Tuesday , November 21 2017
Home / شہر کی خبریں / حج 2016 میں تلنگانہ کے حج کوٹہ میں اضافہ ممکن ، مردم شماری کے لحاظ سے کوٹہ

حج 2016 میں تلنگانہ کے حج کوٹہ میں اضافہ ممکن ، مردم شماری کے لحاظ سے کوٹہ

ممبئی میں سنٹرل حج کمیٹی کا اجلاس ، تلنگانہ سے پروفیسر ایس اے شکور کی نمائندگی ، آج اہم فیصلہ متوقع
حیدرآباد۔/19نومبر، ( سیاست نیوز ) حج 2016کیلئے تلنگانہ کے حج کوٹہ میں اضافہ کا امکان ہے کیونکہ سنٹرل حج کمیٹی نے 2011 مردم شماری کے اعتبار سے تلنگانہ اور آندھرا پردیش کیلئے کوٹہ الاٹ کرنے سے اتفاق کرلیا۔ ممبئی میں آج سنٹرل حج کمیٹی نے تمام ریاستوں کے حج کمیٹی صدورنشین اور عہدیداروں کا اجلاس طلب کیا تھا۔ صدرنشین قیصر شمیم کے علاوہ چیف ایکزیکیٹو آفیسر عطاء الرحمن، نائب صدرنشین مرغوب احمد اور کرناٹک کے وزیر روشن بیگ نے اجلاس میں شرکت کی۔ تلنگانہ اور آندھرا پردیش حج کمیٹیوں کی نمائندگی اسپیشل آفیسر پروفیسر ایس اے شکور نے کی۔ انہوں نے 2015 حج انتظامات کے سلسلہ میں حائل دشواریوں اور مسائل سے اجلاس کو واقف کرایا۔ دیگر ریاستوں کی حج کمیٹیوں کے ذمہ داروں نے بھی انہیں درپیش مشکلات سے واقف کراتے ہوئے آئندہ سال حج کے انتظامات کے سلسلہ میں مختلف تجاویز پیش کیں۔ پروفیسر ایس اے شکور نے 2011 مردم شماری کے اعتبار سے تلنگانہ کو کوٹہ الاٹ نہ کئے جانے کے سبب ہزاروں افراد کو ہوئی مایوسی سے آگاہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ حج 2015 کے کوٹہ الاٹمنٹ میں تلنگانہ کے ساتھ ناانصافی ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ میں 16963 درخواستیں داخل کی گئی تھیں جبکہ حج کوٹہ 2760 الاٹ کیا گیا۔ اس طرح 14ہزار سے زائد افراد کو مایوسی ہوئی۔ اسی طرح آندھرا پردیش میں 3840درخواستیں داخل اور 2023 کوٹہ الاٹ کیا گیا، اس طرح آندھرا پردیش میں 80 فیصد افراد سفر حج کیلئے منتخب ہوگئے۔ انہوں نے بتایا کہ حیدرآباد امبارگیشن پوائنٹ سے جملہ 5451 عازمین حج روانہ ہوئے۔ سنٹرل حج کمیٹی کے حکام نے آئندہ سال حج کوٹہ کے الاٹمنٹ کے موقع پر 2011مردم شماری کو پیش نظر رکھنے سے اتفاق کیا۔ عہدیداروں نے بتایا کہ اس سلسلہ میں جمعہ کو سنٹرل حج کمیٹی کا اجلاس منعقد ہوگا جس میں اہم فیصلے کئے جائیں گے۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ سعودی حکومت کی جانب سے ہندوستان کا حج کوٹہ ایک لاکھ 25ہزار تھا جس میں جاریہ سال کمی کرتے ہوئے صرف ایک لاکھ الاٹ کیا گیا۔ توقع کی جارہی ہے کہ حج  2016کیلئے 25ہزار کا اضافہ ہوسکتا ہے۔ سنٹرل حج کمیٹی کو حج 2015کیلئے جملہ 3لاکھ 83ہزار درخواستیں داخل کی گئی تھیں جن میں 60ہزار درخواستیں آن لائن داخل کی گئیں۔ کمیٹی نے نئے سافٹ ویر کو ڈیولپ کرتے ہوئے آن لائن درخواستوں کے ادخال کی حوصلہ افزائی کرنے کا فیصلہ کیا ہے جس سے سنٹرل حج کمیٹی کو بھی سہولت ہوگی۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ کرین سانحہ میں ہندوستان کے جملہ 13حجاج کرام جاں بحق ہوئے جن میں 10کا تعلق حج کمیٹی سے ہے جبکہ 3 خانگی ٹور آپریٹرس سے روانہ ہوئے تھے۔ منیٰ کے سانحہ میں ہندوستان کے 129 حجاج کرام کے جاں بحق ہونے کی توثیق کی گئی ہے جن میں سنٹرل حج کمیٹی کے 45حجاج کرام شامل ہیں۔ پروفیسر ایس اے شکور کی نمائندگی پر سنٹرل حج کمیٹی کے حکام نے سوٹ کیس سربراہی کے معاملہ کا جائزہ لینے اور اسے اختیاری قرار دینے پر غور کا تیقن دیا ہے۔ حج کمیٹی نے درخواست گذاروں کے چار سال کے ریکارڈ کو محفوظ کرنے سے بھی اتفاق کیا تاکہ  محفوظ زمرے کے عازمین حج کے انتخاب میں سہولت ہو۔ اکثر درخواست گذار اپنے کور نمبر کی تفصیلات محفوظ نہیں رکھ پاتے جس کے باعث محفوظ زمرے میں ان کے انتخاب میں دشواریوں کا سامنا ہے۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ حج 2016کیلئے درخواستوں کی اجرائی کا آغاز جنوری سے ہوگا۔ سنٹرل حج کمیٹی نے روانگی کے شیڈول میں روزانہ 2 فلائیٹس رکھنے کی تجویز سے اتفاق کیا کیونکہ جاریہ سال سات دن میں 16فلائیٹس کا شیڈول بنانے سے تلنگانہ حج کمیٹی کو دشواریوںکا سامنا کرنا پڑا۔ سنٹرل حج کمیٹی نے حجاج کرام کی خدمت انجام دینے میں ناکام خادم الحجاج کے خلاف کارروائی کی تائید کی اور تلنگانہ حج کمیٹی کی جانب سے 7 خادم الحجاج کے خلاف کارروائی کی ستائش کی۔ پروفیسر ایس اے شکور نے خادم الحجاج کے انتخاب کے طریقہ کار میں تبدیلی اور آن لائن سلیکشن کی تجویز پیش کی۔ سنٹرل حج کمیٹی کو حج گائیڈ میں حادثات سے بچنے کیلئے احتیاطی تدابیر کو شامل کرنے کی تجویز پیش کی گئی۔

TOPPOPULARRECENT