Monday , September 24 2018
Home / شہر کی خبریں / حکومت آندھرا پردیش میں اقلیتوں کیلئے بجٹ کے تعین میں سرگرم

حکومت آندھرا پردیش میں اقلیتوں کیلئے بجٹ کے تعین میں سرگرم

حیدرآباد۔ /22جولائی، ( سیاست نیوز) آندھرا پردیش حکومت نے بجٹ 2014-15 میں اقلیتوں اور دیگر کمزور طبقات کے بجٹ کے تعین کی سرگرمیاں تیز کردی ہیں۔ وزیر فینانس آندھرا پردیش وائی رام کرشنوڈو نے آج اقلیتی بہبود کے علاوہ ایس سی، ایس ٹی اور بی سی ویلفیر سے متعلق عہدیداروں کے ساتھ اجلاس منعقد کرتے ہوئے امکانی بجٹ کا جائزہ لیا۔ محکمہ اقلیتی بہبود

حیدرآباد۔ /22جولائی، ( سیاست نیوز) آندھرا پردیش حکومت نے بجٹ 2014-15 میں اقلیتوں اور دیگر کمزور طبقات کے بجٹ کے تعین کی سرگرمیاں تیز کردی ہیں۔ وزیر فینانس آندھرا پردیش وائی رام کرشنوڈو نے آج اقلیتی بہبود کے علاوہ ایس سی، ایس ٹی اور بی سی ویلفیر سے متعلق عہدیداروں کے ساتھ اجلاس منعقد کرتے ہوئے امکانی بجٹ کا جائزہ لیا۔ محکمہ اقلیتی بہبود کی نمائندگی اسپیشل سکریٹری جناب سید عمر جلیل نے کی۔ بتایا جاتا ہے کہ محکمہ اقلیتی بہبود نے مالیاتی سال 2014-15 کیلئے 973 کروڑ 10لاکھ روپئے بجٹ کی تجاویز پیش کی ہے۔ واضح رہے کہ متحدہ ریاست میں اقلیتی بہبود کا بجٹ 1027 کروڑ تھا جبکہ حکومت آندھرا پردیش نے 973 کروڑ روپئے بجٹ مختص کرنے کی تیاری کرلی ہے۔ تلنگانہ حکومت پہلے ہی 1000کروڑ روپئے بجٹ مختص کرنے کا اعلان کرچکی ہے۔ باوثوق ذرائع کے مطابق آندھرا پردیش کے محکمہ اقلیتی بہبود نے محکمہ جاتی طور پر بجٹ کی جو تجاویز پیش کی ہیں اس میں چیف منسٹر چندرا بابو نائیڈو کی پسندیدہ اسکیم دکان اور مکان کو شامل کیا گیا، اس کے تحت 10کروڑ روپئے مختص کئے گئے۔ اس کے علاوہ شادی خانوں کی تعمیر اور اقلیتوں کو فنی تربیت سے متعلق اسکیمات کے بجٹ میں اضافہ کردیا گیا۔ اقلیتی بہبود کمشنریٹ کیلئے متحدہ ریاست میں 80931لاکھ روپئے بجٹ مختص کیا گیا تھا تاہم اس مرتبہ آندھرا پردیش حکومت 67325 لاکھ روپئے بجٹ مختص کرنے کی تیاری کررہی ہے۔ اقلیتی فینانس کارپوریشن کیلئے متحدہ ریاست میں 12550 لاکھ روپئے مختص کئے گئے تھے تاہم آئندہ بجٹ میں 11085 لاکھ مختص کرنے کا امکان ہے۔ کرسچین فینانس کارپوریشن کیلئے گذشتہ بجٹ میں 23کروڑ 45لاکھ روپئے مختص کئے گئے تھے جبکہ مجوزہ بجٹ میں 96کروڑ روپئے مختص کرنے کی تجویز ہے۔ اقلیتی کمیشن کیلئے حکومت نے ایک کروڑ روپئے مختص کرنے کا فیصلہ کیا ہے جبکہ گذشتہ سال کمیشن کا بجٹ 11لاکھ 90کروڑ تھا۔

اردو اکیڈیمی کا بجٹ متحدہ ریاست میں 9کروڑ 11لاکھ تھا لیکن آندھرا پردیش میں 5کروڑ 75لاکھ روپئے اردو اکیڈیمی کو مختص کئے جاسکتے ہیں۔ شادی خانوں کی تعمیر کی اسکیم اقلیتی بہبود کمشنریٹ کے تحت کرتے ہوئے اس کے بجٹ کو 10کروڑ سے بڑھا کر 25کروڑ کردیا گیا ہے۔ اقلیتی طلبہ کو فنی کورسیس میں تربیت کی اسکیم کیلئے بجٹ میں 6کروڑ سے 15کروڑ تک اضافہ کردیا گیا۔ اس اسکیم پر عمل آوری اقلیتی بہبود کمشنریٹ کی جانب سے کی جائے گی۔ وقف بورڈ کیلئے 5100 لاکھ روپئے کا بجٹ مختص کیا گیا ہے۔ سروے کمشنر وقف کیلئے 6کروڑ 40لاکھ روپئے، سی ای ڈی ایم کیلئے 6کروڑ 50لاکھ روپئے بجٹ میں مختص کئے جائیں گے۔ آندھرا پردیش میں سی ای ڈی ایم کے تین نئے مراکز قائم کئے جائیں گے اور اقلیتی طلبہ کو سیول سرویسس کی کوچنگ دی جائے گی۔ حج کمیٹی کیلئے آندھرا پردیش حکومت نے 12کروڑ روپئے بجٹ کی تجویز رکھی ہے جس میں 10کروڑ نئے حج ہاوز کی تعمیر پر خرچ کئے جائیں گے۔ آندھرا پردیش حکومت اپنی ریاست میں نئے حج ہاوز کی تعمیر کا منصوبہ رکھتی ہے۔ یہ حج ہاوز نئے دارالحکومت یا پھر اس شہر میں تعمیر کیا جائے گا جہاں سے آندھرا پردیش کے عازمین حج کی پروازیں رہیں گی۔ محکمہ اقلیتی بہبود نے اگرچہ بجٹ کی تمام تجاویز وزیر فینانس کو پیش کردی ہے تاہم محکمہ فینانس کی منظوری کے بعد ہی قطعی بجٹ طئے پائے گا۔

TOPPOPULARRECENT