Tuesday , September 18 2018
Home / ہندوستان / حکومت کو رافیل معاملت پر صفائی پیش کرنا ہوگا

حکومت کو رافیل معاملت پر صفائی پیش کرنا ہوگا

حکومت کی مسلسل خاموشی ناقابل قبول ۔ ہم نے بھاری قیمت کیوں ادا کی :کانگریس

نئی دہلی ۔ 10 مارچ ۔( سیاست ڈاٹ کام ) ایسے روز جبکہ وزیراعظم نریندر مودی نے فرانسیسی صدر ایمانیول میکرن کے ساتھ بات چیت منعقد کی ، کانگریس نے این ڈی اے حکومت کو رافیل معاملت پر نشانہ بناتے ہوئے الزام عائد کیا ہے کہ یہ ’’مادرگھوٹالہ ‘‘ بنتا جارہاہے اور حکومت کو اپنا موقف واضح کرنا چاہئے ۔ کانگریس کے ترجمان ٹام وڈکن نے کہاکہ ہندوستان نے لڑاکا طیارہ کی خریدی کیلئے فرانس کو جو بھاری قیمت ادا کی ہے وہ مصر اور قطر جیسے ممالک کی جانب سے اداشدہ قیمتوں سے کہیں بڑھکر ہے ۔ ہندوستان نے کوئی خیراتی معاملت نہیں کی ہے اور مودی حکومت کو جواب دینا ہوگا کہ رقم کہاں چلی گئی ؟ انھوں نے میڈیا والوں کو بتایا کہ عوام سوال کررہے ہیں کہ یہ رقم کن جیبوں میں چلی گئی ۔ وڈکن نے کہاکہ اُن کی پارٹی یہ مسئلہ لگاتار اُٹھاتی رہی ہے لیکن حکومت یا بی جے پی کی طرف سے جواب میں ایک لفظ تک سننے میں نہیں آیا۔ حتیٰ کہ کوئی تردیدی بیان تک سامنے نہیں آیا ۔ بی جے پی نے گزشتہ روز کانگریس کے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ جھوٹ باتیں اور اُلجھن پھیلاتے ہوئے قوم کو گمراہ کررہی ہے ۔ مرکزی وزیر نتن گڈکری نے آج کہا کہ ایسی باتیں کرنا ’’غیرذمہ دارانہ اور قوم دشمن ‘‘ ہے کہ فرانس کے ساتھ لڑاکا جٹ طیاروں کی سپلائی کیلئے 7.5 بلین یورو کی معاملت میں کرپشن ہوا ہے ۔ انھوں نے ایک میڈیا ایونٹ میں کہا کہ کرپشن کہاں ہوا ہے ؟ اس طرح کے الزامات غیرذمہ دارانہ اور قوم دشمن طرز عمل کی عکاسی کرتے ہیں ۔ تاہم کانگریس نے آج دوبارہ اس مسئلہ اُٹھایا اور حکومت کے موقف کو ’’بلی کے آنکھ موند کر دودھ پینے ‘‘ جیسا قرار دیا ۔ انھوں نے کہا کہ حکومت ، وزرات دفاع کو اس معاملے میں الزامات کا جواب دینا چاہئے ۔ وہ کیوں بعض اُمور کو چھپانے کی کوشش کررہے ہیں ؟ ’’آپ یو پی اے کو بدعنوان کہتے ہو ۔ اگر یہ کرپشن نہیں ہے تو پھر کرپشن کیا ہے ۔ یہ تو مادر اسکام بنتا جارہا ہے جس پر این ڈی اے کو اپنا موقف واضح کردینا ہوگا ‘‘ ۔

TOPPOPULARRECENT