Tuesday , December 11 2018

حکومت ، رام مندر کیلئے آرڈیننس لائے گی : کلراج مشرا

دیوریا۔ 24 نومبر ( سیاست ڈاٹ کام) سابق مرکزی وزیر اور بی جے پی کے سینئر لیڈر کلراج مشرا نے کہا ہے کہ مندر کی تعمیر کے لیے اتفاق رائے نہ ہونے اور عدالت کے فیصلہ میں تاخیر ھونے پر حکومت پارلیمنٹ میں آرڈیننس لا سکتی ہے ۔مسٹر مشرا نے ہفتہ کو یہاں بتایا کہ ایودھیا میں اتوار کو ہونے جا رہے ‘دھرم سبھا ’ سے پارٹی کا کوئی لینا دینا نہیں ہے ۔دھرم سبھا میں جو تجاویز آئیں گی وہ ان لوگوں کا جذبہ ہو گا۔ کوئی بھی تجویز آئے ، وہ پرامن ہونا چاہیے ۔ انہوں نے کہا کہ ایودھیا میں رام مندر بنانے کے لیے تین تجاویز پر عمل ہونا چاہیے – پہلا، عام اتفاق رائے ، دوسرا کورٹ کا فیصلہ اورتیسرا تاخیر ہونے پر حکومت کو پارلیمنٹ میں آرڈیننس لا کر مندر کی تعمیر کا راستہ صاف کر سکتی ہے ۔قابل غور ہے کہ ایودھیا میں 25 نومبر کو وشو ہندو (وی ایچ پی) کے اعلان پر شری رام کا عظیم الشان مندر بنانے کے لیے مرکز کی بی جے پی حکومت پر دباؤ بنانے کے لئے دھرم سبھا منعقد کیا جا رہا ہے ۔ اس دھرم سبھا کو راشٹریہ سوئم سیوک سنگھ (آر ایس ایس)، بجرنگ دل اور شیو سینا کی بھی حمایت حاصل ہے ۔اس معاملہ میں ریاستی حکومت کے وزیر جے پرکاش نشاد کا کہنا ہے کہ ایودھیا کا رام مندر ملک میں ہی نہیں پوری دنیا کے ایک طبقہ کے آستھا سے منسلک ہے ۔ ایودھیا میں خوبصورت رام مندر بنے یہ ہم بھی چاہتے ہیں، لیکن اس میں کچھ رکاوٹیں ہیں۔ معاملہ ملک کی عدالت میں زیر غور ہے ۔ مرکز میں ہماری حکومت ایودھیا رام مندر بنانے کے لیے جلد ہی پارلیمنٹ میں آرڈیننس لا سکتی ہے ۔ایودھیا میں 25 نومبر کو ہونے جا رہے دھرم سبھا کے بارے میں پوچھے جانے پر انہوں نے کہا کہ رام مندر بنانے کے لیے عام لوگوں کا اعزاز ہوگا۔ عوام چاہتے ہیں کہ ایودھیا میں جلد خوبصورت رام مندر کی تعمیر ہو۔

TOPPOPULARRECENT