Thursday , November 23 2017
Home / Top Stories / حزب المجاہدین کمانڈر کی تائیدمیں احتجاجی مظاہروں پر حیرت

حزب المجاہدین کمانڈر کی تائیدمیں احتجاجی مظاہروں پر حیرت

کشمیر ہندوستان کا اٹوٹ حصہ ، دیرینہ مسئلہ کو حل کرنے کی کوششیں جاری : وینکیا نائیڈو

نئی دہلی۔ 10 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) کشمیر میں حزب المجاہدین کمانڈر برہان وانی کی ہلاکت کے بعد بعض گوشوں کی تائید اور احتجاجی مظاہروں پر سوالات اٹھاتے ہوئے مرکزی وزیر این وینکیا نائیڈو نے آج کہا کہ حکومت ، دہشت گردی اور تشدد کو برداشت نہیں کرے گی۔ کشمیر ، ہندوستان کا اٹوٹ حصہ ہے اور اس بارے میں بات چیت یا مذاکرات کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔ وینکیا نائیڈو نے کہا کہ ہمیں اس بات پر حیرت ہے کہ بعض لوگ ، نام نہاد احتجاجیوں کی تائید کرنے کی کوشش کررہے ہیں جن کی عسکریت پسندوں کی ہمدردی ہے۔ انہوں نے کہا کہ برہان وانی حزب المجاہدین کا کمانڈر تھا ۔

کسی بھی ہندوستانی کو آخر اس طرح کے لوگوں سے ہمدردی کیونکر ہوسکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کشمیر میں بحران اچانک رونما نہیں ہوا ۔ یہ طویل عرصہ سے جاری ایک مسئلہ ہے۔ ہمیں اس کا مستقل حل تلاش کرنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ دہشت گردی اور تشدد خواہ وہ کسی شکل میں ہو، قابل قبول نہیں ہوسکتا۔ جہاں تک حکومت کا تعلق ہے، یہ بالکل واضح ہے کہ اس طرح کی سرگرمیوں کو برداشت نہیں کیا جائے گا۔ اس کے ساتھ ساتھ آپ طویل عرصہ سے جاری اس مسئلہ کا راتوں رات یا تیار شدہ حل بھی تلاش نہیں کرسکتے۔ حکومت اس مسئلہ سے نمٹنے کی کوشش کررہی ہے۔ وینکیا نائیڈو نے کہا کہ ہندوستان ایک جمہوری ملک ہے اور جمہوری طریقوں کو اختیار کیا جائے گا۔ انہوں نے بنگلور میں میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ملک کیلئے ترقی ہی اہم ایجنڈہ ہونا چاہئے۔ انہوں نے میڈیا میں سنسنی خیز خبروں پر ناراضگی کا اظہار کیا اور میڈیا سے تعمیری رول ادا کرنے کی خواہش کی۔ وینکیا نائیڈو نے کہا کہ بحیثیت وزیر اطلاعات و نشریات وہ میڈیا سے تبادلہ خیال کریں گے کیونکہ ملک کی ترقی ہی اصل ایجنڈہ ہونا چاہئے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT