Wednesday , December 19 2018

حضرت محدث دکن رحمۃ اللہ علیہ

ڈاکٹر عاصم ریشماں

ڈاکٹر عاصم ریشماں

محدث دکن ابو الحسنات حضرت سید عبد اللہ شاہ نقشبندی رحمۃ اللہ علیہ ۱۰؍ ذی الحجہ ۱۲۹۲ھ میں پیدا ہوئے۔ آپ کے جد اعلیٰ مکہ مکرمہ سے عادل شاہی دَور حکومت میں سرزمین دکن آئے اور فرمان شاہی کے مطابق نلدرگ (مہاراشٹرا) میں فروکش ہوکر امور دینیہ اسلامیہ کی سرپرستی فرمائی۔ حضرت محدث دکن کے والد بزرگوار حضرت پیر سید مظفر حسین نقشبندی رحمۃ اللہ علیہ نے حکومت آصفیہ کے زمانے میں حیدرآباد منتقل ہوئے اور یہیں قیام پسند کیا۔ آپ کا سلسلۂ نسب حضرت امام موسیٰ کاظم رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی جانب سے چالیسویں پشت میں اور ۴۴ واسطوں سے حضرت امام حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے ملتا ہے، اس طرح آپ کا شمار نجیب الطرفین سادات میں ہوتا ہے۔
علوم ظاہری کی تحصیل و تکمیل کے بعد آپ نے علوم باطنی کی جانب توجہ مبذول کی اور نقشبندیہ سلسلہ کے مشہور بزرگ حضرت شاہ سعد اللہ رحمۃ اللہ علیہ کے خلیفہ حضرت پیر سید محمد بخاری شاہ صاحب رحمۃ اللہ علیہ سے رجوع ہوکر طریقت کا فیض حاصل کیا۔
قدرت نے آپ کو زبان و بیان کے ساتھ قلم کی قوت سے بھی سرفراز کیا تھا۔ آپ کی تصنیفات و تالیفات اپنے موضوعات و عنوانات کے لحاظ سے سند کا درجہ رکھتی ہیں، جو قرآن و حدیث، اقوال صحابہ، تشریحات تابعین، توضیحات تبع تابعین، اجتہادات مجتہدین، عرفانیات سالکین اور نگارشات مؤرخین سے بھری ہوئی ہیں۔ زجاجۃ المصابیح کو حضرت محدث دکن کی زندگی کا شاہکار کہا جاتا ہے۔
حضرت محدث دکن کو عربی، فارسی اور اُردو زبان پر یکساں عبور حاصل تھا۔ تفسیر، حدیث، فقہ اور علم تصوف پر گہری نظر تھی۔ ایک طرف آپ کی عارفانہ زندگی ترک دنیا کا مفہوم پیش کرتی ہے اور دوسری طرف آپ راہِ طریقت اور رہبرِ علوم شرعیہ میں کسی سے کم نہیں تھے۔ مختلف موضوعات پر آپ نے چھوٹی بڑی پندرہ کتابیں لکھیں اور سبھی کو قبولیت کا شرف حاصل ہوا۔ حضرت نے ۱۳۸۴ھ میں داعی اجل کو لبیک کہا۔

TOPPOPULARRECENT