Wednesday , January 17 2018
Home / سیاسیات / حکومت تشکیل نہ پانے پر مرکز ،دہلی کے تازہ انتخابات کا خواہاں

حکومت تشکیل نہ پانے پر مرکز ،دہلی کے تازہ انتخابات کا خواہاں

نئی دہلی۔ 29 اکتوبر (سیاست ڈاٹ کام) مرکز دہلی میں تازہ اسمبلی انتخابات کی خواہش کرے گا، اگر کوئی پارٹی یا گروپ موجودہ حالات میں قومی دارالحکومت میں حکومت تشکیل دینے کے موقف میں نہ ہو۔ایک اعلیٰ سطحی سرکاری عہدیدار نے کہا کہ وزارت داخلہ دہلی کے لیفٹننٹ گورنر نجیب جنگ کی کوششوں اور دہلی میں تشکیل حکومت کے امکانات کا سراغ لگانے کے بارے

نئی دہلی۔ 29 اکتوبر (سیاست ڈاٹ کام) مرکز دہلی میں تازہ اسمبلی انتخابات کی خواہش کرے گا، اگر کوئی پارٹی یا گروپ موجودہ حالات میں قومی دارالحکومت میں حکومت تشکیل دینے کے موقف میں نہ ہو۔ایک اعلیٰ سطحی سرکاری عہدیدار نے کہا کہ وزارت داخلہ دہلی کے لیفٹننٹ گورنر نجیب جنگ کی کوششوں اور دہلی میں تشکیل حکومت کے امکانات کا سراغ لگانے کے بارے میں رپورٹ کی منتظر ہے۔ عہدیدار نے کہا کہ اگر کوئی حکومت تشکیل نہیں پاتی تو ہمارے پاس انتخابات کے انعقاد کے سوائے کوئی اور راستہ باقی نہیں رہے گا۔ ہم لیفٹننٹ گورنر کی تجویز کے مطابق فیصلہ کریں گے۔این ڈی اے حکومت اور بی جے پی دونوں کو بھی کوئی ’’غیرجمہوری‘‘ کارروائی کرنے سے دلچسپی نہیں ہے جس سے پارٹی اور حکومت دونوں کی جموں و کشمیر اور جھارکھنڈ اسمبلی انتخابات سے پہلے ’’بدنامی‘‘ ہوتی ہو۔ دہلی میں تین اسمبلی نشستوں کے لئے ضمنی انتخابات بھی آئندہ ماہ منعقد کرنا ضروری ہے۔ کل مرکز نے سپریم کورٹ میں کہا تھا کہ صدرجمہوریہ نے لیفٹننٹ گورنر کی بی جے پی کو تشکیل حکومت کی دعوت دینے کے بارے میں تجویز منظور کرلی ہے۔ مرکز اور لیفٹننٹ گورنر پر تاخیر کے لئے تنقید کرتے ہوئے سپریم کورٹ نے کہا تھا کہ جمہوریت میں صدر راج ہمیشہ کے لئے جاری نہیں رکھا جاسکتا اور سوال کیا تھا کہ عہدیدارتیز رفتار کارروائی کرنے سے قاصر کیوں ہیں۔ فی الحال بی جے پی اور اس کی حلیف پارٹی اکالی دل کے ایک رکن اسمبلی کے ساتھ 29 ارکان اسمبلی رکھتی ہے اور اسے 67 رکنی ایوان میں اکثریت ثابت کرنے کے لئے مزید 5 ارکان اسمبلی کی تائید کی ضرورت ہوگی۔ پارٹی کو اُمید ہے کہ عام آدمی پارٹی کے خارج شدہ رکن اسمبلی ونود کمار بنّی اور آزاد رکن اسمبلی منڈکا رام ویر شوقین کی مدد حاصل ہوجائے گی۔ دہلی اسمبلی میں 70 نشستیں ہیں جن میں سے 3 مخلوعہ ہیں۔ جنہیں آئندہ ماہ ضمنی انتخابات کے ذریعہ پُر کیا جائے گا۔ عام آدمی پارٹی نے کانگریس کی تائید سے دہلی میں حکومت قائم کی تھی۔ اروند کجریوال کی زیرقیادت حکومت نے 14 فروری کو استعفیٰ دے دیا تھا، جبکہ پارٹی کا پسندیدہ ترین پراجیکٹ ’’جن لوک پال بل‘‘ بی جے پی اور کانگریس کی مخالفت کی وجہ سے منظور نہیں کیا جاسکا۔ 17 فروری کو صدر راج نافذ کردیا گیا۔ نجیب جنگ نے مجلس وزراء کی دہلی اسمبلی تحلیل کرنے کی سفارش کی تائید نہیں کی چنانچہ اسمبلی کو معطل رکھا گیا ہے۔فی الحال اپنے بل بوتے پر کوئی بھی پارٹی اکثریت رکھنے والی حکومت قائم کرنے سے قاصر ہے۔

TOPPOPULARRECENT