Friday , June 22 2018
Home / سیاسیات / حکومت غریب دوست ہے : مودی

حکومت غریب دوست ہے : مودی

نئی دہلی ۔19اپریل ( سیاست ڈاٹ کام ) وزیراعظم نریندر مودی نے آج ادعا کیا کہ اُن کی حکومت غریب دوست اور کاشتکار دوست ہے اور اپنے ناقدین پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ یہ ان کی پرانی عادت ہے کہ بی جے پی پر ہمیشہ تنقید کرتے ہیں ۔ چاہے بی جے پی اچھا کام کیوں نہ کررہی ہو ۔ انہوں نے ان اقدامات کی تفصیل بتائی جو اُن کی حکومت میں غریبوں اور کاشتکاروں ک

نئی دہلی ۔19اپریل ( سیاست ڈاٹ کام ) وزیراعظم نریندر مودی نے آج ادعا کیا کہ اُن کی حکومت غریب دوست اور کاشتکار دوست ہے اور اپنے ناقدین پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ یہ ان کی پرانی عادت ہے کہ بی جے پی پر ہمیشہ تنقید کرتے ہیں ۔ چاہے بی جے پی اچھا کام کیوں نہ کررہی ہو ۔ انہوں نے ان اقدامات کی تفصیل بتائی جو اُن کی حکومت میں غریبوں اور کاشتکاروں کی تائید میں کئے تھے اور اپنے پارٹی کے ارکان پارلیمنٹ سے خواہش کی کہ ان کارناموں کو اُجاگر کریں۔ جب کہ انہوں نے اپنی حکومت اور سابق حکومتوں کے درمیان فرق کو واضح کیا اور کہا کہ کانگریس حکومت کے اقدام کا مقصد کاشتکاروں کو فائدہ پہنچانا نہیں تھا جبکہ انہوں نے انہیں معقول معاوضہ ادا کرنے کا جراتمندانہ فیصلہ کیا ہے ۔ خاص طور پر اُن کاشتکاروںکو جنہیں حالیہ بارش کی وجہ سے سخت نقصان پہنچا ہے ۔ انہوں نے متنازعہ قانون کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ کجروذہنیت کے افراد ہمیشہ حکومت پر تنقید کرتے ہیں ۔ ان میں ذرائع ابلاغ کا ایک گوشہ بھی شامل ہے جو بنگلورو میں پارٹی کی قومی عاملہ کے اجلاس کے دوران جاریہ ماہ کے اوئل میں اُن کی تقریر کی غلط تاویل پیش کرچکا ہے ۔

کرپشن کو کچلنے اور عوامی فنڈس کے افشاء کے بارے میں اپنی کوششوں کی تفصیل بیان کرتے ہوئے انہوں نے سابق وزیراعظم راجیو گاندھی کو اُن کا نام لئے بغیر تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ سابق وزیر اعظم نے کہا تھا کہ ایک روپیہ امداد جاری کی جائے تو عوام تک صرف 15پیسے پہنچتے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ آپ کو نہ صرف تجزیہ کرنا چاہیئے بلکہ بیماری کا علاج بھی تجویز کرنا چاہیئے ۔ وہ پارٹی ارکان پارلیمنٹ کے اجلاس کو مخاطب کررہے تھے ۔ اپنی ایک گھنٹہ طویل تقریر میں انہوں نے افراط زر اور سمنٹ کی قیمتوں میں کمی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ یہ حکومت کی اسکیموں کا نتیجہ ہے جن سے غریبوں کو فائدہ ہورہا ہے ۔ وزیراعظم نریندر مودی نے ریٹائرڈ جنرل وی کے سنگھ کی دل کھول کر تعریف کی جنہیں ذرائع ابلاغ کے ایک گوشے کی تنقید کا سامنا ہے ۔

کیونکہ انہوں نے کوئی غلط تبصرہ کیا تھا ۔ ذرائع ابلاغ پر تنقید کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ ذرائع ابلاغ اُن کی حکومت کے اچھے کاموں کو اُجاگر نہیں کرتا ۔ انہوں نے کہا کہ وہ ریٹائرڈ جنرل وی کے سنگھ کو سلام کرتے ہیں کیونکہ انہوں نے وزیر برائے یمن سے ہندوستانیوں کا تخلیہ بچاؤ مہم کی اس طرح قیادت کی جس کی ماضی میں کوئی مثال نہیں ملتی ۔ انہوں نے کہا کہ وزیر خارجہ سشماسوراج بھی ستائش کی مستحق ہے جن کی کوششوں سے یمن میں پھنسے ہوئے ہندوستانیوں کا تخلیہ ممکن ہوسکا ۔ مودی نے ذرائع ابلاغ پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ وہ وی کے سنگھ کے کام کو ایک ایسے وقت نظرانداز کررہے ہیں جب کہ دنیا بھر کے اخبارات میںبچاؤ مہم کو اُجاگر کیا جارہا تھا ۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستانی ذرائع ابلاغ نے اس کا نوٹ لیا لیکن دیگر وجوہات کی وجہ سے انہوں نے وی کے سنگھ پر تنقید کی ۔
انہوں نے کہا کہ کیا آپ تصور کرسکتے ہیں کہ یمن میں 24گھنٹے بمباری جاری تھی اور ہر شخص ایک دوسرے کو قتل کرنے پر تُلا ہوا تھا اور ہم نے کئی مختلف ممالک کے ساتھ بات چیت کے ذریعہ اس لڑائی کو ایک دو گھنٹے روکنے میں کامیابی حاصل کی تاکہ جتنے ہندوستانیوں کا ممکن ہوسکے تخلیہ کروایا جاسکے ۔ یہ کوئی معمولی واقعہ نہیں تھا بلکہ ان کے خیال میں دنیا میں پہلی بار کسی حکومت کا وزیر میدان جنگ پر کام کرنے کیلئے فوجی کی طرح کھڑا ہوا تھا ۔ انہوں نے کہا کہ وہ جنرل وی کے سنگھ کو سلام کرتے ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT