Saturday , November 25 2017
Home / دنیا / حصول تعلیم میں ہندو، دیگر مذاہب سے بہت پیچھے

حصول تعلیم میں ہندو، دیگر مذاہب سے بہت پیچھے

مسلمان محض چند سال رسمی تعلیم حاصل کرتے ہیں، یہودی سب سے آگے، امریکہ و یوروپ میں ہندو، یہودیوں سے آگے

واشنگٹن 13 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) باوقار عالمی ادارہ پیو ریسرچ نے آج کہاکہ ہندوؤں نے حالیہ چند دہائیوں کے دوران قابل لحاظ تعلیمی صلاحیتیں حاصل کئے ہیں۔ اس کے باوجود وہ (ہندو) دنیا بھر کے دیگر تمام بڑے مذاہب کے مقابلے حصول تعلیم کے معاملہ میں بدستور کمترین سطح پر ہیں۔ پیو نے کہاکہ ’’ہندوؤں نے حالیہ چند دہائیوں کے دوران قابل لحاظ تعلیمی ترقی کی ہے۔ ہندو بالغ (25 سال یا اس سے زائد عمر کے) نوجوانوں کا اس جائزہ کے دوران تجزیہ کیا گیا۔ نئی نسل کے ہندوؤں نے اپنی گزشتہ نسل کے بہ نسبت 3.4 سال زائد تعلیم حاصل کی ہے۔ جس کے باوجود دیگر کسی بھی مذہب کے مقابلہ ہندو میں حصول تعلیم کے لئے اس شرکت کی سطح بدستور سب سے کمترین ہیں جبکہ یہودی حصول تعلیم کے معاملہ میں دیگر مذاہب کے مقابلے سب سے آگے اور اس جائزہ میں سرفہرست ہیں۔ عالمی سطح پر حصول تعلیم کا اوسط 5.6 فیصد ہے اور 41 فیصد ہندوؤں نے کسی بھی قسم کی کوئی رسمی تعلیم حاصل نہیں کی۔ رپورٹ نے مزید کہاکہ 10 میں ایک ہندو کے پاس ثانوی درجہ کے بعد کی ڈگری ہے۔ ہندو خواتین نے حالیہ عرصہ میں اگرچہ بہترین تعلیمی مظاہرہ کیا ہے لیکن تعلیم کے اعتبار سے ہندوؤں میں اب بھی وسیع صنفی خلاء موجود ہے جو دیگر مذاہب کے مقابلہ سب سے زیادہ ہے۔ ’’دنیا بھر میں مذہب و تعلیم‘‘ کے زیرعنوان جاری کردہ پیو ریسرچ سنٹر کی 160 صفحات پر مشتمل رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ دنیا بھر میں یہودی دیگر کسی عالمی مذہب کے مقابلہ بہت زیادہ اعلیٰ تعلیم یافتہ ہیں۔ جبکہ ہندو اور مسلمان محض چند سال ہی رسمی تعلیم حاصل کرنے والوں میں شامل ہیں۔ 151 ممالک میں سروے اور مردم شماری کے ذریعہ پیو ریسرچ سنٹر نے یہ تفصیلات جمع کئے ہیں۔ اس ادارہ نے دنیا کے چند بڑے مذاہب میں حصول تعلیم کے ضمن میں بڑے پیمانے پر صنفی خلاء کا پتہ چلایا ہے۔ اوسطاً ہندو مرد ، اپنی خٰاتین سے 2.7 سال کے زائد عرصہ تک تعلیم حاصل کیا کرتے ہیں۔ 53 فیصد ہندو خواتین کوئی باضابطہ رسمی تعلیم حاصل ہی نہیں کرتیں۔ اس طرح 29 فیصد ہندو مرد بھی باضابطہ / رسمی اسکولی تعلیم حاصل نہیں کرتے۔ ہندوؤں کی اکثریت (94 فیصد) ہندوستان میں رہتی ہے۔ سرحدی ممالک نیپال میں 2.3 فیصد اور بنگلہ دیش میں 1.2 فیصد ہندو آباد ہیں۔ دیگر ایشیائی بحرالکاہل کے علاقہ کے باہر بالخصوص یوروپ اور امریکہ میں جہاں ہندو ایک چھوٹی اقلیت ہیں، انتہائی اعلیٰ تعلیم یافتہ ہیں۔ امریکہ میں تعلیم کے معاملہ میں سب سے زیادہ تعلیم یافتہ یہودیوں سے بھی آگے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT