Sunday , December 17 2017
Home / شہر کی خبریں / حکومت ‘ منشیات اسکام کے حقیقی خاطیوں کو بچانے کوشاں

حکومت ‘ منشیات اسکام کے حقیقی خاطیوں کو بچانے کوشاں

صرف مخصوص گوشہ کو نشانہ بنانے کا الزام ۔ قائد اپوزیشن کونسل محمد علی شبیر کا بیان
حیدرآباد۔/25 جولائی، ( سیاست نیوز) تلنگانہ قانون ساز کونسل میں قائد اپوزیشن محمد علی شبیر نے حکومت پر الزام عائد کیا کہ وہ منشیات کے اسکام کے سلسلہ میں حقیقی خاطیوں کو بچانے کی کوشش کررہی ہے جن کے روابط برسر اقتدار پارٹی اور حکومت سے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ایک طرف حکومت نے تحقیقاتی عہدیداروں کو اسکام کے سلسلہ میں مکمل چھوٹ دینے کا دعویٰ کیا ہے لیکن حقیقت یہ ہے کہ برسر اقتدار پارٹی سے وابستہ افراد کو بچاتے ہوئے مخصوص گوشہ کو نشانہ بنایا جارہا ہے۔ انہوں نے ریاستی حکومت کے ادارہ سے اسکام کی جانچ کے بجائے مرکزی ادارہ سے جانچ کی مانگ کی تاکہ حقائق کا پتہ چلایا جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ اس معاملہ کی جانچ کیلئے ہائی کورٹ کے برسر خدمت جج کی قیادت میں تحقیقاتی کمیشن قائم کیا جائے جو اسکام کی تہہ تک پہنچ کر حقیقی خاطیوں کو بے نقاب کرے۔ محمد علی شبیر نے اسکام کے بارے میں اے آئی سی سی قائد ڈگ وجئے سنگھ کے بیان کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ڈگ وجئے سنگھ کی جانب سے برسر اقتدار پارٹی کو بے نقاب کرنے کے بعد سے عہدیداروں پر دباؤ بڑھ رہا ہے کہ وہ حکومت کی نیک نامی متاثر نہ ہونے دیں۔ انہوں نے کہا کہ عہدیداروں کو کھلی چھوٹ کی بات محض دکھاوا ہے اور تحقیقات کے انداز اور طریقہ کار سے صاف ظاہر ہے کہ حکومت کسی کو بچانا چاہتی ہے۔ انہوں نے ڈگ وجئے سنگھ پرکے ٹی آر کی تنقیدوں کو بوکھلاہٹ کا نتیجہ قرار دیا اور کہا کہ اگر ہمت ہو تو انہیں تحقیقاتی کمیشن کے قیام کیلئے تیار ہونا چاہیئے۔ انہوں نے کہا کہ تلگو فلم انڈسٹری کو تحقیقات کے ذریعہ نشانہ بنایا گیا اور یہ تاثر دینے کی کوشش کی جارہی ہے کہ فلمی صنعت مکمل طور پر اس اسکام میں ملوث ہے۔ محمد علی شبیر نے کہا کہ منشیات کا یہ اسکام تلنگانہ اور آندھرا پردیش کو اپنی لپیٹ میں لے چکا ہے اور اس کے تار بین الاقوامی ڈرگس مافیا سے جڑے ہوئے معلوم ہوتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی سطح کے عہدیداروں سے یہ ممکن نہیں کہ وہ حقائق کا پتہ چلاسکیں۔ انہوں نے کہا کہ تعلیمی ادارے بھی اس لعنت سے محفوظ نہیں رہے اور منشیات کے مراکز کے خلاف کارروائی کے سلسلہ میں پولیس کا رویہ جانبدارانہ ہے۔ انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ منشیات کے بڑھتے رجحان کی روک تھام اور تدارک کیلئے شعور بیداری مہم شروع کی جائے جو تعلیمی اداروں کے ساتھ ساتھ عوامی مقامات پر چلائی جائے۔ انہوں نے اپوزیشن جماعتوں کو اعتماد میں لیتے ہوئے اس لعنت کا مقابلہ کرنے کی تجویز پیش کی اور کہا کہ چیف منسٹر کو چاہیئے کہ وہ کُل جماعتی اجلاس طلب کرتے ہوئے اپوزیشن کی رائے حاصل کریں۔ انہوں نے کہا کہ چندر شیکھر راؤ کی زیر قیادت ٹی آر ایس حکومت نے اپوزیشن اجلاس کی روایت کو ہی ختم کردیاہے اور اسمبلی میں کئے گئے کُل جماعتی اجلاس کے وعدے محض زبانی ثابت ہوئے۔

TOPPOPULARRECENT