Tuesday , December 18 2018

حالت نشہ میں ڈرائیونگ 1,699 افراد کو قید کی سزا

۔9,648 ڈرائیورس کے خلاف چارچ شیٹ۔ 681 کے ڈرائیونگ لائسنس معطل ‘ اڈیشنل کمشنر ٹریفک
حیدرآباد 10 مئی ( پی ٹی آئی ) حیدرآباد میں جملہ 1,699 افراد کو نشہ میں ڈرائیونگ کرنے پر جیل بھیجا گیا ہے جبکہ پولیس کی جانب سے مختلف ٹریفک خلاف ورزیوں پر 9,600 چارچ شیٹس بھی پیش کی گئیں۔ یہ کارروائیاں جاریہ سال جنوری سے اپریل کے درمیان کی گئیں۔ حیدرآباد ٹریفک پولیس کی جانب سے وقفہ وقفہ سے شراب پی کر گاڑی چلانے کے خلاف مہم چلائی جاتی ہے ۔ اس نے اب تک 9,648 ڈرائیورس کے خلاف چارچ شیٹ پیش کی ہے جنہیں حالت نشہ میں ڈرائیونگ کرتے ہوئے پکڑا گیا تھا ۔ اڈیشنل کمشنر پولیس ( ٹریفک ) انیل کمار نے یہ بات بتائی ۔ انہوں نے کہا کہ جاریہ سال جنوری سے اپریل تک جملہ 9,648 چارچ شیٹس ان افراد کے خلاف پیش کی گئیں جو حالت نشہ میں ڈرائیونگ کر رہے تھے ۔ انہو ںنے بتایا کہ ان میں 1,699 افراد کو ایک دن سے 30 دن تک کی سزائے قید بھی ہوئی ہے ۔ انہو ںنے بتایا کہ حالت نشہ میں ڈرائیونگ کرنے والوں سے جملہ 2.53 کروڑ روپئے کے جرمانے بھی وصول کئے گئے ۔ انہوں نے بتایا کہ خلاف ورزی کرنے والے مابقی افراد کے خلاف عدالتوں کی جانب سے ان کے خون میں پائی جانے والی الکحل کی مقدار کے مطابق جرمانے عائد کئے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حالت نشہ میں ڈرائیونگ کے خلاف مہم کے دوران 32 خاتون ڈرائیورس کے بھی نشہ میں ہونے کا پتہ چلا تھا اور ان کے خلاف جرمانے عائد کئے گئے ۔ انہوں نے کہا کہ حالت نشہ میں ڈرائیونگ کرنا نہ صرف ایسا کرنے والے کیلئے بلکہ دوسرے مسافرین اور راہگیروں کیلئے بھی خطرناک ہوسکتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اسی وجہ سے حیدرآباد ٹریفک پولیس نے اس لعنت کے خلاف سختی سے مہم چلانے کا فیصلہ کیا ہے اور وقفہ وقفہ سے مہم چلائی جاتی ہے تاکہ حیدرآباد کی سڑکوں کو محفوظ بنایا جاسکے ۔ انہوں نے کہا کہ عدالتوں کی جانب سے 681 افراد کے ڈرائیونگ لائسنس تین ماہ سے پانچ سال کی مدت کیلئے معطل کئے گئے جبکہ 69 افراد کے لائسنس منسوخ ہی کردئے گئے ہیں۔اڈیشنل کمشنر پولیس ٹریفک نے عوام سے اپیل کی کہ وہ نشہ کی حالت میں ڈرائیونگ نہ کریں کیونکہ اس کی وجہ سے کئی حادثات پیش آتے ہیں جو جان لیوا بھی ثابت ہوتے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT