Tuesday , November 21 2017
Home / شہر کی خبریں / حکومت ، برقی سربراہی اور صحت و صفائی کے انتظامات میں ناکام

حکومت ، برقی سربراہی اور صحت و صفائی کے انتظامات میں ناکام

رمضان المبارک کے آغاز کے ساتھ ہی شہر میں جگہ جگہ تاریکی ، مختلف مقامات سے شکایات : محمد علی شبیر
حیدرآباد۔/7جون، ( سیاست نیوز) تلنگانہ قانون ساز کونسل میں قائد اپوزیشن محمد علی شبیر نے رمضان المبارک کے آغاز کے باوجود دارالحکومت حیدرآباد میں برقی کی بلاوقفہ سربراہی اور صحت و صفائی کے انتظامات میں ناکامی کا حکومت پر الزام عائد کیا۔ محمد علی شبیر نے کہا کہ رمضان المبارک کے آغاز سے قبل حکومت نے انتظامات کے سلسلہ میں جو بلند بانگ دعوے کئے تھے ان کی قلعی کھل چکی ہے۔ پہلے دن ہی حیدرآباد کے بیشتر علاقوں کی مساجد میں برقی نہ ہونے کے سبب تاریکی میں نماز تراویح ادا کی گئی جس سے مصلیوں کو تکالیف کا سامنا کرنا پڑا۔ دوسری طرف برقی کی کئی گھنٹوں تک عدم سربراہی سے عوام اور تاجرین کو دشواری ہوئی۔ انہوں نے کہا کہ جب دارالحکومت حیدرآباد میں حکومت کے انتظامات کا یہ حال ہے تو پھر اضلاع کی ابتر حالت کا از خود اندازہ کیا جاسکتا ہے۔ محمد علی شبیر نے کہا کہ شہر کے مختلف علاقوں سے انہیں کل رات سے شکایات موصول ہورہی ہیں کہ وقفہ وقفہ سے برقی سربراہی منقطع کی جارہی ہے۔ کئی علاقوں میں 4تا 5 گھنٹے برقی منقطع رہی اور بعض علاقوں میں سحر کے وقت بھی برقی کی سربراہی عمل میں نہیں لائی گئی۔ محمد علی شبیر نے برقی بحران پر قابو پانے سے متعلق حکومت کے دعوؤں کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ رمضان المبارک کا پہلا دن ہی حکومت کے ان دعوؤں کو غلط ثابت کرنے کیلئے کافی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ڈپٹی چیف منسٹر کی صدارت میں منعقدہ اعلیٰ سطحی اجلاس میں رسمی طور پر تیقنات دیئے گئے لیکن ان پر کوئی عمل آوری نہیں کی گئی۔ ہونا تو یہ چاہیئے تھا کہ جائزہ اجلاس چیف منسٹر کی صدارت میں منعقد ہوتا تاکہ اعلیٰ عہدیدار شرکت کرتے اور ان میں جوابدہی کا احساس ہوتا۔ محمد علی شبیر نے کہا کہ تاریخی مکہ مسجد میں تراویح کے دوران برقی کی سربراہی کا منقطع ہونا افسوسناک ہے۔ اس کے علاوہ کئی مصلیوں کیلئے جائے نمازوں کا انتظام نہیں کیا گیا اور لوگ پتھر کے فرش پر نماز تراویح ادا کرنے کیلئے مجبور ہوگئے۔ مصلیان مسجد نے محمد علی شبیر سے شکایت کی کہ پہلے دہے میں صفیں سیڑھیوں تک رہتی ہیں اس کے باوجود جائے نمازوں کا کوئی انتظام نہیں کیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ ڈپٹی چیف منسٹر نے دو مرتبہ مکہ مسجد کا دورہ کیا لیکن اس کے باوجود انتظامات میں یہ کوتاہی باعث افسوس ہے۔ انہوں نے یاد دلایا کہ کانگریس دور حکومت میں وزیر برقی کی حیثیت سے انہوں نے مکہ مسجد کے اطراف موبائیل برقی ٹرانسفارمرس متعین کئے تھے تاکہ کسی بھی ہنگامی صورتحال میں فوری برقی سربراہی بحال کی جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس دور حکومت میں ایک دن بھی ایسا نہیں رہا جب مکہ مسجد میں دوران تراویح برقی سربراہی منقطع ہوئی ہو۔ انہوں نے کہا کہ شہر میں بلاوقفہ برقی سربراہی کو یقینی بنانے کیلئے کئی علاقوں میں موبائیل ٹرانسفارمرس کو تیار رکھا گیا تھا۔ اگر کسی تکنیکی خرابی سے سربراہی منقطع ہوئی تو فوری طور پر موبائیل ٹرانسفارمر کا استعمال کیا گیا۔ انہوں نے حکومت پر رمضان المبارک کے انتظامات میں ناکامی اور اس ماہ مقدس کے تقدس کو پامال کرنے کا الزام عائد کیا۔ انہوں نے کہا کہ پہلے دن ہی یہ صورتحال ہے تو پھر آنے والے دنوں میں کس طرح صورتحال پر قابو پایا جائے گا۔ محمد علی شبیر نے چیف منسٹر سے مطالبہ کیا کہ وہ فوری طور پر پرانے شہر کا دورہ کرتے ہوئے انتظامات کا جائزہ لیں۔ انہوں نے عبادت گاہوں کے اطراف صحت و صفائی کے انتظامات پر توجہ دینے کی مانگ کی اور کہا کہ کچرے کے انبار کے سبب مختلف بیماریاں پھیلنے کا اندیشہ ہے۔

TOPPOPULARRECENT