Friday , July 20 2018
Home / شہر کی خبریں / حکومت سے مساجد کی مرمت و آہک پاشی پر غور

حکومت سے مساجد کی مرمت و آہک پاشی پر غور

کلکٹر یوگیتا رانا کا اجلاس، اخراجات کا تخمینہ

حیدرآباد ۔ 10 فروری (سیاست نیوز) خستہ حال مساجد کی مرمت اور آہک پاشی کیلئے ضلع انتظامیہ کی جانب سے اقدامات کا آغاز کیا جارہا ہے۔ ضلع انتظامیہ نے ایسی مساجد و عیدگاہیں جہاں کم از کم آہک پاشی وغیرہ بھی نہیں کی جارہی ہے ایسی مساجد اور عیدگاہوں کے مرمتی کام اور آہک پاشی کیلئے اقدامات کررہا ہے۔ فی الحال 129 مساجد اور عیدگاہوں کے مرمتی کام اور آہک پاشی کیلئے تجاویز تیار کی گئی ہے جن میں سے 60 مساجد کیلئے 31.91 لاکھ روپئے منظوری کے علاوہ مزید 45 لاکھ کی لاگت سے 63 مساجد و عیدگاہوں کے مرمتی کام کئے جائیں گے۔ ضلع سطح پر 15 اسمبلی حلقہ جات کی 283 مساجد کے مرمتی کام انجام دیئے جانے کے احکامات کے پیش نظر فی الحال صرف 123 مساجد کے ہی کام انجام دینے کا فیصلہ کیا ہے اور عنقریب بقیہ مساجد کے بھی مرمتی کاموںکا آغاز کیا جائے گا۔ ضلع کی مساجد و عیدگاہوں کے مرمتی کاموں کی تکمیل کیلئے تین قسطوں میں فنڈس جاری کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ یکم جون 2015ء کو 63-10 لاکھ، 19 مئی 2017ء کو حکومت 1.67 کروڑ کی منظوری دی ہے۔ اس مناسبت سے ضلع کلکٹر یوگیتا رانا نے مساجد کے مرمتی کاموں کا آغاز کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ ضلع کلکٹر نے 20 اکٹوبر 2017ء کو ایک جائزہ اجلاس منعقد کرتے ہوئے عہدیداران کو ہدایت دی تھی کہ اسمبلی حلقہ جات کی بنیاد پر مساجد کے مرمتی کام اور آہک پاشی سے متعلق رپورٹ پیش کی جائے اور اس رپورٹ کا تحصیلدار جائزہ لیکرسفارش کردہ مساجد کے مرمتی کاموں کیلئے فنڈس کی اجرائی عمل میں لانے کا حکم دیا تھا۔ اس مناسبت سے ضلع سطح پر 854 مساجد کے مرمتی کاموں سے متعلق تجاویز موصول ہوئی تھیں مگر تحصیلدار ان تجاویز کا بغور جائزہ لینے کے بعد 283 مساجد کو فنڈس حاصل کرنے کا حقدار قرار دیا ہے اور اب فی الحال 123 مساجد کیلئے فنڈس منظور کئے گئے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT