Tuesday , June 19 2018
Home / شہر کی خبریں / حج کمیٹی کے امور میں بے قاعدگیوں کے الزامات کی تردید

حج کمیٹی کے امور میں بے قاعدگیوں کے الزامات کی تردید

حیدرآباد۔/17جنوری، ( سیاست نیوز) اسپیشل آفیسر حج کمیٹی پروفیسر ایس اے شکور نے حج کمیٹی کے اُمور میں مبینہ بے قاعدگیوں کے الزامات کو مسترد کردیا۔ تاہم کہا کہ بعض اُمور کے بارے میں جو شکایات ملی ہیں اُن کا جائزہ لیا جائے گا اور ثابت ہونے پر ضروری کارروائی کی جائے گی۔ پریس کانفرنس کے دوران حج کمیٹی اُمور کے بارے میں میڈیا میں شائع ہونے و

حیدرآباد۔/17جنوری، ( سیاست نیوز) اسپیشل آفیسر حج کمیٹی پروفیسر ایس اے شکور نے حج کمیٹی کے اُمور میں مبینہ بے قاعدگیوں کے الزامات کو مسترد کردیا۔ تاہم کہا کہ بعض اُمور کے بارے میں جو شکایات ملی ہیں اُن کا جائزہ لیا جائے گا اور ثابت ہونے پر ضروری کارروائی کی جائے گی۔ پریس کانفرنس کے دوران حج کمیٹی اُمور کے بارے میں میڈیا میں شائع ہونے والی خبروں کے بارے میں پوچھے جانے پر اسپیشل آفیسر نے کہا کہ وہ بحیثیت اسپیشل آفیسر تمام اُمور کی شفافیت کے ساتھ تکمیل کو یقینی بنارہے ہیں تاہم بعض معمولی واقعات سے انکار نہیں کیا جاسکتا۔ انہوں نے بتایا کہ وہ اسپیشل آفیسر کے علاوہ ایکزیکیٹو آفیسر حج کمیٹی کی زائد ذمہ داری سنبھالے ہوئے ہیں تاہم انہوں نے آج تک حج کمیٹی سے کوئی سہولت حاصل نہیں کی حتیٰ کہ حج کمیٹی کی گاڑی اور فون بھی حاصل نہیں کیا اور نہ ہی حج کمیٹی کے خرچ پر حج کے دوران خادم الحجاج سے انٹرنیشنل کال کرتے ہیں۔ پروفیسر ایس اے شکور نے وضاحت کی کہ زائد ذمہ داری کے باوجود انہوں نے آج تک زائد ذمہ داری کا الاؤنس حاصل نہیں کیا کیونکہ وہ صرف خدمت کے جذبہ کے تحت حج کمیٹی میں خدمات انجام دے رہے ہیں۔ 70سال سے زائد عمر کے محفوظ کوٹہ میں بے قاعدگیوں کی شکایات پر پروفیسر ایس اے شکور نے کہا کہ سنٹرل حج کمیٹی کے زمرہ میں ساتھی کے انتخاب کیلئے جو شرط رکھی گئی ہے اس میں قریبی خونی رشتہ کو لازمی قرار دینے کیلئے انہوں نے حج کمیٹی سے سفارش کی ہے کیونکہ اکثر دیکھا گیا ہے کہ کسی دور کے رشتہ دار یا قریبی غیر رشتہ دار کو عازم اپنے رشتہ دار کے طور پر پیش کرتے ہوئے ان کی روانگی کی راہ ہموار کررہے ہیں۔ واضح رہے کہ 70سال سے زائد عمر کے کسی عازم کو اپنے ساتھ ایک شخص کو بطور ساتھی لے جانے کی اجازت ہے، اس کے لئے قرعہ اندازی کے بغیر ہی انتخاب کیا جاتا ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ ایسے افراد جو قرعہ اندازی میں منتخب نہیں ہوئے انہیں کسی 70سال سے زائد عمر کے عازم کے ساتھ بطور ساتھی منتخب کرانے میں حج کمیٹی کے بعض ملازمین اہم رول ادا کررہے ہیں اور اس کے لئے رقومات حاصل کی جارہی ہیں۔ اس بے قاعدگی کو ختم کرنے کیلئے پروفیسر ایس اے شکور نے سنٹرل حج کمیٹی کو تجویز پیش کی کہ وہ ساتھی کیلئے بیٹی یا بیٹا کی شرط رکھیں۔ رشتہ دار کے نام پر دور کے رشتہ دار اور دوست احباب بھی اس سہولت سے استفادہ کررہے ہیں جس سے بے قاعدگی کی گنجائش ہے۔

TOPPOPULARRECENT