Saturday , September 22 2018
Home / شہر کی خبریں / حصول اقتدار کیلئے کانگریس کی جی توڑکوششیں،سوشیل میڈیا کا بھرپور استعمال

حصول اقتدار کیلئے کانگریس کی جی توڑکوششیں،سوشیل میڈیا کا بھرپور استعمال

حیدرآباد ۔ /21 مارچ (سیاست نیوز) سال 2014 ء کے عوامی انتخابات میں تلنگانہ میں کانگریس پارٹی کا بری طرح سے صفایا ہوگیا ۔ صرف اور صرف آپسی اختلافات اور گروپ بندیوں کے سبب ہوا ۔ سونیا گاندھی کے علحدہ ریاست تلنگانہ کی تشکیل دینے کے باوجود بھی کانگریس پارٹی اس کا صحیح طورپر فائدہ حاصل نہیں کرسکی ۔ اس بار کانگریس پارٹی نے آپسی اختلافات ان گروپ بندیوں سے بچتے ہوئے پارٹی کو مستحکم کرنے کیلئے کئی نئے چہروں اور مضبوط کیڈر رکھنے والوں کو پارٹی میں جگہ دینے کا فیصلہ کیا ہے اور مستقبل کیلئے سوشیل میڈیا کا بھرپور استعمال کرتے ہوئے کانگریس کی حکمت عملی اور منصوبے عوام تک پہنچارہی ہے ۔ صدر پی سی سی اتم کمار ریڈی نے فیس بک اور ٹوئیٹر کو کافی اہمیت دیتے ہوئے اس بات کا اعلان کررہے ہیں ۔ 2019 ء میں تلنگانہ میں کانگریس کی شاندار کامیابی حاصل ہوگی ۔ تلنگانہ عوام کے سی آر حکومت کی کارکردگی سے ناراض ہیں اور تلنگانہ کیلئے جان کی قربانیاں دینے والے اور عرصہ دراز سے خدمات انجام دینے والوں کو پارٹی میں کوئی جگہ نہیں ہے بلکہ کے سی آر نے حال ہی میں راجیہ سبھا کیلئے سنتوش کو نامزد کرکے یہ بات ثابت کردی ہے کہ ٹی آر ایس پارٹی صرف ان کے خاندان کی جماعت ہے ، بیٹی کو رکن پارلیمنٹ ایک بھانجہ ریاستی بڑی آبپاشی اور ایک بھانجہ کو راجیہ سبھا ممبر کیلئے نامزد کیا ۔ ایوان میں کسانوں کی خودکشی ، فیس بازادائیگی ، مسلمانوں کیلئے 12 فیصد تحفظات پر ٹی آر ایس پارٹی کے کارکن اسمبلی آواز نہیں اٹھارہے ہیں جو کہ افسوسناک بات ہے ۔ کانگریس پارٹی نے بھی پارٹی کیڈر کو مضبوط بناتے ہوئے آپسی اختلافات کو نظر انداز کرتے ہوئے حکومت کے خلاف تحریک چلانے کا فیصلہ کرچکی ہے ۔ اور 2019 ء میں حصول اقتدار کیلئے جی توڑ جدوجہد کررہی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT