پارلیمنٹ پر حمہ آور افضل گرو کی برسی کے موقع پر یونیورسٹی کیمپس میں 9فبروری کو قوم دشمن نعرے لگانے کا الزام عائد کیا گیا تاہم کنہیا کمار کو عدالت نے کل جیل سے رہا کردیا تھا جبکہ خالد اور بھٹاچاریہ ہنوز عدالتی تحویل میں ہیں۔ واضح رہے کہ جے این یو تنازعہ منظر عام پر آنے کے بعد راجناتھ سنگھ نے یہ سخت بیان دیا تھا کہ دیش کے غداروں کو ہرگز برداشت نہیں کیا جائیگا لیکن کیس کارُخ بدلتے ہی انہوں نے لاتعلقی کا اظہار کیا جبکہ دہلی کے سابق پولیس کمشنر بسی بھی سیاسی آقاؤں کی خوشنودی کیلئے اس کیس میں پرجوش نظر آرہے تھے لیکن ناکافی ثبوتوں کی بناء دہلی پولیس کو پشیمانی اٹھانی پڑرہی ہے۔ کہا گیا ہے کہ دہلی حکومت کی تحقیقات میں اس واقعہ میں کنہیا کمار کو بری قرار دیا گیا ہے اور عمرخالد کے رول کی تحقیقات پر زور دیا گیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT