Thursday , September 20 2018
Home / شہر کی خبریں / حکومت تمام طبقات کی یکساں ترقی کی حامی، وزیر برقی تلنگانہ جگدیش ریڈی کا ادعا

حکومت تمام طبقات کی یکساں ترقی کی حامی، وزیر برقی تلنگانہ جگدیش ریڈی کا ادعا

حیدرآباد۔ 19 جنوری (سیاست نیوز) وزیر برقی جگدیش ریڈی نے کہا کہ تلنگانہ حکومت تمام طبقات کی یکساں ترقی کے حق میں ہے۔ خاص طور پر کمزور طبقات کی تعلیمی پسماندگی کے خاتمہ کے لیے اقامتی اسکولوں کا جال بچھایا گیا ہے۔ جگدیش ریڈی نے کہا کہ ایس سی، ایس ٹی، بی سی اور اقلیتوں کے لیے 500 سے زائد اقامتی اسکولس قائم کیے گئے ہیں۔ ان اسکولوں میں غریب طلبہ کے لیے مفت تعلیم کا انتظام کیا گیا ہے۔ جگدیش ریڈی نے ایس سی طلبہ کے لیے روزگار کے مواقع پیدا کرنے کے لیے حکومت کی جانب سے قائم کردہ ایس سی اسٹیڈی سرکل کا آج دلسکھ نگر میں افتتاح انجام دیا۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے جگدیش ریڈی نے کہا کہ رنگاریڈی ڈسٹرکٹ ایس سی اسٹیڈی سرکل سے طلبہ استفادہ کرتے ہوئے مختلف شعبوں میں روزگار کے سلسلہ میں رہنمائی حاصل کرسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت ایس سی طبقہ کی ہمہ جہتی ترقی کے سلسلہ میں سنجیدہ ہے اور نوجوانوں کے لیے ہر شعبہ میں بے شمار مواقع موجود ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ایس سی نوجوانوں کو سرکاری ملازمتوں کے علاوہ خانگی شعبہ میں روزگار کے حصول کی کوشش کرنی چاہئے اور اسٹیڈی سرکل کی جانب سے نوجوانوں کو ٹریننگ اور کونسلنگ کا اہتمام کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ملک کی ترقی میں نوجوانوں اور طلبہ کا اہم رول ہوتا ہے۔ تلنگانہ حکومت نوجوانوں کی ترقی کے لیے کئی اسکیمات کا آغاز کرچکی ہے۔ تلنگانہ تحریک میں نوجوانوں اور طلبہ کے رول کو فراموش نہیں کیا جاسکتا۔ انہوں نے بتایا کہ چیف منسٹر کے چندر شیکھر رائو نے ایس سی طبقہ کے لیے 30 اقامتی گرلز اسکولوں کے قیام کا اعلان کیا ہے۔ اسکولوں کے قیام کے پہلے ہی سال نتائج حوصلہ افزاء رہے۔ انہوں نے کہا کہ تمام طبقات کی یکساں ترقی کے سی آر کا عین مقصد ہے۔ کارپوریٹ طرز کی تعلیم اقامتی اسکولوں میں مفت فراہم کی جارہی ہے۔ سابق حکومتوں نے ایس سی طبقہ اور دیگر پسماندہ طبقات کو نظرانداز کردیا تھا لیکن چیف منسٹر کو یہ احساس ہے کہ تلنگانہ میں 90 فیصد آبادی کمزور طبقات پر مشتمل ہے لہٰذا انہیں ہر شعبہ میں مساوی مواقع فراہم کرنا حکومت اپنی ذمہ داری تصور کرتی ہے۔ تعلیمی پسماندگی کے خاتمہ کے ذریعہ سماج کی ترقی کو یقینی بنایا جاسکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ ریاست فلاحی اسکیمات میں دیگر ریاستوں سے آگے ہے اور کئی ریاستوں نے فلاحی اسکیمات سے متاثر ہوکر تفصیلات طلب کی ہیں۔ انہوں نے چیف منسٹر کے چندر شیکھر رائو کی ستائش کی اور کہا کہ گزشتہ 3 برسوں میں غریبوں اور کمزور طبقات کی بھلائی کے لیے منفرد اسکیمات کے ذریعہ کے سی آر نے عوام کے دلوں میں جگہ بنالی ہے۔ وزیر برقی نے ایس سی ایس ٹی کے موضوع پر قومی سمینار میں حصہ لیا اور کہا کہ حکومت ایک لاکھ سے زائد نوجوانوں کو معاشی امدادی اسکیم کے طور پر قرض فراہم کرے گی جس کے ذریعہ وہ کاروبار کرتے ہوئے اپنے پیروں پر کھڑے ہوسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دلت طبقہ کی ترقی کے لیے چیف منسٹر کے اقدامات مثالی ہیں۔ 1985ء میں کے سی آر نے پہلی مرتبہ رکن اسمبلی کی حیثیت سے منتخب ہونے کے بعد دلت جیوتی کا قیام عمل میں لایا۔ انہوں نے کہا کہ نوجوانوں نے تلنگانہ ریاست سے جو توقعات وابستہ کی تھیں ان پر پورا اترتے ہوئے روزگار کے مواقع پیدا کیے جارہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ایس سی طبقہ کے امیدواروں کو کاروبار کے آغاز کے سلسلہ میں 400 کروڑ روپئے کی سبسیڈی فراہم کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ دلتوں اور دیگر کمزور طبقات کی ترقی کے سلسلہ میں کے سی آر کو جو دلچسپی ہے اس کی مثال کوئی اور حکومت پیش نہیں کرسکتی۔

TOPPOPULARRECENT