Saturday , December 16 2017
Home / مذہبی صفحہ / حضرت میر شجاع الدین قادری

حضرت میر شجاع الدین قادری

ڈاکٹر عقیل ہاشمی

اولیاء اللہ نے شریعت محمدی ﷺ کی نورانی روشنی میں اسی کام کو اپنی زندگیوں کا حاصل سمجھا اور متقی ومنتخب بندگان حق ہر دور ‘ ہر زمانہ میں حق کے متلاشیوں کیلئے خضرِ وقت کا کام انجام دیتے رہے ‘عصرحاضر میں اللہ والوں کی یہ دعوت یاد الہی اور عشق رسولﷺ کے جذبوں کو تازہ کرتی ہے ایسے ہی اولیاء اللہ میں دکن کی ایک معروف ومشہور ہستی حضرت حافظ میر شجاع الدین حسین قادری ؒ کا نام نامی بھی ملتا ہے جو سرزمین دکن خصوصا حیدرآباد فرخند بنیاد کے لئے نعمتِ خداوندی سے جدا نہیں تھی جنہیں قطب الہند بھی کہا جاتا تھا بارہویں صدی ہجری کے اواخر اورتیرہویں صدی ہجری کی یہ متدین ‘ صاحب زہد وورع شخصیت اپنے علم وعمل کی عظمتوں نیز عالمانہ شان سے مشہورِ زمانہ رہی ‘ خاندانی لحاظ سے آپ سادات علویہ سے تھے آپ کا نسب (۲۷) واسطوں سے خلیفۃ الرسول ﷺ حضرت سیدنا علی المرتضی کرم اللہ وجہہ سے ملتا ہے آپ کی پیدائش ۱۱۹۱؁ء بمقام برہان پور مدھیہ پردیش ہوئی ۔ اور وہاں سے ۱۲۱۶ء؁ کو حیدرآباد دکن تشریف لائے اور نواب فتح الدولہ بہادر جن سے آپ کی قرابت داری تھی ‘کے یہاںقیام کیا ۔ مزید تاریخی جامع مسجد جو چار مینار کی تعمیر سے قبل موجود تھی کو اپنا تبلیغی وعلمی مرکز بنایا۔ حضرت قطب الہندؒ کو طریقت کے چاروں سلاسل قادریہ ‘ چشتیہ ‘ نقشبندیہ اور رفاعیہ میں بیعت وخلافت حاصل تھی ۔
حضرت میر شجاع الدین حسین قادریؒ صاحب رشد وہدایت جید متبحر عالم دین ہونے کے ساتھ ساتھ زبردست ادیب شاعر اور کئی زبانوں پر دسترس رکھتے تھے عربی فارسی ‘ اردو اورہندی زبانوں میں مختلف موضوعات پر آپ کے تصانیف ملتی ہیں مزید تفسیر ‘ تصریح ‘ علم تجوید میں مہارت تامہ وعبور تھا آپ کی علمی ادبی خدمات کی تفصیل تاریخ وسیرت کی کتابوں میں مرقوم ہے جیسے گلزار آصفیہ ‘ محبوب ذوالمنن ‘ تاریخ خورشید جاہی ‘ اور مؤسس جامعہ نظامیہ حضرت مولانا انوار اللہ فاروقی فضیلت جنگؒ کے برادر حضرت امیر اللہ فاروقیؒ کی کتاب مناقب شجاعیہ وغیرہ ہیں۔
آپ کے علوم ظاہری اور کمالات باطنی کے سبب ہزار ہا بندگان خدا فیض یاب ہوئے ۔ آپ کے ایک صاحبزادے حضرت حافظ حاجی عبد اللہ شاہ شہید کے علاوہ ایک صاحبزادی منسوبہ حضرت عبد الکریم بدخشانی تھیں ‘ آپ نے ۳ محرم الحرام ۱۲۶۵؁ کو وفات پائی۔ حضرت ممدوح ؒ کا عرس شریف ہر سال ۲ تا ۵ محرم الحرام زیر نگرانی موجودہ سجادہ نشین نہایت تزک واحتشام سے منایا جاتا ہے۔

TOPPOPULARRECENT