Wednesday , June 20 2018
Home / شہر کی خبریں / حصول اراضی سے قبل معاوضہ کی ادائیگی کو یقینی بنانے پر زور

حصول اراضی سے قبل معاوضہ کی ادائیگی کو یقینی بنانے پر زور

حیدرآباد۔/15اکٹوبر، ( این ایس ایس ) تلنگانہ کے چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے آج اعلیٰ سرکاری عہدیداروں کو ہدایت کی کہ حصول اراضی کی صورت میں اراضی کے مالکین کو مناسب معاوضہ کی فراہمی یقینی بنانے کیلئے ریاست تلنگانہ میں جدید حصول اراضی قانون کی تیاری کیلئے فی الفور اقدامات کئے جائیں۔ انہوں نے کہا کہ ’’ ترقیاتی کاموں کیلئے حصول ارا

حیدرآباد۔/15اکٹوبر، ( این ایس ایس ) تلنگانہ کے چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے آج اعلیٰ سرکاری عہدیداروں کو ہدایت کی کہ حصول اراضی کی صورت میں اراضی کے مالکین کو مناسب معاوضہ کی فراہمی یقینی بنانے کیلئے ریاست تلنگانہ میں جدید حصول اراضی قانون کی تیاری کیلئے فی الفور اقدامات کئے جائیں۔ انہوں نے کہا کہ ’’ ترقیاتی کاموں کیلئے حصول اراضی سے قبل حکومت کو چاہیئے کہ سب سے پہلے وہ مناسب معاوضہ جمع کرے اور انسانی بنیادوں پر بازآبادکاری پیاکیج کا اعلان کرے۔‘‘ مرکز اور دیگر ریاستوں کی جانب سے روبہ عمل لائے جانے والے قوانین حصول اراضی پر آج سکریٹریٹ میں منعقدہ ایک اعلیٰ سطحی اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے چیف منسٹر نے عہدیداروں کو ہدایت کی کہ تلنگانہ کیلئے حصول اراضی کا ایک نیا قانون وضع کرنے کیلئے تمام ضروری اقدامات کئے جائیں لیکن ایسا کوئی بھی قانون اراضی سے محروم ہونے والوں کیلئے نقصان دہ نہ بنے۔ انہوں نے عہدیداروں کو ہدایت کی کہ اراضی کے مالکین کے ساتھ بات چیت کے ذریعہ ایسے مسائل کو محتا ط انداز میں حل کیا جانا چاہیئے تاکہ وہ اراضی حاصل کرتے ہوئے وہاں جنگی خطوط پر ترقیاتی کام کئے جاسکیں۔

انہوں نے عہدیداروں کو خبردار کیا کہ معاوضہ طلب کرنے والے مالکین اراضی کو ہرگز کوئی تکلیف نہ پہنچے بلکہ انہیں پیشگی معاوضہ ادا کیا جائے۔ چیف منسٹر نے کہا کہ وہ اپنی زمین سے محرومی کا درد جانتے ہیں۔ جب مانیرو ڈیم تعمیر کیا گیا تھا انہیں اپنی اراضی سے محروم ہونا پڑا تھا۔انہوں نے کہا کہ ترقیاتی کاموں اور آبپاشی پراجکٹوں کیلئے ہزاروں ایکر اراضی کی ضرورت پڑتی ہے چنانچہ حصول اراضی لازمی ہے۔ ہمیں اس مسئلہ سے احتیاط کے ساتھ نمٹنا چاہیئے۔ کے سی آر نے کہا کہ اراضی کی اصل قیمت اور مقرر کردہ مارکٹ قیمت کے مابین بھاری تفاوت کے پیش نظر اراضی سے محروم ہونے والوں کو رجسٹریشن کیلئے مقررہ قیمت سے زائد معاوضہ دینے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے غذائی طمانیت کو ملحوظ رکھتے ہوئے صرف 15فیصد زرعی اراضی کے حصول کی ضرورت پر زور دیا۔اس اجلاس میں زمین کی اصل قدر اور مقرر کردہ قیمتوں کے درمیان بھاری فرق کا بغور جائزہ لیا اور کہا کہ ٹاؤنس اور حکومت کی طرف سے مخصوص علاقوں کیلئے دوگنی قیمت ہونی چاہیئے ۔

TOPPOPULARRECENT